اُردو انجمن

 


مصنف موضوع: میری مدد فرمائیے  (پڑھا گیا 191 بار)

0 اراکین اور 1 مہمان یہ موضوع دیکھ رہے ہیں

غیرحاضر Ismaa'eel Aijaaz

  • Saaheb-e-adab
  • *****
  • تحریریں: 3214
میری مدد فرمائیے
« بروز: جولائی 16, 2017, 12:24:24 صبح »

 اساتذہ کرام اور قاریؤئین کرام
اسلام علیکم ورحمتہ اللہ وبرکاتہ

میری ایک مشکل حل کیجیے

فاعلات مفعولن فاعلات مفعولن
بحر مقتضب
اور
فاعلن مفاعیلن فاعلن مفاعیلن
بحر ہزج
دونوں ایک ہی وزن میں ہیں مگر بحور الگ الگ ہیں

میرا یہ شعر دیکھیے

تم خیالؔ بن جاؤ آدمی تو بہتر ہے
رب نے آدمی کا ہے مرتبہ بڑا رکّھا

اس کی تقطیع بحر مقتضب میں دیکھیے

تم خیالؔ بن جاؤ آدمی تو بہتر ہے

تم خَ یا لُ ۔۔۔۔ بن جا ؤ۔۔۔۔۔ اا دَ می تُ ۔۔۔۔  بہ تر ہے
فا عِ لا تُ ۔۔۔۔۔۔۔ مف عو لُن ۔۔۔۔۔۔ فا عِ لا تُ ۔۔۔۔ مف عو لُن
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔ مفعولن ۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔ مفعولن

رب نے آدمی کا ہے مرتبہ بڑا رکّھا

رب نِ اا دَ ۔۔۔۔ می کا ہے ۔۔۔۔۔ مر تَ با بَ ۔۔۔۔۔ ڑا رک کا
فا عِ لا تُ ۔۔۔۔۔۔۔ مف عو لُن ۔۔۔۔۔۔ فا عِ لا تُ ۔۔۔۔ مف عو لُن
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔ مفعولن ۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔ مفعولن

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

بحر ہزج میں تقطیع دیکھیے


تم خیالؔ بن جاؤ آدمی تو بہتر ہے

تم خَ یا  ۔۔۔۔ لُ بن جا ؤ۔۔۔۔۔ اا دَ می ۔۔۔۔  تُ  بہ تر ہے
فا عِ لُن ۔۔۔۔۔۔۔  مُ ما عی لُن ۔۔۔۔۔۔ فا عِ لُن  ۔۔۔۔ مُ فا عی لُن
فاعلن ۔۔۔۔۔ مفاعیلن ۔۔۔۔ فاعلن ۔۔۔۔ مفاعیلن

رب نے آدمی کا ہے مرتبہ بڑا رکّھا

رب نِ اا ۔۔۔۔ دَ می کا ہے ۔۔۔۔۔ مر تَ با  ۔۔۔۔۔ بَ ڑا رک کا
فا عِ لُن ۔۔۔۔۔۔۔ مُ ما عی لُن ۔۔۔۔۔۔ فا عِ لُن ۔۔۔۔ مُ فا عی لُن
فاعلن ۔۔۔۔۔ مفاعیلن ۔۔۔۔ فاعلن ۔۔۔۔ مفاعیلن
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

رہنمائی فرمائی

جزاکم اللہ خیراً
« آخری ترمیم: جولائی 16, 2017, 01:26:59 صبح منجانب Ismaa'eel Aijaaz »


محبتوں سے محبت سمیٹنے والا
خیال آپ کی محفل میں آچ پھر آیا

خیال

muHabbatoN se muHabbat sameTne waalaa
Khayaal aap kee maiHfil meN aaj phir aayaa

(Khayaal)

غیرحاضر سرور عالم راز

  • Muntazim-o-Mudeer
  • Saaheb-e-adab
  • ******
  • تحریریں: 6253
  • جنس: مرد
    • Kalam-e-Sarwar
جواب: میری مدد فرمائیے
« Reply #1 بروز: جولائی 16, 2017, 10:44:30 شام »

 اساتذہ کرام اور قاریؤئین کرام
اسلام علیکم ورحمتہ اللہ وبرکاتہ

میری ایک مشکل حل کیجیے

فاعلات مفعولن فاعلات مفعولن
بحر مقتضب
اور
فاعلن مفاعیلن فاعلن مفاعیلن
بحر ہزج
دونوں ایک ہی وزن میں ہیں مگر بحور الگ الگ ہیں

میرا یہ شعر دیکھیے

تم خیالؔ بن جاؤ آدمی تو بہتر ہے
رب نے آدمی کا ہے مرتبہ بڑا رکّھا

اس کی تقطیع بحر مقتضب میں دیکھیے

تم خیالؔ بن جاؤ آدمی تو بہتر ہے

تم خَ یا لُ ۔۔۔۔ بن جا ؤ۔۔۔۔۔ اا دَ می تُ ۔۔۔۔  بہ تر ہے
فا عِ لا تُ ۔۔۔۔۔۔۔ مف عو لُن ۔۔۔۔۔۔ فا عِ لا تُ ۔۔۔۔ مف عو لُن
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔ مفعولن ۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔ مفعولن

رب نے آدمی کا ہے مرتبہ بڑا رکّھا

رب نِ اا دَ ۔۔۔۔ می کا ہے ۔۔۔۔۔ مر تَ با بَ ۔۔۔۔۔ ڑا رک کا
فا عِ لا تُ ۔۔۔۔۔۔۔ مف عو لُن ۔۔۔۔۔۔ فا عِ لا تُ ۔۔۔۔ مف عو لُن
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔ مفعولن ۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔ مفعولن

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

بحر ہزج میں تقطیع دیکھیے


تم خیالؔ بن جاؤ آدمی تو بہتر ہے

تم خَ یا  ۔۔۔۔ لُ بن جا ؤ۔۔۔۔۔ اا دَ می ۔۔۔۔  تُ  بہ تر ہے
فا عِ لُن ۔۔۔۔۔۔۔  مُ ما عی لُن ۔۔۔۔۔۔ فا عِ لُن  ۔۔۔۔ مُ فا عی لُن
فاعلن ۔۔۔۔۔ مفاعیلن ۔۔۔۔ فاعلن ۔۔۔۔ مفاعیلن

رب نے آدمی کا ہے مرتبہ بڑا رکّھا

رب نِ اا ۔۔۔۔ دَ می کا ہے ۔۔۔۔۔ مر تَ با  ۔۔۔۔۔ بَ ڑا رک کا
فا عِ لُن ۔۔۔۔۔۔۔ مُ ما عی لُن ۔۔۔۔۔۔ فا عِ لُن ۔۔۔۔ مُ فا عی لُن
فاعلن ۔۔۔۔۔ مفاعیلن ۔۔۔۔ فاعلن ۔۔۔۔ مفاعیلن
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

رہنمائی فرمائی

جزاکم اللہ خیراً


مکرمی خیال صاحب:سلام مسنون
شاید آپ کا سوال یہ ہے کہ اگر کسی غزل کا ایک شعر دو مختلف بحروں میں تقطیع ہوسکے تو اس غزل کا وزن اور بحر کسے مانا جائے گا۔ اس سوال پر گفتگو یہاں  عرصہ ہوا ہو چکی ہے۔ وقت کے ساتھ آدمی بھول جاتا ہے۔ بدقسمتی سے ہماری کتابوں کا یہ حال ہے کہ ایسے عام سوالوں کا وہ جواب ہی نہیں دیتی ہیں۔ عروض کا علم عام شعرا میں کبھی مقبول نہیں رہا ہے۔ غالبا اسی لئے عروض کی کتابیں یہ فرض کرتی چلی آئی ہیں کہ سوالات کا جواب تو اساتذہ کومعلوم ہی ہے۔ میرے پاس عروض پر جو کتابیں ہیں وہ سب اس معاملہ میں مایوس کرتی ہیں۔

ڈاکٹر جمال الدین جمال کی کتاب تفہیم العروض ذرا بہتر ہے اور معاملات کو قدرے سلجھا کر بیان کرتی ہے۔ آپ کی غزل کے بارے میں مختصر جواب یہ ہے کہ غزل کے سارے اشعار دیکھئے۔ زیادہ تر اشعار جس بحر میں پورے اتریں وہی اس غزل کی بحر ہے۔ عام یہ ہے کہ غزل کا ایک آدھ شعر دو مختلف بحروں میں ہو سکتا ہے جب کہ پوری غزل صرف ایک ہی بحر میں پوری اترتی ہے۔ اگر بالفرض یہ غیر معمولی صورت پیش آئے کہ دونوں بحروں میں غزل کے اشعار برابر برابر پورے اتریں تو پھر بہت مشکل ہے۔ ایسے میں شاعر اور تقطیع کرنے والے کو اختیار ہے کہ کسی ایک بحر میں غزل کو قائم کرے۔ تقطیع کا مقصد یہ نہیں ہے کہ اگر دو شاعروں نے مذکورہ صورت میں الگ الگ بحور کو منتخب کیا تو کوئی غلطی ہو گئی یا یہ عیب ہے۔ تقطیع مول تول کا ایک پیمانہ ہے اورریاضی کا کوئی فارمولا نہیں ہے۔ اختلاف رائے کی صورت میں جب کہ دلائل فریقین کے یکساں مضبوط ہوں لڑنے کا کوئی جواز نہیں ہے کیونکہ دونوں صحیح ہیں۔ یہ بھی ہو سکتا ہے کہ غزل کو غور سے پرکھا جائے اور پھر ذوق سلیم کی بنیاد پر کوئی فیصلہ کیا جائے۔ آپ کا اپنا کیا خیال ہے؟

سرورعالم راز




غیرحاضر Ismaa'eel Aijaaz

  • Saaheb-e-adab
  • *****
  • تحریریں: 3214
جواب: میری مدد فرمائیے
« Reply #2 بروز: جولائی 21, 2017, 09:23:56 شام »

 اساتذہ کرام اور قاریؤئین کرام
اسلام علیکم ورحمتہ اللہ وبرکاتہ

میری ایک مشکل حل کیجیے

فاعلات مفعولن فاعلات مفعولن
بحر مقتضب
اور
فاعلن مفاعیلن فاعلن مفاعیلن
بحر ہزج
دونوں ایک ہی وزن میں ہیں مگر بحور الگ الگ ہیں

میرا یہ شعر دیکھیے

تم خیالؔ بن جاؤ آدمی تو بہتر ہے
رب نے آدمی کا ہے مرتبہ بڑا رکّھا

اس کی تقطیع بحر مقتضب میں دیکھیے

تم خیالؔ بن جاؤ آدمی تو بہتر ہے

تم خَ یا لُ ۔۔۔۔ بن جا ؤ۔۔۔۔۔ اا دَ می تُ ۔۔۔۔  بہ تر ہے
فا عِ لا تُ ۔۔۔۔۔۔۔ مف عو لُن ۔۔۔۔۔۔ فا عِ لا تُ ۔۔۔۔ مف عو لُن
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔ مفعولن ۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔ مفعولن

رب نے آدمی کا ہے مرتبہ بڑا رکّھا

رب نِ اا دَ ۔۔۔۔ می کا ہے ۔۔۔۔۔ مر تَ با بَ ۔۔۔۔۔ ڑا رک کا
فا عِ لا تُ ۔۔۔۔۔۔۔ مف عو لُن ۔۔۔۔۔۔ فا عِ لا تُ ۔۔۔۔ مف عو لُن
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔ مفعولن ۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔ مفعولن

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

بحر ہزج میں تقطیع دیکھیے


تم خیالؔ بن جاؤ آدمی تو بہتر ہے

تم خَ یا  ۔۔۔۔ لُ بن جا ؤ۔۔۔۔۔ اا دَ می ۔۔۔۔  تُ  بہ تر ہے
فا عِ لُن ۔۔۔۔۔۔۔  مُ ما عی لُن ۔۔۔۔۔۔ فا عِ لُن  ۔۔۔۔ مُ فا عی لُن
فاعلن ۔۔۔۔۔ مفاعیلن ۔۔۔۔ فاعلن ۔۔۔۔ مفاعیلن

رب نے آدمی کا ہے مرتبہ بڑا رکّھا

رب نِ اا ۔۔۔۔ دَ می کا ہے ۔۔۔۔۔ مر تَ با  ۔۔۔۔۔ بَ ڑا رک کا
فا عِ لُن ۔۔۔۔۔۔۔ مُ ما عی لُن ۔۔۔۔۔۔ فا عِ لُن ۔۔۔۔ مُ فا عی لُن
فاعلن ۔۔۔۔۔ مفاعیلن ۔۔۔۔ فاعلن ۔۔۔۔ مفاعیلن
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

رہنمائی فرمائی

جزاکم اللہ خیراً


مکرمی خیال صاحب:سلام مسنون
شاید آپ کا سوال یہ ہے کہ اگر کسی غزل کا ایک شعر دو مختلف بحروں میں تقطیع ہوسکے تو اس غزل کا وزن اور بحر کسے مانا جائے گا۔ اس سوال پر گفتگو یہاں  عرصہ ہوا ہو چکی ہے۔ وقت کے ساتھ آدمی بھول جاتا ہے۔ بدقسمتی سے ہماری کتابوں کا یہ حال ہے کہ ایسے عام سوالوں کا وہ جواب ہی نہیں دیتی ہیں۔ عروض کا علم عام شعرا میں کبھی مقبول نہیں رہا ہے۔ غالبا اسی لئے عروض کی کتابیں یہ فرض کرتی چلی آئی ہیں کہ سوالات کا جواب تو اساتذہ کومعلوم ہی ہے۔ میرے پاس عروض پر جو کتابیں ہیں وہ سب اس معاملہ میں مایوس کرتی ہیں۔

ڈاکٹر جمال الدین جمال کی کتاب تفہیم العروض ذرا بہتر ہے اور معاملات کو قدرے سلجھا کر بیان کرتی ہے۔ آپ کی غزل کے بارے میں مختصر جواب یہ ہے کہ غزل کے سارے اشعار دیکھئے۔ زیادہ تر اشعار جس بحر میں پورے اتریں وہی اس غزل کی بحر ہے۔ عام یہ ہے کہ غزل کا ایک آدھ شعر دو مختلف بحروں میں ہو سکتا ہے جب کہ پوری غزل صرف ایک ہی بحر میں پوری اترتی ہے۔ اگر بالفرض یہ غیر معمولی صورت پیش آئے کہ دونوں بحروں میں غزل کے اشعار برابر برابر پورے اتریں تو پھر بہت مشکل ہے۔ ایسے میں شاعر اور تقطیع کرنے والے کو اختیار ہے کہ کسی ایک بحر میں غزل کو قائم کرے۔ تقطیع کا مقصد یہ نہیں ہے کہ اگر دو شاعروں نے مذکورہ صورت میں الگ الگ بحور کو منتخب کیا تو کوئی غلطی ہو گئی یا یہ عیب ہے۔ تقطیع مول تول کا ایک پیمانہ ہے اورریاضی کا کوئی فارمولا نہیں ہے۔ اختلاف رائے کی صورت میں جب کہ دلائل فریقین کے یکساں مضبوط ہوں لڑنے کا کوئی جواز نہیں ہے کیونکہ دونوں صحیح ہیں۔ یہ بھی ہو سکتا ہے کہ غزل کو غور سے پرکھا جائے اور پھر ذوق سلیم کی بنیاد پر کوئی فیصلہ کیا جائے۔ آپ کا اپنا کیا خیال ہے؟

سرورعالم راز



جناب محترم سرور عالم راز سرور صاحب

وعلیکم السلام ورحمتہ اللہ وبرکاتہ

جنابِ عالی  اللہ پاک آپ کو دونوں جہانوں کی عزّتیں عطا فرمائے ، رہنمائی فرمانے کا بے حد شکریہ
اپنا بہت خیال رکھیے اپنی دعاؤں مین یاد رکھیے

دعاگو
محبتوں سے محبت سمیٹنے والا
خیال آپ کی محفل میں آچ پھر آیا

خیال

muHabbatoN se muHabbat sameTne waalaa
Khayaal aap kee maiHfil meN aaj phir aayaa

(Khayaal)

 

Copyright © اُردو انجمن