اُردو انجمن

 


مصنف موضوع: ماہرینِ عروض سے گزارش ہے اپنی آرا سے نوازیے  (پڑھا گیا 176 بار)

0 اراکین اور 1 مہمان یہ موضوع دیکھ رہے ہیں

غیرحاضر Ismaa'eel Aijaaz

  • Saaheb-e-adab
  • *****
  • تحریریں: 3214
ماہرینِ عروض سے گزارش ہے اپنی آرا سے نوازیے
« بروز: ستمبر 07, 2017, 02:51:06 صبح »
ماہرینِ عروض سے گزارش ہے اپنی آرا سے نوازیے
تقطیع
قومی ترانہ
بحر رمل مجبوب مقصور مکفوف

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پاک سر زمین شاد باد
پاک سر ز ۔۔ می نُ شا دُ ۔۔۔ باد
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کشوَرِ حسین شاد باد
کش وَ رے ح ۔۔۔ سی نُ شا د ۔۔۔۔۔۔ باد
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تو نشانِ عزمِ عالی شان
تو نِ شا نِ ۔۔۔۔۔ عز مِ عا لِ ۔۔۔۔۔ شان
فاعلاتُ ۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ارضِ پاکستان
ار ضِ پا کِس ۔۔۔۔۔ تان
فاعلاتُن ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مرکزِ یقین شاد باد
مر کَ زے یَ ۔۔۔۔ قی نُ شا د ۔۔۔۔۔ باد
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پاک سر زمین کا نظام
پاک سر ز ۔۔۔۔ می نُ کا نِ ۔۔۔۔۔۔ ظام
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
قوّتِ اخوّتِ عوام
قو وَ تے اَ ۔۔۔۔ خو وَ تے عَ ۔۔۔۔۔۔ وام
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
قوم ملک سلطنت
قو مُ مل کُ  ۔۔۔۔ سل طَ نت
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلن
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پائندہ تابندہ باد
پا ء دہ تَ ۔۔۔۔ بن دَ باد
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شاد باد منزلِ مراد
شا د باد  ۔۔۔۔ من زِ لے مُ ۔۔۔۔۔۔ راد
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پرچمِ ستارہ و ہلال
پر چَ مے سِ ۔۔۔۔ تا رَ ہو ہِ ۔۔۔۔۔۔ لال
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رہبرِ ترقی و کمال
رہ بَ رے تَ ۔۔۔۔ رق قِ یو کَ ۔۔۔۔۔۔ مال
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ترجمانِ ماضی شانِ حال
تر جُ ما نِ  ۔۔۔۔ ما ضِ شا نِ ۔۔۔۔۔۔ حال
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 جانِ استقبال
جا نِ اس تَق ۔۔۔۔ بال
فاعلاتُن ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سایہء خدائے ذوالجلال
سا یَ ئے خُ ۔۔۔۔ دا ء ذل ج ۔۔۔۔۔۔ لال
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

توجہ کا طلبگار

اسماعیل اعجاز خیالؔ
« آخری ترمیم: ستمبر 11, 2017, 05:03:05 صبح منجانب Ismaa'eel Aijaaz »


محبتوں سے محبت سمیٹنے والا
خیال آپ کی محفل میں آچ پھر آیا

خیال

muHabbatoN se muHabbat sameTne waalaa
Khayaal aap kee maiHfil meN aaj phir aayaa

(Khayaal)

غیرحاضر سرور عالم راز

  • Muntazim-o-Mudeer
  • Saaheb-e-adab
  • ******
  • تحریریں: 6238
  • جنس: مرد
    • Kalam-e-Sarwar
جواب: ماہرینِ عروض سے گزارش ہے اپنی آرا سے نوازیے
« Reply #1 بروز: ستمبر 07, 2017, 08:36:08 شام »
ماہرینِ عروض سے گزارش ہے اپنی آرا سے نوازیے
تقطیع
قومی ترانہ
بحر رمل مجبوب مقصور معکوف

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پاک سر زمین شاد باد
پاک سر ز ۔۔ می نُ شا دُ ۔۔۔ باد
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کشوَرِ حسین شاد باد
کش وَ رے ح ۔۔۔ سی نُ شا د ۔۔۔۔۔۔ باد
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تو نشانِ عزمِ عالی شان
تو نِ شا نِ ۔۔۔۔۔ عز مِ عا لِ ۔۔۔۔۔ شان
فاعلاتُ ۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عرضِ پاکستان
عر ضِ پا کِ ۔۔۔۔۔ ستان
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعول
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مرکزِ یقین شاد باد
مر کَ زے یَ ۔۔۔۔ قی نُ شا د ۔۔۔۔۔ باد
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پاک سر زمین کا نظام
پاک سر ز ۔۔۔۔ می نُ کا نِ ۔۔۔۔۔۔ ظام
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
قوّتِ اخوّتِ عوام
قو وَ تے اَ ۔۔۔۔ خو وَ تے عَ ۔۔۔۔۔۔ وام
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
قوم ملک سلطنت
قو مُ مل کُ  ۔۔۔۔ سل طَ نت
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلن
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پائندہ تابندہ باد
پا ء دہ تَ ۔۔۔۔ بن دَ باد
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شاد باد منزلِ مراد
شا د باد  ۔۔۔۔ من زِ لے مُ ۔۔۔۔۔۔ راد
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پرچمِ ستارہ و ہلال
پر چَ مے سِ ۔۔۔۔ تا رَ ہو ہِ ۔۔۔۔۔۔ لال
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رہبرِ ترقی و کمال
رہ بَ رے تَ ۔۔۔۔ رق قِ یو کَ ۔۔۔۔۔۔ مال
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ترجمانِ ماضی شانِ حال
تر جُ ما نِ  ۔۔۔۔ ما ضِ شا نِ ۔۔۔۔۔۔ حال
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 جانِ استقبال
جا نِ اس تَ ۔۔۔۔ قَ بال
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعول
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سایہء خدائے ذوالجلال
سا یَ ئے خُ ۔۔۔۔ دا ء ذل ج ۔۔۔۔۔۔ لال
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

توجہ کا طلبگار

اسماعیل اعجاز خیالؔ


محترمی خیال صاحب: سلام مسنون
آپ نے ماہرین عروض کو دعوت کلام دی ہے۔ میں ان میں سے یقینا نہیں ہوں البتہ عروض کا شوق ضرور رکھتا ہوں۔ اس لئے لکھنے کی جرات کررہا ہوں۔ آپ نے جس تخلیق کے عروضی تجزیہ کا بیڑا اٹھایا ہے وہ نہت پیچیدہ اور دقیق ہے۔ پاکستان کا قومی ترانہ جس طرح تخلیق پذیر ہوا اس سے آپ ضرور واقف ہوں گے۔ اس کی صورت ہیئت اور بنت اسی کیفیت کی آئینہ دار ہے۔ اس ترانہ کی بحر اور وزن کا تعین جوئے شیر لانے سے کچھ زیادہ ہہی صبرآزما اور مشکل ہے۔ آپ کی ہمت کی داد نہ دینا صریحا نا انصافی ہے چنانچہ سب سے پہلے داد قبول کیجئے۔
اس کے بعد عرض ہے کہ میرے پاس اس وقت اتنی مہلت نہیں کہ پورے ترانے کا تجزیہ کرنے کی کوشش کروں۔ صرف اتنا عرض کروں گا کہ مصرع اول یعنی
پاک سرزمین شاد باد
کی جو تقطیع :فاعلات فاعلات فعل آپ نے تجویز کی ہے اس کاجواز میری سمجھ میں مطلق نہیں آسکا۔ آپ خود ہی سوچیں کہ :باد: کو آپ "فعل" سے کیسے ادا کرسکتے ہیں؟ مصرع اور تقطیع کی روانی کو ہی دیکھیں تو معلوم ہوتا ہے کہ کہیں گڑبڑ ہورہی ہے۔ میری ناقص رائے میں اس مصرع کی تقطیع یوں ہے:
پاک سرز (فاعلات)، مین (فعل) شاد باد (فاعلان)
امید ہے کہ آپ اس پر روشنی ڈالیں گے۔ شکریہ۔ اور ہاں آپ نے دو جگہ "عرض پاکستان" لکھا ہے۔ اصل لفظ "ارض" ہے بمعنی "زمین"۔

سرورعالم راز



غیرحاضر vb jee

  • Adab Fehm
  • ****
  • تحریریں: 1248
  • جنس: مرد
جواب: ماہرینِ عروض سے گزارش ہے اپنی آرا سے نوازیے
« Reply #2 بروز: ستمبر 08, 2017, 06:53:20 صبح »
ماہرینِ عروض سے گزارش ہے اپنی آرا سے نوازیے
تقطیع
قومی ترانہ
بحر رمل مجبوب مقصور معکوف

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پاک سر زمین شاد باد
پاک سر ز ۔۔ می نُ شا دُ ۔۔۔ باد
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کشوَرِ حسین شاد باد
کش وَ رے ح ۔۔۔ سی نُ شا د ۔۔۔۔۔۔ باد
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تو نشانِ عزمِ عالی شان
تو نِ شا نِ ۔۔۔۔۔ عز مِ عا لِ ۔۔۔۔۔ شان
فاعلاتُ ۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عرضِ پاکستان
عر ضِ پا کِ ۔۔۔۔۔ ستان
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعول
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مرکزِ یقین شاد باد
مر کَ زے یَ ۔۔۔۔ قی نُ شا د ۔۔۔۔۔ باد
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پاک سر زمین کا نظام
پاک سر ز ۔۔۔۔ می نُ کا نِ ۔۔۔۔۔۔ ظام
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
قوّتِ اخوّتِ عوام
قو وَ تے اَ ۔۔۔۔ خو وَ تے عَ ۔۔۔۔۔۔ وام
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
قوم ملک سلطنت
قو مُ مل کُ  ۔۔۔۔ سل طَ نت
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلن
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پائندہ تابندہ باد
پا ء دہ تَ ۔۔۔۔ بن دَ باد
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شاد باد منزلِ مراد
شا د باد  ۔۔۔۔ من زِ لے مُ ۔۔۔۔۔۔ راد
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پرچمِ ستارہ و ہلال
پر چَ مے سِ ۔۔۔۔ تا رَ ہو ہِ ۔۔۔۔۔۔ لال
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رہبرِ ترقی و کمال
رہ بَ رے تَ ۔۔۔۔ رق قِ یو کَ ۔۔۔۔۔۔ مال
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ترجمانِ ماضی شانِ حال
تر جُ ما نِ  ۔۔۔۔ ما ضِ شا نِ ۔۔۔۔۔۔ حال
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 جانِ استقبال
جا نِ اس تَ ۔۔۔۔ قَ بال
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعول
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سایہء خدائے ذوالجلال
سا یَ ئے خُ ۔۔۔۔ دا ء ذل ج ۔۔۔۔۔۔ لال
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

توجہ کا طلبگار

اسماعیل اعجاز خیالؔ



محترم جناب اسماعیل اعجاز صاحب اور محترم جناب سرور عالم راز سرورؔ صاحب، السلام علیکم

ایک شاگرد کی حیثیت سے ہم بھی یہاں انگلی کٹوانا چاہیں گے۔ :)

قومی ترانہ پر ہم بھی مشق آزمائی کرتے رہے ہیں لیکن ہم سے کسی طرح نہ ہو سکا۔ خیال آیا تھا کہ اسے سوال کے طور پر یہاں پیش کر دیں لیکن اس لئیے نہیں کیا کہ سوال کہیں نازک صورت حال نہ پیدا کر دے یا ممکن ہے کہ ممنوعہ قرار پائے۔ محترم اسماعیل اعجاز صاحب نے محنت سے کام لیا ہے جس سے سیکھنے کو ملا، ان کے شکر گزار ہیں ہم۔ ہمارا خیال ہے کہ چونکہ شاہِ ایران کی پاکستان آمد کی وجہ سے حکومتِ وقت نے پاکستانی قومی ترانہ کمیٹی پر دباؤ بڑھا دیا تھا اور ترانہ کمیٹی نے 1949 میں ہی چاغلہ صاحب کی دھُن کو منظور کر دیا تھا جبکہ اس کی شاعری بعد میں 1954 میں منظور ہوئی چنانچہ جالندھری صاحب نے عروض کی بجائے، دھن کو مدِ نظر رکھ کر شاعری پیش کی۔ شاید یہی وجہ ہے کہ اس کی شکل کُچھ آزاد نظم کی سی ہے۔


دُعا گو


گنگناتی رهے گی انھیں تو سدا
اتنے نغمے تِرے نام کر جائیں گے

غیرحاضر Ismaa'eel Aijaaz

  • Saaheb-e-adab
  • *****
  • تحریریں: 3214
جواب: ماہرینِ عروض سے گزارش ہے اپنی آرا سے نوازیے
« Reply #3 بروز: ستمبر 08, 2017, 10:12:50 شام »
ماہرینِ عروض سے گزارش ہے اپنی آرا سے نوازیے
تقطیع
قومی ترانہ
بحر رمل مجبوب مقصور معکوف

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پاک سر زمین شاد باد
پاک سر ز ۔۔ می نُ شا دُ ۔۔۔ باد
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کشوَرِ حسین شاد باد
کش وَ رے ح ۔۔۔ سی نُ شا د ۔۔۔۔۔۔ باد
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تو نشانِ عزمِ عالی شان
تو نِ شا نِ ۔۔۔۔۔ عز مِ عا لِ ۔۔۔۔۔ شان
فاعلاتُ ۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ارضِ پاکستان
ار ضِ پا کِ ۔۔۔۔۔ ستان
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعول
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مرکزِ یقین شاد باد
مر کَ زے یَ ۔۔۔۔ قی نُ شا د ۔۔۔۔۔ باد
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پاک سر زمین کا نظام
پاک سر ز ۔۔۔۔ می نُ کا نِ ۔۔۔۔۔۔ ظام
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
قوّتِ اخوّتِ عوام
قو وَ تے اَ ۔۔۔۔ خو وَ تے عَ ۔۔۔۔۔۔ وام
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
قوم ملک سلطنت
قو مُ مل کُ  ۔۔۔۔ سل طَ نت
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلن
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پائندہ تابندہ باد
پا ء دہ تَ ۔۔۔۔ بن دَ باد
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شاد باد منزلِ مراد
شا د باد  ۔۔۔۔ من زِ لے مُ ۔۔۔۔۔۔ راد
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پرچمِ ستارہ و ہلال
پر چَ مے سِ ۔۔۔۔ تا رَ ہو ہِ ۔۔۔۔۔۔ لال
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رہبرِ ترقی و کمال
رہ بَ رے تَ ۔۔۔۔ رق قِ یو کَ ۔۔۔۔۔۔ مال
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ترجمانِ ماضی شانِ حال
تر جُ ما نِ  ۔۔۔۔ ما ضِ شا نِ ۔۔۔۔۔۔ حال
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 جانِ استقبال
جا نِ اس تَ ۔۔۔۔ قَ بال
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعول
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سایہء خدائے ذوالجلال
سا یَ ئے خُ ۔۔۔۔ دا ء ذل ج ۔۔۔۔۔۔ لال
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

توجہ کا طلبگار

اسماعیل اعجاز خیالؔ


محترمی خیال صاحب: سلام مسنون
آپ نے ماہرین عروض کو دعوت کلام دی ہے۔ میں ان میں سے یقینا نہیں ہوں البتہ عروض کا شوق ضرور رکھتا ہوں۔ اس لئے لکھنے کی جرات کررہا ہوں۔ آپ نے جس تخلیق کے عروضی تجزیہ کا بیڑا اٹھایا ہے وہ نہت پیچیدہ اور دقیق ہے۔ پاکستان کا قومی ترانہ جس طرح تخلیق پذیر ہوا اس سے آپ ضرور واقف ہوں گے۔ اس کی صورت ہیئت اور بنت اسی کیفیت کی آئینہ دار ہے۔ اس ترانہ کی بحر اور وزن کا تعین جوئے شیر لانے سے کچھ زیادہ ہہی صبرآزما اور مشکل ہے۔ آپ کی ہمت کی داد نہ دینا صریحا نا انصافی ہے چنانچہ سب سے پہلے داد قبول کیجئے۔
اس کے بعد عرض ہے کہ میرے پاس اس وقت اتنی مہلت نہیں کہ پورے ترانے کا تجزیہ کرنے کی کوشش کروں۔ صرف اتنا عرض کروں گا کہ مصرع اول یعنی
پاک سرزمین شاد باد
کی جو تقطیع :فاعلات فاعلات فعل آپ نے تجویز کی ہے اس کاجواز میری سمجھ میں مطلق نہیں آسکا۔ آپ خود ہی سوچیں کہ :باد: کو آپ "فعل" سے کیسے ادا کرسکتے ہیں؟ مصرع اور تقطیع کی روانی کو ہی دیکھیں تو معلوم ہوتا ہے کہ کہیں گڑبڑ ہورہی ہے۔ میری ناقص رائے میں اس مصرع کی تقطیع یوں ہے:
پاک سرز (فاعلات)، مین (فعل) شاد باد (فاعلان)
امید ہے کہ آپ اس پر روشنی ڈالیں گے۔ شکریہ۔ اور ہاں آپ نے دو جگہ "عرض پاکستان" لکھا ہے۔ اصل لفظ "ارض" ہے بمعنی "زمین"۔

سرورعالم راز
اقتباس
محترم جناب اسماعیل اعجاز صاحب اور محترم جناب سرور عالم راز سرورؔ صاحب، السلام علیکم

ایک شاگرد کی حیثیت سے ہم بھی یہاں انگلی کٹوانا چاہیں گے۔ :)

قومی ترانہ پر ہم بھی مشق آزمائی کرتے رہے ہیں لیکن ہم سے کسی طرح نہ ہو سکا۔ خیال آیا تھا کہ اسے سوال کے طور پر یہاں پیش کر دیں لیکن اس لئیے نہیں کیا کہ سوال کہیں نازک صورت حال نہ پیدا کر دے یا ممکن ہے کہ ممنوعہ قرار پائے۔ محترم اسماعیل اعجاز صاحب نے محنت سے کام لیا ہے جس سے سیکھنے کو ملا، ان کے شکر گزار ہیں ہم۔ ہمارا خیال ہے کہ چونکہ شاہِ ایران کی پاکستان آمد کی وجہ سے حکومتِ وقت نے پاکستانی قومی ترانہ کمیٹی پر دباؤ بڑھا دیا تھا اور ترانہ کمیٹی نے 1949 میں ہی چاغلہ صاحب کی دھُن کو منظور کر دیا تھا جبکہ اس کی شاعری بعد میں 1954 میں منظور ہوئی چنانچہ جالندھری صاحب نے عروض کی بجائے، دھن کو مدِ نظر رکھ کر شاعری پیش کی۔ شاید یہی وجہ ہے کہ اس کی شکل کُچھ آزاد نظم کی سی ہے۔


دُعا گو




جناب محترم سرور عالم راز سرور صاحب اور جناب محترم وی بی جی
وعلیکم السلام ورحمتہ اللہ وبرکاتہ

جنابِ عالی میں آپ احباب کا تہِ دل سے شکرگزار ہوں کہ آپ تشریف لائے اور مجھے اپنی محبتوں اپنی عنایتوں سے نوازا ، اللہ پاک آپ کو جزائے خیر عطا فرمائے ، اللہ دونوں جہانوں کی عزّتیں عطا فرمائے

جناب سرور عالم راز سرور صاحب مجھ سے صریح غلطی سرذد ہوئی ارضِ پاکستان عرضِ پاکستان میں مکتوب ہوا میں شرمندہ ہوں ،
آپ نے جو اوزان تجویز فرمائے

میری ناقص رائے میں اس مصرع کی تقطیع یوں ہے:
پاک سرز (فاعلات)، مین (فعل) شاد باد (فاعلان)

سر آنکھوں پر

مرزا واجد حسین یاس عظیم آبادی صاحب نے جو فاعلاتن کے زحافات سندِ فہرست کیے ہیں ان میں (فاعلان) نہیں ہے جب کہ فَعِلان عین مکسور فعلان عین ساکن کی صورتیں موجود ہیں
میں نے جو تقطیع پیشِ خدمت کی ہے اس میں 3 زحات فاعلاتُ ؛ فاعلن؛ فعل یا فاع کے موجود ہیں جب کہ میری تقطیع میں ایک زحاف (فعول) ہے جو فاعلاتن کا زحاف نہیں ہے فاعلات ؛ فاعلن اور فعل کو کیسے وجود ملا اس کے لیے مرزا یاس عظیم آبادی صاحب جن کی کتان ’’چراغِ سخن‘‘ اور ڈاکٹر کندن اراولی صاحب چندی گڑح والے جن کی کتاب ’’ احتساب العروض‘‘ میں درج ہے کہ

رکن کے آخری سے سبب کا ساتواں حرفِ ساکن گرانا ۔ مزاحف مکفوف ہے جیسے کہ

فاعلاتن - ن = فاعلاتُ
جسے کف کا عمل کہا گیا ہے یعنی مکفوف

اسی طرح فرماتے ہیں کہ فاعلاتن کا آخر سبب خفیف گرانا محذوف زحاف ہے

جیسے کہ


  فاعلن =   فاعلاتن - تن = فاعلا
جسے کف کا عمل کہا گیا ہے یعنی مکفوف

جبکہ ڈاکٹر کندن اراولی نے زھاف (جبّ خاص) بنانے کے لیے فرمایا ہے کہ آکر بیت میں رکن کے آخر سے دو اسبابِ خفیفہ گرا دینا ۔ مزاحف رکن کا مجبوب ہے جیسے کہ

فعل  =   فاعلاتن - لاتن = فاع

یہاں فاع اور مفل دونوں ہم وزن ہیں میں نے یہاں یہی اخذ کیا کہ پاکستان کے قومی ترانے میں بیشتر مصاریع بحر رمل مجبوب مکفوف (فاعلاتُ فاعلاتُ فعل یا فاع ) کے وزن پر ہیں ایک مصرع رمل محذوف مکفوف قوم ملک سلطنت (فاعلاتُ فاعلن) پر ہے جبکہ دو مصرعے (فعول) آخرِ رکن ہیں جو کہ فاعلاتن کا زحاف نہیں ہے بحر سے خارج ہیں

امید ہے میری اس تحقیق و تجزیے سے آپ اساتذہ اتفاق فرمائیں گے ، مجھے جمعہ جمعہ آتھ دن ہوئے ہیں عروض کو سیکھتے ہوئے لہٰذا غلطی کی گنجائش اور اغلب گمان کو دوام حاصل ہے

میں آپ احباب سے گزارش کرتا ہوں کہ جہاں مجھ سے غلطی ہو رہی ہے میری رہنمائی فرمائیں

اللہ پاک آپ سبھی کو سدا سلامت رکھے دونوں جہاوں میں شاد و آباد رکھے

دعاگو


محبتوں سے محبت سمیٹنے والا
خیال آپ کی محفل میں آچ پھر آیا

خیال

muHabbatoN se muHabbat sameTne waalaa
Khayaal aap kee maiHfil meN aaj phir aayaa

(Khayaal)

غیرحاضر سرور عالم راز

  • Muntazim-o-Mudeer
  • Saaheb-e-adab
  • ******
  • تحریریں: 6238
  • جنس: مرد
    • Kalam-e-Sarwar
جواب: ماہرینِ عروض سے گزارش ہے اپنی آرا سے نوازیے
« Reply #4 بروز: ستمبر 09, 2017, 10:47:53 صبح »
ماہرینِ عروض سے گزارش ہے اپنی آرا سے نوازیے
تقطیع
قومی ترانہ
بحر رمل مجبوب مقصور معکوف

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پاک سر زمین شاد باد
پاک سر ز ۔۔ می نُ شا دُ ۔۔۔ باد
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کشوَرِ حسین شاد باد
کش وَ رے ح ۔۔۔ سی نُ شا د ۔۔۔۔۔۔ باد
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تو نشانِ عزمِ عالی شان
تو نِ شا نِ ۔۔۔۔۔ عز مِ عا لِ ۔۔۔۔۔ شان
فاعلاتُ ۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ارضِ پاکستان
ار ضِ پا کِ ۔۔۔۔۔ ستان
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعول
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مرکزِ یقین شاد باد
مر کَ زے یَ ۔۔۔۔ قی نُ شا د ۔۔۔۔۔ باد
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پاک سر زمین کا نظام
پاک سر ز ۔۔۔۔ می نُ کا نِ ۔۔۔۔۔۔ ظام
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
قوّتِ اخوّتِ عوام
قو وَ تے اَ ۔۔۔۔ خو وَ تے عَ ۔۔۔۔۔۔ وام
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
قوم ملک سلطنت
قو مُ مل کُ  ۔۔۔۔ سل طَ نت
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلن
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پائندہ تابندہ باد
پا ء دہ تَ ۔۔۔۔ بن دَ باد
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شاد باد منزلِ مراد
شا د باد  ۔۔۔۔ من زِ لے مُ ۔۔۔۔۔۔ راد
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پرچمِ ستارہ و ہلال
پر چَ مے سِ ۔۔۔۔ تا رَ ہو ہِ ۔۔۔۔۔۔ لال
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رہبرِ ترقی و کمال
رہ بَ رے تَ ۔۔۔۔ رق قِ یو کَ ۔۔۔۔۔۔ مال
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ترجمانِ ماضی شانِ حال
تر جُ ما نِ  ۔۔۔۔ ما ضِ شا نِ ۔۔۔۔۔۔ حال
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 جانِ استقبال
جا نِ اس تَ ۔۔۔۔ قَ بال
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعول
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سایہء خدائے ذوالجلال
سا یَ ئے خُ ۔۔۔۔ دا ء ذل ج ۔۔۔۔۔۔ لال
فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعلاتُ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فعل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

توجہ کا طلبگار

اسماعیل اعجاز خیالؔ


محترمی خیال صاحب: سلام مسنون
آپ نے ماہرین عروض کو دعوت کلام دی ہے۔ میں ان میں سے یقینا نہیں ہوں البتہ عروض کا شوق ضرور رکھتا ہوں۔ اس لئے لکھنے کی جرات کررہا ہوں۔ آپ نے جس تخلیق کے عروضی تجزیہ کا بیڑا اٹھایا ہے وہ نہت پیچیدہ اور دقیق ہے۔ پاکستان کا قومی ترانہ جس طرح تخلیق پذیر ہوا اس سے آپ ضرور واقف ہوں گے۔ اس کی صورت ہیئت اور بنت اسی کیفیت کی آئینہ دار ہے۔ اس ترانہ کی بحر اور وزن کا تعین جوئے شیر لانے سے کچھ زیادہ ہہی صبرآزما اور مشکل ہے۔ آپ کی ہمت کی داد نہ دینا صریحا نا انصافی ہے چنانچہ سب سے پہلے داد قبول کیجئے۔
اس کے بعد عرض ہے کہ میرے پاس اس وقت اتنی مہلت نہیں کہ پورے ترانے کا تجزیہ کرنے کی کوشش کروں۔ صرف اتنا عرض کروں گا کہ مصرع اول یعنی
پاک سرزمین شاد باد
کی جو تقطیع :فاعلات فاعلات فعل آپ نے تجویز کی ہے اس کاجواز میری سمجھ میں مطلق نہیں آسکا۔ آپ خود ہی سوچیں کہ :باد: کو آپ "فعل" سے کیسے ادا کرسکتے ہیں؟ مصرع اور تقطیع کی روانی کو ہی دیکھیں تو معلوم ہوتا ہے کہ کہیں گڑبڑ ہورہی ہے۔ میری ناقص رائے میں اس مصرع کی تقطیع یوں ہے:
پاک سرز (فاعلات)، مین (فعل) شاد باد (فاعلان)
امید ہے کہ آپ اس پر روشنی ڈالیں گے۔ شکریہ۔ اور ہاں آپ نے دو جگہ "عرض پاکستان" لکھا ہے۔ اصل لفظ "ارض" ہے بمعنی "زمین"۔

سرورعالم راز
اقتباس
محترم جناب اسماعیل اعجاز صاحب اور محترم جناب سرور عالم راز سرورؔ صاحب، السلام علیکم

ایک شاگرد کی حیثیت سے ہم بھی یہاں انگلی کٹوانا چاہیں گے۔ :)

قومی ترانہ پر ہم بھی مشق آزمائی کرتے رہے ہیں لیکن ہم سے کسی طرح نہ ہو سکا۔ خیال آیا تھا کہ اسے سوال کے طور پر یہاں پیش کر دیں لیکن اس لئیے نہیں کیا کہ سوال کہیں نازک صورت حال نہ پیدا کر دے یا ممکن ہے کہ ممنوعہ قرار پائے۔ محترم اسماعیل اعجاز صاحب نے محنت سے کام لیا ہے جس سے سیکھنے کو ملا، ان کے شکر گزار ہیں ہم۔ ہمارا خیال ہے کہ چونکہ شاہِ ایران کی پاکستان آمد کی وجہ سے حکومتِ وقت نے پاکستانی قومی ترانہ کمیٹی پر دباؤ بڑھا دیا تھا اور ترانہ کمیٹی نے 1949 میں ہی چاغلہ صاحب کی دھُن کو منظور کر دیا تھا جبکہ اس کی شاعری بعد میں 1954 میں منظور ہوئی چنانچہ جالندھری صاحب نے عروض کی بجائے، دھن کو مدِ نظر رکھ کر شاعری پیش کی۔ شاید یہی وجہ ہے کہ اس کی شکل کُچھ آزاد نظم کی سی ہے۔


دُعا گو




جناب محترم سرور عالم راز سرور صاحب اور جناب محترم وی بی جی
وعلیکم السلام ورحمتہ اللہ وبرکاتہ

جنابِ عالی میں آپ احباب کا تہِ دل سے شکرگزار ہوں کہ آپ تشریف لائے اور مجھے اپنی محبتوں اپنی عنایتوں سے نوازا ، اللہ پاک آپ کو جزائے خیر عطا فرمائے ، اللہ دونوں جہانوں کی عزّتیں عطا فرمائے

جناب سرور عالم راز سرور صاحب مجھ سے صریح غلطی سرذد ہوئی ارضِ پاکستان عرضِ پاکستان میں مکتوب ہوا میں شرمندہ ہوں ،
آپ نے جو اوزان تجویز فرمائے

میری ناقص رائے میں اس مصرع کی تقطیع یوں ہے:
پاک سرز (فاعلات)، مین (فعل) شاد باد (فاعلان)

سر آنکھوں پر

مرزا واجد حسین یاس عظیم آبادی صاحب نے جو فاعلاتن کے زحافات سندِ فہرست کیے ہیں ان میں (فاعلان) نہیں ہے جب کہ فَعِلان عین مکسور فعلان عین ساکن کی صورتیں موجود ہیں
میں نے جو تقطیع پیشِ خدمت کی ہے اس میں 3 زحات فاعلاتُ ؛ فاعلن؛ فعل یا فاع کے موجود ہیں جب کہ میری تقطیع میں ایک زحاف (فعول) ہے جو فاعلاتن کا زحاف نہیں ہے فاعلات ؛ فاعلن اور فعل کو کیسے وجود ملا اس کے لیے مرزا یاس عظیم آبادی صاحب جن کی کتان ’’چراغِ سخن‘‘ اور ڈاکٹر کندن اراولی صاحب چندی گڑح والے جن کی کتاب ’’ احتساب العروض‘‘ میں درج ہے کہ

رکن کے آخری سے سبب کا ساتواں حرفِ ساکن گرانا ۔ مزاحف مکفوف ہے جیسے کہ

فاعلاتن - ن = فاعلاتُ
جسے کف کا عمل کہا گیا ہے یعنی مکفوف

اسی طرح فرماتے ہیں کہ فاعلاتن کا آخر سبب خفیف گرانا محذوف زحاف ہے

جیسے کہ


  فاعلن =   فاعلاتن - تن = فاعلا
جسے کف کا عمل کہا گیا ہے یعنی مکفوف

جبکہ ڈاکٹر کندن اراولی نے زھاف (جبّ خاص) بنانے کے لیے فرمایا ہے کہ آکر بیت میں رکن کے آخر سے دو اسبابِ خفیفہ گرا دینا ۔ مزاحف رکن کا مجبوب ہے جیسے کہ

فعل  =   فاعلاتن - لاتن = فاع

یہاں فاع اور مفل دونوں ہم وزن ہیں میں نے یہاں یہی اخذ کیا کہ پاکستان کے قومی ترانے میں بیشتر مصاریع بحر رمل مجبوب مکفوف (فاعلاتُ فاعلاتُ فعل یا فاع ) کے وزن پر ہیں ایک مصرع رمل محذوف مکفوف قوم ملک سلطنت (فاعلاتُ فاعلن) پر ہے جبکہ دو مصرعے (فعول) آخرِ رکن ہیں جو کہ فاعلاتن کا زحاف نہیں ہے بحر سے خارج ہیں

امید ہے میری اس تحقیق و تجزیے سے آپ اساتذہ اتفاق فرمائیں گے ، مجھے جمعہ جمعہ آتھ دن ہوئے ہیں عروض کو سیکھتے ہوئے لہٰذا غلطی کی گنجائش اور اغلب گمان کو دوام حاصل ہے

میں آپ احباب سے گزارش کرتا ہوں کہ جہاں مجھ سے غلطی ہو رہی ہے میری رہنمائی فرمائیں

اللہ پاک آپ سبھی کو سدا سلامت رکھے دونوں جہاوں میں شاد و آباد رکھے

دعاگو




عزیز مکرم خیال صاحب: سلام مسنون
جواب خط کے لئے شکریہ۔ ڈاکٹر جمال الدین جمال کی کتاب تفہیم العروض میں فاعلان زحاف موجود ہے۔ یہ کتاب پاکستان میں آسانی سے مل جاتی ہے۔ ضرور لیجئے۔ آپ کی محنت قابل داد ہے۔ اللہ مجھ کو بھی ایسی ہی توفیق دے۔ جناب وی بی جی سے عرض ہے کہ میرے علم کے مطابق پاکستانی قومی ترانے کی دھن انگلینڈ کے ایک موسیقار کی بنائی ہوئی ہے ورنہ بر صغیر میں انگریزی دھنیں بنانے والے کہاں ہیں؟ دوسری بات یہ کہ سارے ترانے میں ایک لفظ "کا" کے علاوہ ہر لفظ ٹھیٹ فارسی کا ہے۔ عام آدمی یہ ترانہ پھر کس طرح سمجھے اور یاد کرے؟ تیسرے یہ کہ ارباب حل و عقد نے علام اقبال کی کسی نظم سے کوئی مناسب ٹکڑا کیوں نہیں اخذ کر لیا جو یہ عجیب وغریب چیز ایجاد کی ہے۔ اب تک مجھ کو ایک بھی پاکستانی ایسا نہیں ملا جس کو ترانہ یاد ہو اور وہ اس کو سنا سکتا ہو۔ ہندوستانی اس معاملہ میں بہت عقل مند نکلے کہ انھوں نے رابندر ناتھ ٹیگور کی ایک مشہور بنگالی نظم اختیار کی جس کی دھن بھی ٹیگور نے بنائی تھی۔ ترانہ اور دھن اس قدر آسان ہیں کہ مجھ کو آج تک یاد ہیں جب کہ آزادی کے وقت میں بارہ سال کا تھا اور اسکول میں ہر صبح گانا اسمبلی میں لڑکوں کو گانا پڑتا تھا۔ کیا عجیب وقت تھا وہ بھی۔

سرورعالم راز



غیرحاضر vb jee

  • Adab Fehm
  • ****
  • تحریریں: 1248
  • جنس: مرد
جواب: ماہرینِ عروض سے گزارش ہے اپنی آرا سے نوازیے
« Reply #5 بروز: ستمبر 11, 2017, 07:21:30 صبح »

اقتباس

عزیز مکرم خیال صاحب: سلام مسنون
جواب خط کے لئے شکریہ۔ ڈاکٹر جمال الدین جمال کی کتاب تفہیم العروض میں فاعلان زحاف موجود ہے۔ یہ کتاب پاکستان میں آسانی سے مل جاتی ہے۔ ضرور لیجئے۔ آپ کی محنت قابل داد ہے۔ اللہ مجھ کو بھی ایسی ہی توفیق دے۔ جناب وی بی جی سے عرض ہے کہ میرے علم کے مطابق پاکستانی قومی ترانے کی دھن انگلینڈ کے ایک موسیقار کی بنائی ہوئی ہے ورنہ بر صغیر میں انگریزی دھنیں بنانے والے کہاں ہیں؟ دوسری بات یہ کہ سارے ترانے میں ایک لفظ "کا" کے علاوہ ہر لفظ ٹھیٹ فارسی کا ہے۔ عام آدمی یہ ترانہ پھر کس طرح سمجھے اور یاد کرے؟ تیسرے یہ کہ ارباب حل و عقد نے علام اقبال کی کسی نظم سے کوئی مناسب ٹکڑا کیوں نہیں اخذ کر لیا جو یہ عجیب وغریب چیز ایجاد کی ہے۔ اب تک مجھ کو ایک بھی پاکستانی ایسا نہیں ملا جس کو ترانہ یاد ہو اور وہ اس کو سنا سکتا ہو۔ ہندوستانی اس معاملہ میں بہت عقل مند نکلے کہ انھوں نے رابندر ناتھ ٹیگور کی ایک مشہور بنگالی نظم اختیار کی جس کی دھن بھی ٹیگور نے بنائی تھی۔ ترانہ اور دھن اس قدر آسان ہیں کہ مجھ کو آج تک یاد ہیں جب کہ آزادی کے وقت میں بارہ سال کا تھا اور اسکول میں ہر صبح گانا اسمبلی میں لڑکوں کو گانا پڑتا تھا۔ کیا عجیب وقت تھا وہ بھی۔

سرورعالم راز

محترم جناب سرور عالم راز سرورؔ صاحب! السلام علیکم

صاحب آپ چونکہ اس وقت کے زیادہ قریب رہے ہیں سو آپ کی معلومات پر بھروسہ کیا جا سکتا ہے۔ کیا کیجے کہ ہمارے ہاں تاریخ کو بدل کر پیش کرنے کا رواج عروج پاتا جا رہا ہے۔ یہاں تک کہ ماضی میں فقط جھانک کر دیکھنے والے کو بھی غدار قرار دے دیا جاتا ہے۔ سو ہمارے قلم پر بھی خنجر کی نوک ہی رہتی ہے۔ پاکستان بننے کے بعد کے جو حالات رہے، ہم بھی پڑھتے ہی رہتے ہیں اور آپ مذید بہتر جانتے ہونگے۔ لیکن غیر جانبدارانہ معلومات کے لئیے ہم ترستے ہی رہتے ہیں۔ مثلاً کہا جاتا ہے کہ پاکستان کا پہلا ترانہ جو جناح صاحب نے منظور فرمایا وہ ایک ہندو جگن ناتھ آزاد صاحب نے لکھا تھا اور اسے ریڈیو پاکستان سے نشر بھی کیا جاتا تھا۔ جو یہاں موجود ہے۔

https://en.wikipedia.org/wiki/Tarana-e-Pakistan

لیکن کئی لوگ کہتے کہ ایسا نہیں تھا اور یہ باقاعدہ منظور کیا گیا ترانہ نہ تھا۔ اور نہ نشر کیا جاتا تھا۔ اب کس کی بات مانی جائے؟ ہو سکتا ہے آپ ہی کُچھ مدد فرما دیں۔

جہاں تک دھُن کی بات ہے تو وکی پیڈیا ہمیں چھاگلہ صاحب کے بارے میں بتاتا ہے کہ وہ مغرب سے موسیقی پڑھ کر آئے تھے اور مشرقی اور مغربی موسیقی کے امتزاج کے لحاظ سے پہچانے جاتے تھے۔ دھاگہ درجِ ذیل ہے۔

https://en.wikipedia.org/wiki/Ahmed_Ghulamali_Chagla

اگر تو وکی پیڈیا ٹھیک کہہ رہا ہے تو اُن کا یہ دھن بنا لینا ہمیں مشکوک نظر نہیں آ رہا۔ عین ممکن ہے آپ اس پر روشنی ڈالیں تو یہ گتھی بھی سلجھ سکے۔

شاعری فارسی میں ہے۔ ہم بچوں کو بارہ سے تیرہ سال تک مسلسل روز سکول میں پڑھواتے ہیں۔ لیکن اس کے بعد کسی کو یاد نہیں رہتا۔ جس عمر میں بچے  غالبؔ اور میرؔ کے اشعار کے درست معنی سمجھ کر شرمانے لگتے ہیں، ہم انہیں ترانہ سے دور کر دیتے ہیں۔  ہماری اپنی رائے میں زبان آسان ہی ہے، سوائے لفظ :کشور: کے، یہ عام لوگوں کو سمجھ آ ہی جانا چاہیئے کیونکہ باقی کے سب الفاظ فارسی کے وہی الفاظ ہیں جو اردو کا بھی حصہ ہیں۔ جس دؤر میں یہ لکھا گیا تب تو لوگوں کے لئیے آسان ہی ہو گا سمجھنا۔ ہمارے یہاں اردو میں جس قدر انگریزی گھُل رہی ہے، کُچھ بعید نہیں کہ ستر سال بعد لوگوں کو ہماری باتیں پڑھ کر بھی سمجھ نہ آئے کُچھ۔ البتہ نقصان یہ ہے کہ ترانہ پڑھ کر کسی کے جذبات اتنے نہیں ابھرتے۔ ہماری رائے میں ملک کی عظمت کے بیان کے ساتھ ساتھ اس کے لئیے کٹ مرنے کی دھمکی بھی اس کا حصہ ہونا چاہئے تھی۔ اردو میں ہوتا تو آسانی رہتی۔ اس وقت یہ حال ہے کہ ترانہ میں چار بار :شاد باد: لکھا ہے۔

مزے کی بات یہ بھی ہے کہ جالندھری صاحب اور چھاگلہ صاحب، دونوں ہی اس ترانہ کمیٹی کے ممبران تھے، جسے یہ کام سونپا گیا تھا کہ وہ پاکستان بھر سے شعرا اور موسیقاروں سے ان کا کام لیں اور پھر اس میں سے بہترین کا انتخاب کریں۔ لیکن صاحب اُس دؤر میں بہترین شعرا اور موسیقاروں کے باوجود، بھلا کسی اور کا کام کیسے کسی کو پسند آ سکتا تھا۔ چنانچہ کمیٹی ممبران نے اپنا کام ہی پسند فرمایا۔ اصولی طور پر ممران کو اس کام میں شرکت کی اجازت نہیں ہونی چاہئے تھی۔

آپ نے ہندوستان کے ترانہ سے متعلق معلومات بہم پہنچائی ہیں۔ خیال تو ہمارا یہی ہے کہ اسے بھی ہندوستان کی قومی زبان میں ہونا چاہئے تھا، لیکن چونکہ رابندر ناتھ ٹیگور کے مقام سے بھی ہم واقف ہیں، اور آپ نے بھی فرمایا ہے کہ بنگالی میں آسان بھی ہے اور عام فہم بھی تو پھر ایسا ہی درست۔ ہمارے علم کے مطابق بنگلہ دیش کا ترانہ بھی رابندر ناتھ ٹیگور کا ہی ہے اور اس کی دھُن بھی ان کی اپنی ہی بنائی ہوئی۔

خیر صاحب، پاکستان کا ترانہ کسی بحر پر پورا اترے یا نہ اترے۔ سمجھ آئے نہ آئے۔ جذبات ابھارے، نہ ابھارے۔ ترانہ تو اب ہمارا یہی ہے۔ چونکہ ہمارے وطن کا ترانہ ہے سو اس کا احترام ہم پر واجب بھی ہے اور احسن بھی۔ :)


دُعا گو


گنگناتی رهے گی انھیں تو سدا
اتنے نغمے تِرے نام کر جائیں گے

غیرحاضر سرور عالم راز

  • Muntazim-o-Mudeer
  • Saaheb-e-adab
  • ******
  • تحریریں: 6238
  • جنس: مرد
    • Kalam-e-Sarwar
جواب: ماہرینِ عروض سے گزارش ہے اپنی آرا سے نوازیے
« Reply #6 بروز: ستمبر 11, 2017, 01:20:27 شام »

اقتباس

عزیز مکرم خیال صاحب: سلام مسنون
جواب خط کے لئے شکریہ۔ ڈاکٹر جمال الدین جمال کی کتاب تفہیم العروض میں فاعلان زحاف موجود ہے۔ یہ کتاب پاکستان میں آسانی سے مل جاتی ہے۔ ضرور لیجئے۔ آپ کی محنت قابل داد ہے۔ اللہ مجھ کو بھی ایسی ہی توفیق دے۔ جناب وی بی جی سے عرض ہے کہ میرے علم کے مطابق پاکستانی قومی ترانے کی دھن انگلینڈ کے ایک موسیقار کی بنائی ہوئی ہے ورنہ بر صغیر میں انگریزی دھنیں بنانے والے کہاں ہیں؟ دوسری بات یہ کہ سارے ترانے میں ایک لفظ "کا" کے علاوہ ہر لفظ ٹھیٹ فارسی کا ہے۔ عام آدمی یہ ترانہ پھر کس طرح سمجھے اور یاد کرے؟ تیسرے یہ کہ ارباب حل و عقد نے علام اقبال کی کسی نظم سے کوئی مناسب ٹکڑا کیوں نہیں اخذ کر لیا جو یہ عجیب وغریب چیز ایجاد کی ہے۔ اب تک مجھ کو ایک بھی پاکستانی ایسا نہیں ملا جس کو ترانہ یاد ہو اور وہ اس کو سنا سکتا ہو۔ ہندوستانی اس معاملہ میں بہت عقل مند نکلے کہ انھوں نے رابندر ناتھ ٹیگور کی ایک مشہور بنگالی نظم اختیار کی جس کی دھن بھی ٹیگور نے بنائی تھی۔ ترانہ اور دھن اس قدر آسان ہیں کہ مجھ کو آج تک یاد ہیں جب کہ آزادی کے وقت میں بارہ سال کا تھا اور اسکول میں ہر صبح گانا اسمبلی میں لڑکوں کو گانا پڑتا تھا۔ کیا عجیب وقت تھا وہ بھی۔

سرورعالم راز

محترم جناب سرور عالم راز سرورؔ صاحب! السلام علیکم

صاحب آپ چونکہ اس وقت کے زیادہ قریب رہے ہیں سو آپ کی معلومات پر بھروسہ کیا جا سکتا ہے۔ کیا کیجے کہ ہمارے ہاں تاریخ کو بدل کر پیش کرنے کا رواج عروج پاتا جا رہا ہے۔ یہاں تک کہ ماضی میں فقط جھانک کر دیکھنے والے کو بھی غدار قرار دے دیا جاتا ہے۔ سو ہمارے قلم پر بھی خنجر کی نوک ہی رہتی ہے۔ پاکستان بننے کے بعد کے جو حالات رہے، ہم بھی پڑھتے ہی رہتے ہیں اور آپ مذید بہتر جانتے ہونگے۔ لیکن غیر جانبدارانہ معلومات کے لئیے ہم ترستے ہی رہتے ہیں۔ مثلاً کہا جاتا ہے کہ پاکستان کا پہلا ترانہ جو جناح صاحب نے منظور فرمایا وہ ایک ہندو جگن ناتھ آزاد صاحب نے لکھا تھا اور اسے ریڈیو پاکستان سے نشر بھی کیا جاتا تھا۔ جو یہاں موجود ہے۔

https://en.wikipedia.org/wiki/Tarana-e-Pakistan

لیکن کئی لوگ کہتے کہ ایسا نہیں تھا اور یہ باقاعدہ منظور کیا گیا ترانہ نہ تھا۔ اور نہ نشر کیا جاتا تھا۔ اب کس کی بات مانی جائے؟ ہو سکتا ہے آپ ہی کُچھ مدد فرما دیں۔

جہاں تک دھُن کی بات ہے تو وکی پیڈیا ہمیں چھاگلہ صاحب کے بارے میں بتاتا ہے کہ وہ مغرب سے موسیقی پڑھ کر آئے تھے اور مشرقی اور مغربی موسیقی کے امتزاج کے لحاظ سے پہچانے جاتے تھے۔ دھاگہ درجِ ذیل ہے۔

https://en.wikipedia.org/wiki/Ahmed_Ghulamali_Chagla

اگر تو وکی پیڈیا ٹھیک کہہ رہا ہے تو اُن کا یہ دھن بنا لینا ہمیں مشکوک نظر نہیں آ رہا۔ عین ممکن ہے آپ اس پر روشنی ڈالیں تو یہ گتھی بھی سلجھ سکے۔

شاعری فارسی میں ہے۔ ہم بچوں کو بارہ سے تیرہ سال تک مسلسل روز سکول میں پڑھواتے ہیں۔ لیکن اس کے بعد کسی کو یاد نہیں رہتا۔ جس عمر میں بچے  غالبؔ اور میرؔ کے اشعار کے درست معنی سمجھ کر شرمانے لگتے ہیں، ہم انہیں ترانہ سے دور کر دیتے ہیں۔  ہماری اپنی رائے میں زبان آسان ہی ہے، سوائے لفظ :کشور: کے، یہ عام لوگوں کو سمجھ آ ہی جانا چاہیئے کیونکہ باقی کے سب الفاظ فارسی کے وہی الفاظ ہیں جو اردو کا بھی حصہ ہیں۔ جس دؤر میں یہ لکھا گیا تب تو لوگوں کے لئیے آسان ہی ہو گا سمجھنا۔ ہمارے یہاں اردو میں جس قدر انگریزی گھُل رہی ہے، کُچھ بعید نہیں کہ ستر سال بعد لوگوں کو ہماری باتیں پڑھ کر بھی سمجھ نہ آئے کُچھ۔ البتہ نقصان یہ ہے کہ ترانہ پڑھ کر کسی کے جذبات اتنے نہیں ابھرتے۔ ہماری رائے میں ملک کی عظمت کے بیان کے ساتھ ساتھ اس کے لئیے کٹ مرنے کی دھمکی بھی اس کا حصہ ہونا چاہئے تھی۔ اردو میں ہوتا تو آسانی رہتی۔ اس وقت یہ حال ہے کہ ترانہ میں چار بار :شاد باد: لکھا ہے۔

مزے کی بات یہ بھی ہے کہ جالندھری صاحب اور چھاگلہ صاحب، دونوں ہی اس ترانہ کمیٹی کے ممبران تھے، جسے یہ کام سونپا گیا تھا کہ وہ پاکستان بھر سے شعرا اور موسیقاروں سے ان کا کام لیں اور پھر اس میں سے بہترین کا انتخاب کریں۔ لیکن صاحب اُس دؤر میں بہترین شعرا اور موسیقاروں کے باوجود، بھلا کسی اور کا کام کیسے کسی کو پسند آ سکتا تھا۔ چنانچہ کمیٹی ممبران نے اپنا کام ہی پسند فرمایا۔ اصولی طور پر ممران کو اس کام میں شرکت کی اجازت نہیں ہونی چاہئے تھی۔

آپ نے ہندوستان کے ترانہ سے متعلق معلومات بہم پہنچائی ہیں۔ خیال تو ہمارا یہی ہے کہ اسے بھی ہندوستان کی قومی زبان میں ہونا چاہئے تھا، لیکن چونکہ رابندر ناتھ ٹیگور کے مقام سے بھی ہم واقف ہیں، اور آپ نے بھی فرمایا ہے کہ بنگالی میں آسان بھی ہے اور عام فہم بھی تو پھر ایسا ہی درست۔ ہمارے علم کے مطابق بنگلہ دیش کا ترانہ بھی رابندر ناتھ ٹیگور کا ہی ہے اور اس کی دھُن بھی ان کی اپنی ہی بنائی ہوئی۔

خیر صاحب، پاکستان کا ترانہ کسی بحر پر پورا اترے یا نہ اترے۔ سمجھ آئے نہ آئے۔ جذبات ابھارے، نہ ابھارے۔ ترانہ تو اب ہمارا یہی ہے۔ چونکہ ہمارے وطن کا ترانہ ہے سو اس کا احترام ہم پر واجب بھی ہے اور احسن بھی۔ :)


دُعا گو



عزیز مکرم وی بی جی: سلام مسنون

میں چونکہ ہندوستان سے تعلق رکھتا ہوں اس لئے ایسے نازک اورجذباتی موضوعات پرکچھ کہتے یا لکھتے ہوئے ہچکچاتا ہوں۔ فورا مختلف فتاوی لگ جاتے ہیں۔ بہر کیف ہندوپاک کی آزادی کے وقت میں ساڑھے گیارہ سال کا تھا، پانچویں کلاس میں پڑھتا تھا اور اس وقت کے قیامت خیز ہنگامہ کا بہت تھوڑا حصہ دیکھ چکاہوں۔ ہندوتان کا قومی ترانہ اسکول میں بچوں سے ہر صبح اسمبلی میں گوایا جاتا تھا۔ میں کلاس کا اکیلا مسلمان بچہ تھا اور ترانہ گانے سے منکر تھا چنانچہ تقریبا روز ماسٹروں کی ڈانٹ سنتا تھا۔ ہندوستانی ترانہ اتنا آسان اوراپنی دھن میں اتنا سہانا ہے کہ اس بغاوت کے باوجود آج ستر سال بعد بھی زبانی یاد ہے اور میں صحیح دھن سے گا سکتا ہوں۔ ہندو قوم ایسے بہت سے معاملات میں بہت خرد مندد رہی اور آج بھی ہے۔ پاکستان کے قومی ترانہ کے بارے میں جو خبر اخباروں میں پڑھی اور اردگرد کے بزرگوں سے سنی وہ لکھتا ہوں۔ کسی کو ناگوار گزرے گی تو اسکو مٹا دوں گا۔
آزادی کے وقت اور اس کے کافی بعد تک چھاگلہ صاحب کا نام بھی کوئی نہیں جانتا تھا۔ یہ بعد میں مشہورہوا کہ انہوں نے انگریزی دھن ۱۹۴۹ میں بنائی اور اس کے دو تین سال بعد حفیظ جالنددھری نے اس ڈھانچہ پر الفاظ اس طرح فٹ کئے جیسے کوئی اناڑی میکانک ولایتی سائکل پر غلط پرزے فٹ کردیتا ہے۔ چنانچہ ترانہ نے ایسی مضحکہ خیز صورت اختیار کر لی کہ اب نہ کوئی اس کو یاد رکھ سکتا ہے اور نہ گا سکتا ہے۔ اس سوال کا جواب کسی نے نہیں دیا کہ اگر چھاگلہ صاحب ہندوستانی موسیقی کے ماہر تھے تو انہوں نے انگریزی دھن کیوں بنائی؟ مزید یہ کہ حفیظ صاحب نے دو تین سال ترانہ مرتب کرنے میں کیوں لگائے، اتنے انتظار کی کیا ضرورت تھی؟ قصہ یوں بیان کیا جاتا ہے کہ پاکستان کے ارباب حل وعقد نے ایک انگریز موسیقار کو دھن بنانے کا ٹھیکہ دیا اور اس نے انگریزی دھن بنا دی۔ اس کے بعد وہ دھن حفیظ صاحب کے سپرد کی گئی اورانھوں نے اس پر الفاظ کا گورکھ دھندا ٹانگ دیا۔ اللہ اللہ خیرسلا۔ رہ گئے جگن ناتھ آزاد تو وہ ترلوک چند محروم کے بیٹے تھے اور دونوں باپ بیٹے اردو کے نامور شاعر تھے۔ آزاد کا ترانہ لکھنا ہندوستان میں ایک من گھڑت افسانہ کہا جاتا ہے۔ خود آزاد نے ایسا کہیں تحریری دعوہ کیا ہے (تقریر کا اعتبار نہیں کیونکہ ہم لوگ ایسی افواہ بنانے میں ماہر ہیں) تو اس کا مجھ کو کوئی علم نہیں ہے۔ پاکستان نیا اور مناسب ترانہ جب چاہے بنا سکتا ہے۔ مجھ کو اکثر حیرت ہوتی ہے کہ ایسا کیوں نہیں کیا جاتا۔ لیکن جب وہاں کی قیادت اور سیاست کی خستہ حالی دیکھتا ہوں تو حیرت کے بجائے افسوس اور عبرت ہوتی ہے۔
بنگلہ دیش کا ترانہ بھی رابندرناتھ ٹیگور کا ہی لکھا ہوا ہے۔ دھن بھی انہیں کی بنائی ہوئی ہے۔
باقی رہ گیا راوی تو وہ میرے پاس بہت ڈرا ڈرا بیٹھا ہوا ہوا ہے۔ خیا خیر کرے!

سرورعالم راز

]



 

Copyright © اُردو انجمن