اُردو انجمن

 


مصنف موضوع: چل چھوڑ کاہے روتا ہے ، بات کرتا ہے  (پڑھا گیا 82 بار)

0 اراکین اور 1 مہمان یہ موضوع دیکھ رہے ہیں

غیرحاضر Ismaa'eel Aijaaz

  • Saaheb-e-adab
  • *****
  • تحریریں: 3214
چل چھوڑ کاہے روتا ہے ، بات کرتا ہے
« بروز: ستمبر 24, 2017, 10:07:22 شام »

قارئین کرام آداب عرض ہیں ، 17 ستمبر کو لکھا کلام کچھ الگ اسلوب میں آپ کی نذر ، اپنی آرا سے نوازیے ، شکریہ
عرض کیا ہے


۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چل چھوڑ کاہے روتا ہے ، بات کرتا ہے
مشکل میں آپ پڑتا ہے ، بات کرتا ہے

کہتا ہے تیرے بن نہیں جی سکوں گا میں
میرے بغیر جیتا ہے ، بات کرتا ہے

ہر روز زندگی کا رستہ نیا چُنے
کہتا ہے رب بدلتا ہے ، بات کرتا ہے

منمانیوں میں گزرے میری یہ زندگی
تقدیر پر بگڑتا ہے ، بات کرتا ہے

اپنے ضمیر کو تھپک کر سُلا دیا
اوروں کو دوش دیتا ہے ، بات کرتا ہے

تجھ کو خزاں رسیدہ موسم بھلا لگے
پر عندلیب روتا ہے ، بات کرتا ہے

نظریں جھکا کے تُو گزر میرے پاس سے
تیرا خیالؔ ہوتا ہے ، بات کرتا ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
توجہ کا طلبگار

اسماعیل اعجاز خیالؔ


محبتوں سے محبت سمیٹنے والا
خیال آپ کی محفل میں آچ پھر آیا

خیال

muHabbatoN se muHabbat sameTne waalaa
Khayaal aap kee maiHfil meN aaj phir aayaa

(Khayaal)

 

Copyright © اُردو انجمن