اُردو انجمن

 


مصنف موضوع: یادِ ایّام ، پرانی باتیں - مسلسل غزل  (پڑھا گیا 213 بار)

0 اراکین اور 1 مہمان یہ موضوع دیکھ رہے ہیں

غیرحاضر Dr. Ahmad Nadeem Rafi

  • Adab Aashnaa
  • *
  • تحریریں: 113
یادِ ایّام ، پرانی باتیں - مسلسل غزل
« بروز: اکتوبر 04, 2017, 07:59:23 شام »
محترم قارئین
ایک پرانی مسلسل غزل کچھ ردوبدل اور اضافے کے ساتھ پیش خدمت ہے- اس غزل پر بہت عرصۂ پہلے محترم سرور عالم راز سے بزریعہ ای-میل مشورہ لے چکا ہوں- مطلع میں تدبیلی انہی کی تجویز کردہ ہے-

                   غزل

            احمد ندیم رفیع

یادِ        ایّام    ،   پرانی    باتیں
 ہو    گئیں   ایک    کہانی   باتیں
 
 شام ،  دریا  کا   کنارہ  اور   تم ُ
 ساتھ    بہتا   ہوا   پانی  ،  باتیں

دُور   افق    پار   سمٹتا   سورج
سرمئی دھوپ  میں  دھانی  باتیں

 لمسِ   باہم   کی  چٹکتی   کلیاں
 رنگ و خوشبو کی روانی، باتیں

ایک  ٹھہری ہوئی ساعت کا خمار
 چاندنی ،  رات کی رانی ،   باتیں

 حُسنِ  پنہاں  سے  گریزاں  آنچل
کتنے   امکان  ،  معانی  ،   باتیں

لب  و  رخسار   پہ   گرتی   شبنم
 قطرے ،  قطرے  کی زبانی باتیں

زلفِ  برہم  سے  ہوا   کی  اَن بَن
طبعِ  نازک   کی   گرانی ،   باتیں

زیست گل ہاۓ سماعت صد رنگ   
تازہ ،   رنگین  ،  سہانی   باتیں 
 
گاہے  گاہے  تری  محتاط  ہنسی
ایک     دلچسپ   کہانی ،   باتیں

 وہی لہجہ ،  وہی موضوعِ  سخن   
 عا شقی،  حسن ، جوانی،  باتیں

طرزِ   گفتار  میں  ہلکا  سا غرور 
فلسفہ ،   بحث ،     سیانی   باتیں

لفظ   گنجینۂ   معنی   کا   طلسم
نئے   مفہوم  ،     پرانی   باتیں

آرزو ،   چاہِ زنخداں ،    خلوت
رُخِ   مہتاب  ،   نشانی ،  باتیں

       احمد ندیم رفیع

لفظ   گنجینۂ   معنی   کا   طلسم : مرزا اسد اللّہ خان غالب سے مستعار



غیرحاضر Ismaa'eel Aijaaz

  • Saaheb-e-adab
  • *****
  • تحریریں: 3214
جواب: یادِ ایّام ، پرانی باتیں - مسلسل غزل
« Reply #1 بروز: اکتوبر 04, 2017, 10:28:10 شام »
محترم قارئین
ایک پرانی مسلسل غزل کچھ ردوبدل اور اضافے کے ساتھ پیش خدمت ہے- اس غزل پر بہت عرصۂ پہلے محترم سرور عالم راز سے بزریعہ ای-میل مشورہ لے چکا ہوں- مطلع میں تدبیلی انہی کی تجویز کردہ ہے-

                   غزل

            احمد ندیم رفیع

یادِ        ایّام    ،   پرانی    باتیں
 ہو    گئیں   ایک    کہانی   باتیں
 
 شام ،  دریا  کا   کنارہ  اور   تم ُ
 ساتھ    بہتا   ہوا   پانی  ،  باتیں

دُور   افق    پار   سمٹتا   سورج
سرمئی دھوپ  میں  دھانی  باتیں

 لمسِ   باہم   کی  چٹکتی   کلیاں
 رنگ و خوشبو کی روانی، باتیں

ایک  ٹھہری ہوئی ساعت کا خمار
 چاندنی ،  رات کی رانی ،   باتیں

 حُسنِ  پنہاں  سے  گریزاں  آنچل
کتنے   امکان  ،  معانی  ،   باتیں

لب  و  رخسار   پہ   گرتی   شبنم
 قطرے ،  قطرے  کی زبانی باتیں

زلفِ  برہم  سے  ہوا   کی  اَن بَن
طبعِ  نازک   کی   گرانی ،   باتیں

زیست گل ہاۓ سماعت صد رنگ   
تازہ ،   رنگین  ،  سہانی   باتیں 
 
گاہے  گاہے  تری  محتاط  ہنسی
ایک     دلچسپ   کہانی ،   باتیں

 وہی لہجہ ،  وہی موضوعِ  سخن   
 عا شقی،  حسن ، جوانی،  باتیں

طرزِ   گفتار  میں  ہلکا  سا غرور 
فلسفہ ،   بحث ،     سیانی   باتیں

لفظ   گنجینۂ   معنی   کا   طلسم
نئے   مفہوم  ،     پرانی   باتیں

آرزو ،   چاہِ زنخداں ،    خلوت
رُخِ   مہتاب  ،   نشانی ،  باتیں

       احمد ندیم رفیع

لفظ   گنجینۂ   معنی   کا   طلسم : مرزا اسد اللّہ خان غالب سے مستعار


جناب محترم ڈاکٹر احمد رفیع ندیم صاحب
سدا سلامت رہیے ، ماشااللہ آپ نے ایک دلکش کلام کے ساتھ اردو انجمن کی زینت بڑھائی اللہ آپ کو شاد و آباد رکھے ،ڈھیروں داد میری جانب سے آپ کی خدمت میں پیش ہے

ایک مصرع دیکھ کر خیال آیا کہ اسے اگر ذرا سا اس صورت میں کہا جائے تو کیسا لگے

جیسے بہتا ہوا پانی ، باتیں

سوچا آپ کی نذر کروں اور آپ سے پوچھوں کہ ایسے کہنے سے زیادہ دلکشی پیدا ہوتی ہے یا پھر میرا یہ محض خیال ہے آپ نے جو کہا ظاہر ہے اس کے پسِ پشت بہت سی محرکات کارفرما ہیں جن سے گزر کر آپ کا یہ شعر تخلیق ہوا

آپ کو کتنا عجیب لگا ہوگا کہ میں نے اپنے دماغ سے اپنی سوچ و سمجھ کو آپ کی سوچ پر نہ صرف ترجیح دی بلکہ آپ سے اس مصرعے کو بدلنے کی فرمائش بھی کر دی حالاںکہ آپ کے مصرعے میں کوئی برائی نہیں ہے ہا اسلوب کی نہ عروض کی

خیر میرے لیے اللہ سے میری ہدایت کی دعا فرمائے
اللہ مجھے ہدایت عطا فرمائے

اپنا بہت خیال رکھیے اپنی دعاؤں میں یاد رکھیے

دعاگو
محبتوں سے محبت سمیٹنے والا
خیال آپ کی محفل میں آچ پھر آیا

خیال

muHabbatoN se muHabbat sameTne waalaa
Khayaal aap kee maiHfil meN aaj phir aayaa

(Khayaal)

غیرحاضر vb jee

  • Adab Fehm
  • ****
  • تحریریں: 1267
  • جنس: مرد
جواب: یادِ ایّام ، پرانی باتیں - مسلسل غزل
« Reply #2 بروز: نومبر 14, 2017, 04:58:25 صبح »
محترم قارئین
ایک پرانی مسلسل غزل کچھ ردوبدل اور اضافے کے ساتھ پیش خدمت ہے- اس غزل پر بہت عرصۂ پہلے محترم سرور عالم راز سے بزریعہ ای-میل مشورہ لے چکا ہوں- مطلع میں تدبیلی انہی کی تجویز کردہ ہے-

                   غزل

            احمد ندیم رفیع

یادِ        ایّام    ،   پرانی    باتیں
 ہو    گئیں   ایک    کہانی   باتیں
 
 شام ،  دریا  کا   کنارہ  اور   تم ُ
 ساتھ    بہتا   ہوا   پانی  ،  باتیں

دُور   افق    پار   سمٹتا   سورج
سرمئی دھوپ  میں  دھانی  باتیں

 لمسِ   باہم   کی  چٹکتی   کلیاں
 رنگ و خوشبو کی روانی، باتیں

ایک  ٹھہری ہوئی ساعت کا خمار
 چاندنی ،  رات کی رانی ،   باتیں

 حُسنِ  پنہاں  سے  گریزاں  آنچل
کتنے   امکان  ،  معانی  ،   باتیں

لب  و  رخسار   پہ   گرتی   شبنم
 قطرے ،  قطرے  کی زبانی باتیں

زلفِ  برہم  سے  ہوا   کی  اَن بَن
طبعِ  نازک   کی   گرانی ،   باتیں

زیست گل ہاۓ سماعت صد رنگ   
تازہ ،   رنگین  ،  سہانی   باتیں 
 
گاہے  گاہے  تری  محتاط  ہنسی
ایک     دلچسپ   کہانی ،   باتیں

 وہی لہجہ ،  وہی موضوعِ  سخن   
 عا شقی،  حسن ، جوانی،  باتیں

طرزِ   گفتار  میں  ہلکا  سا غرور 
فلسفہ ،   بحث ،     سیانی   باتیں

لفظ   گنجینۂ   معنی   کا   طلسم
نئے   مفہوم  ،     پرانی   باتیں

آرزو ،   چاہِ زنخداں ،    خلوت
رُخِ   مہتاب  ،   نشانی ،  باتیں

       احمد ندیم رفیع

لفظ   گنجینۂ   معنی   کا   طلسم : مرزا اسد اللّہ خان غالب سے مستعار



محترم جناب ڈکٹر احمد ندیم رفیع صاحب! السلام علیکم

واہ واہ واہ واہ ۔۔ صاحب کمال غزل ہے۔ ہمیں تو مدتوں بعد ہی ایسی کوئی غزل نظر آتی ہے کہ پڑھ کر دل عش عش کر اُٹھے۔ انتہائی خوبصورت الفاظ کا چناؤ۔ صاف شفاف اشعار شروع سے آخر تک قاری پر ایک سحر سا طاری رہتا ہے۔ ایک ایک شعر گویا صدیوں میں تراشا گیا ہو۔ دل کی گہرائیوں سے داد ہی داد جناب۔ بھرپور داد۔ غزل ، کلاسیکی انداز سے ہٹ کر ہے اور جدید تجریدیت کی ایک انتہائی عمدہ مثال ہے۔ کئی شعراء تجریدیت کی آڑ میں حدود سے باہر ہو جاتے ہیں اور معنی آفرینی کی طرف دھیان نہیں دے پاتے ہیں،  لیکن آپ نے ایک ایک شعر انتہائی معنی خیز بھی رکھا ہے۔ غزل ہمیں بُہت پسند آئی۔ واہ !

گُزارش ہے کہ اپنا کلام پیش کرتے رہا کیجے وگرنہ آج کل ایسی غزلیں کہاں ملتی ہیں پڑھنے کو۔

ایک بار پھر بھرپور داد کے ساتھ

دُعا گو


گنگناتی رهے گی انھیں تو سدا
اتنے نغمے تِرے نام کر جائیں گے

غیرحاضر Dr. Ahmad Nadeem Rafi

  • Adab Aashnaa
  • *
  • تحریریں: 113
جواب: یادِ ایّام ، پرانی باتیں - مسلسل غزل
« Reply #3 بروز: نومبر 18, 2017, 11:14:40 شام »
محترم وی بی جی صاحب

غزل کی پسندیدگی کا بہت بہت شکریہ- یقیناً یہ آپ کا حسن نظر  ہے - ایک کوشش کی ہے - آپ کی حوصلہ  افزائی سے  بہت تسلی ہوئی کہ یہ کوشش رائیگاں نہیں گئی -
مخلص
احمد ندیم رفیع

غیرحاضر Afroz Mehr

  • Adab Shinaas
  • **
  • تحریریں: 264
جواب: یادِ ایّام ، پرانی باتیں - مسلسل غزل
« Reply #4 بروز: نومبر 29, 2017, 02:30:55 شام »
محترم قارئین
ایک پرانی مسلسل غزل کچھ ردوبدل اور اضافے کے ساتھ پیش خدمت ہے- اس غزل پر بہت عرصۂ پہلے محترم سرور عالم راز سے بزریعہ ای-میل مشورہ لے چکا ہوں- مطلع میں تدبیلی انہی کی تجویز کردہ ہے-

                   غزل

            احمد ندیم رفیع

یادِ        ایّام    ،   پرانی    باتیں
 ہو    گئیں   ایک    کہانی   باتیں
 
 شام ،  دریا  کا   کنارہ  اور   تم ُ
 ساتھ    بہتا   ہوا   پانی  ،  باتیں

دُور   افق    پار   سمٹتا   سورج
سرمئی دھوپ  میں  دھانی  باتیں

 لمسِ   باہم   کی  چٹکتی   کلیاں
 رنگ و خوشبو کی روانی، باتیں

ایک  ٹھہری ہوئی ساعت کا خمار
 چاندنی ،  رات کی رانی ،   باتیں

 حُسنِ  پنہاں  سے  گریزاں  آنچل
کتنے   امکان  ،  معانی  ،   باتیں

لب  و  رخسار   پہ   گرتی   شبنم
 قطرے ،  قطرے  کی زبانی باتیں

زلفِ  برہم  سے  ہوا   کی  اَن بَن
طبعِ  نازک   کی   گرانی ،   باتیں

زیست گل ہاۓ سماعت صد رنگ   
تازہ ،   رنگین  ،  سہانی   باتیں 
 
گاہے  گاہے  تری  محتاط  ہنسی
ایک     دلچسپ   کہانی ،   باتیں

 وہی لہجہ ،  وہی موضوعِ  سخن   
 عا شقی،  حسن ، جوانی،  باتیں

طرزِ   گفتار  میں  ہلکا  سا غرور 
فلسفہ ،   بحث ،     سیانی   باتیں

لفظ   گنجینۂ   معنی   کا   طلسم
نئے   مفہوم  ،     پرانی   باتیں

آرزو ،   چاہِ زنخداں ،    خلوت
رُخِ   مہتاب  ،   نشانی ،  باتیں

       احمد ندیم رفیع

لفظ   گنجینۂ   معنی   کا   طلسم : مرزا اسد اللّہ خان غالب سے مستعار


مکرمی جناب ندیم صاحب: سلام علیکم
انجمن میں اتنی تاخیر سے حاضری کے لئے معذرت خواہ ہوں۔ گھرکی مصروفیات اجازت نہیں دیتی ہیں ۔
آپ کی یہ رواں دواں، جذباتی اور بہت دلکش غزل پڑھ کر دل بہت خوش ہوا۔ مدت کے بعد ایسی اچھی اور معنی خیز غزل دیکھی ہے۔ لوگ آج کل غزل کے پیچھے ترقی پسندی کا لٹھ لے کے پڑے ہوئے ہیں کہ وہ "روٹی، کپڑا اور مکان" قسم کے مضامین کیوں نہیں ادا کرتی ہے۔ اور اس بحث میں وہ دو باتیں بھول جاتے ہیں ۔ ایک تو یہ کہ غزل اپنی فطرت اورروایت میں جذباتی مضامین کو ہی زیادہ قبول کرتی ہے۔ دوسرے یہ کہ اردو کی دوسری اصناف سخن عوام کے مسائل اور دوسرے "جدید" خیالات کو نظم کرنے کے لئے موجود ہیں۔ یہی لوگ کبھی نظم کہنے کی کوشش نہیں کرتے کیونکہ اس میں محنت زیادہ ہے اور غزل والی بات نہیں ہے۔ آپ سے گزارش ہے کہ یوں ہی لکھتے رہئے۔ اللہ کرے زور قلم اور زیادہ۔
از راہ کرم اتنا اور بتا دیں کہ آپ اور مکرمی جناب سرورعالم راز صاحب کے درمیان مطلع پر کیا گفتگو ہوئی تھی تاکہ ہم لوگ آپ دو اساتذہ کے تبادلہءخیال سےمستفید ہوسکیں۔ شکریہ۔

مہر افروز


]
« آخری ترمیم: نومبر 29, 2017, 10:16:47 شام منجانب Afroz Mehr »

غیرحاضر Dr. Ahmad Nadeem Rafi

  • Adab Aashnaa
  • *
  • تحریریں: 113
جواب: یادِ ایّام ، پرانی باتیں - مسلسل غزل
« Reply #5 بروز: دسمبر 03, 2017, 10:02:05 صبح »
محترمہ مہر افروز صاحبہ

غزل پر آپ کی راۓ جان کر بے حد خوشی ہوئی - غزل کی پسندیدگی کا بے حد شکریہ-

شعبہ طب سے منسلک ہوں- یقین کیجئے ادھر بھی یہی حال ہے - بقول شاعر

فرصت  ہی نہیں ملتی
فرصت ہی کا رونا ہے

آپ نے آج کل کی غزل کے بارے میں جو راۓ دی ہے میں اس سے مکمل طور پر متفق ہوں-

میرا مطلع کچھ یوں تھا -

کتنی اچھی تھیں پرانی باتیں
ہو گئیں ایک کہانی باتیں
 
محترم سرور عالم راز صاحب نے مشورہ دیا کہ "کتنی اچھی تھیں" کو یاد ایام : سے بدل دیں- مجھے یہ تبدیلی بہت اچھی لگی اور میں نے اسے بدل دیا-

بعض اوقات صرف ایک یا دو لفظ بدل دینے سے مصرع میں جان پڑ جاتی ہے- غزل کے باقی اشعار کے تناظر میں یہ تبدیلی بڑی معنی خیز  تھی-

مخلص

ڈاکٹر احمد ندیم رفیع
   

 

غیرحاضر سہیل ملک

  • Naazim
  • Adab Fehm
  • *****
  • تحریریں: 1208
  • جنس: مرد
    • Medicine Pakistan
جواب: یادِ ایّام ، پرانی باتیں - مسلسل غزل
« Reply #6 بروز: دسمبر 03, 2017, 12:35:43 شام »

سلام ندیم صاحب


یادِ        ایّام    ،   پرانی    باتیں
 ہو    گئیں   ایک    کہانی   باتیں
 
بہت دلکش کلام!

وہ ناسٹیلجیا کو کیا کہتے ہیں؟

والسلام

ڈاکٹر سہیل ملک

http://www.medpk.com

 

Copyright © اُردو انجمن