اُردو انجمن

 


مصنف موضوع: تم مُجھے آئینہ سی لگتی ہو (وی بی جی)  (پڑھا گیا 675 بار)

0 اراکین اور 1 مہمان یہ موضوع دیکھ رہے ہیں

غیرحاضر vb jee

  • Adab Fehm
  • ****
  • تحریریں: 1273
  • جنس: مرد
تم مُجھے آئینہ سی لگتی ہو (وی بی جی)
« بروز: فروری 09, 2018, 09:52:29 صبح »

محترم اراکین انجمن! السلام علیکم

اتنے دن سے یہ گوشہ خالی پڑا ہے۔ ہم نے سوچا ہم ہی کوئی کوشش کریں۔ شعر اب ہم سے لکھے نہیں جاتے۔ سو جو بن پڑا سو لے آئے ہیں۔ ایک چھوٹا سا گیت

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


جب بھی تم مجھ سے بات کرتی ہو
تُم مُجھے آئینہ سی لگتی ہو

تُم بھی میری طرح اکیلی ہو
ساری دُنیا کے ساتھ ہوتے بھی
دور پچھم میں ساتھ سورج کے
ڈوب جاتی ہو رات ہوتے ہی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔روشنی تُم کو ڈھونڈتی ہے جب
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اپنے چہرے کو ڈھانپ لیتی ہو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تم مجھے آئینہ سی لگتی ہو

جب کبھی دیر تک رہیں تُم ساتھ
جب تمھاری کبھی جھلک پائی
دل پہ دھیرے سے چھا گئی جیسے
اک حسیں، پُر فریب تنہائی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ایک دوجے کا عکس ہیں دونوں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یا میں تم سا، یا تُم ہی مُجھ سی ہو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تُم مُجھے آئینہ سی لگتی ہو

کیوں تمہاری اداس آنکھوں میں
اپنے اشکوں کو دیکھتا ہوں میں
کِرچی کِرچی ہو تُم تو اندر سے
کتنا تُم کو سمیٹتا ہوں میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جیسے میرے وجود میں بکھری
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میرے جیسی ہی کوئی ہستی ہو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تُم مُجھے آئینہ سی لگتی ہو

جب بھی تم مجھ سے بات کرتی ہو
تُم مُجھے آئینہ سی لگتی ہو

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


دُعا گو


گنگناتی رهے گی انھیں تو سدا
اتنے نغمے تِرے نام کر جائیں گے

غیرحاضر سرور عالم راز

  • Muntazim-o-Mudeer
  • Saaheb-e-adab
  • ******
  • تحریریں: 6360
  • جنس: مرد
    • Kalam-e-Sarwar
جواب: تم مُجھے آئینہ سی لگتی ہو (وی بی جی)
« Reply #1 بروز: فروری 10, 2018, 08:41:28 شام »

محترم اراکین انجمن! السلام علیکم

اتنے دن سے یہ گوشہ خالی پڑا ہے۔ ہم نے سوچا ہم ہی کوئی کوشش کریں۔ شعر اب ہم سے لکھے نہیں جاتے۔ سو جو بن پڑا سو لے آئے ہیں۔ ایک چھوٹا سا گیت

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


جب بھی تم مجھ سے بات کرتی ہو
تُم مُجھے آئینہ سی لگتی ہو

تُم بھی میری طرح اکیلی ہو
ساری دُنیا کے ساتھ ہوتے بھی
دور پچھم میں ساتھ سورج کے
ڈوب جاتی ہو رات ہوتے ہی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔روشنی تُم کو ڈھونڈتی ہے جب
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اپنے چہرے کو ڈھانپ لیتی ہو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تم مجھے آئینہ سی لگتی ہو

جب کبھی دیر تک رہیں تُم ساتھ
جب تمھاری کبھی جھلک پائی
دل پہ دھیرے سے چھا گئی جیسے
اک حسیں، پُر فریب تنہائی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ایک دوجے کا عکس ہیں دونوں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یا میں تم سا، یا تُم ہی مُجھ سی ہو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تُم مُجھے آئینہ سی لگتی ہو

کیوں تمہاری اداس آنکھوں میں
اپنے اشکوں کو دیکھتا ہوں میں
کِرچی کِرچی ہو تُم تو اندر سے
کتنا تُم کو سمیٹتا ہوں میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جیسے میرے وجود میں بکھری
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میرے جیسی ہی کوئی ہستی ہو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تُم مُجھے آئینہ سی لگتی ہو

جب بھی تم مجھ سے بات کرتی ہو
تُم مُجھے آئینہ سی لگتی ہو

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دُعا گو


محبی وی بی جی: سلام مسنون
مدت ہوئی کہ آشتیءچشم وگوش ہے!
کفر ٹوٹا خدا خدا کرکے اور آپ یہاں اپنی نظم کے ساتھ تشریف لائے۔ زہے نصیب، خوشا مقدر! یا کہاوتوں کے رنگ میں کہوں کہ "بلی کے بھاگوں چھینکا ٹوٹا" البتہ یہ ضرور ڈر ہے کہ کچھ احباب "بھاگوں" اور "چھینکا" سن کر سر کھجانے لگیں گے کہ یہ کون سی زبان ہے۔ ہائے ہائے!کیسا وقت گزرگیا اور ہمارے ہاتھوں سے ہماری روایات اور تہذیب کی کیسی دولت چھوٹ گئی اور برابر چھوٹ رہی ہے۔ خیر اب یہ رونا کہاں تک روئیں۔ آئیے آپ کی نظم کو سراہتے ہیں۔
آپ ہمیشہ سے نظم کےدھنی رہے ہیں۔ کیسی کیسی معرکے کی نظمیں آپ نے لکھی ہیں اوراپنے قارئین کو سنائی ہیں۔ یہ نظم بھی اسی زنجیر کی ایک لڑی ہے۔ ہاں اگرجان کی امان پائوں تو عرض کروں گا کہ یہ آپ کی پچھلی نظموں سے کچھ ہیٹی رہ گئی ہے۔ وجہ کچھ بھی ہو ہم کو تو اس بات کی خوشی ہے کہ آپ پھر سے میدان سخن میں تال ٹھوک کر آ گئے ہیں۔ امید ہے اور دعا بھی کہ اب آپ قدم پیچھے نہیں ہٹائیں گے اور انجمن کو آباد رکھیں گے۔ آپ کی نظم ہمیشہ کی طرح جذباتی اور رومانی ہے۔ ایک بات سن لیں، پھر آپ کی بھی سن لی جائے گی۔
ایک شعر ہے :
وقت دو ہی زندگی  میں ہم  پہ  گزرے  ہیں کٹھن
اک ترے آنے سے پہلے، اک ترے جانے کے بعد
اور اس کی دوسری شکل یوں ہے :
وقت دو ہی زندگی میں ہم  پہ  گزرے  ہیں  کٹھن
اک ترے جانے سے پہلے، اک ترے آنے کے بعد
کسی ستم ظریف کا کہنا ہے (دروغ برگردن راوی!) کہ پہلا شعر شادی سے پہلے کا ہے اور دوسرا شادی کے بعد کا۔ اپ کی نظم پڑھ کر ایسے ہی خیالات ذہن میں آئے۔ تفصیل کی ضرورت نہیں۔ آپ ماشا اللہ خود ہی سمجھدار ہیں۔ راوی سن کر ہنس رہا ہے اور گڑگڑی بھول گیا ہے۔

سرورعالم راز




غیرحاضر vb jee

  • Adab Fehm
  • ****
  • تحریریں: 1273
  • جنس: مرد
جواب: تم مُجھے آئینہ سی لگتی ہو (وی بی جی)
« Reply #2 بروز: فروری 12, 2018, 08:20:34 صبح »

محترم اراکین انجمن! السلام علیکم

اتنے دن سے یہ گوشہ خالی پڑا ہے۔ ہم نے سوچا ہم ہی کوئی کوشش کریں۔ شعر اب ہم سے لکھے نہیں جاتے۔ سو جو بن پڑا سو لے آئے ہیں۔ ایک چھوٹا سا گیت

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


جب بھی تم مجھ سے بات کرتی ہو
تُم مُجھے آئینہ سی لگتی ہو

تُم بھی میری طرح اکیلی ہو
ساری دُنیا کے ساتھ ہوتے بھی
دور پچھم میں ساتھ سورج کے
ڈوب جاتی ہو رات ہوتے ہی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔روشنی تُم کو ڈھونڈتی ہے جب
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اپنے چہرے کو ڈھانپ لیتی ہو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تم مجھے آئینہ سی لگتی ہو

جب کبھی دیر تک رہیں تُم ساتھ
جب تمھاری کبھی جھلک پائی
دل پہ دھیرے سے چھا گئی جیسے
اک حسیں، پُر فریب تنہائی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ایک دوجے کا عکس ہیں دونوں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یا میں تم سا، یا تُم ہی مُجھ سی ہو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تُم مُجھے آئینہ سی لگتی ہو

کیوں تمہاری اداس آنکھوں میں
اپنے اشکوں کو دیکھتا ہوں میں
کِرچی کِرچی ہو تُم تو اندر سے
کتنا تُم کو سمیٹتا ہوں میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جیسے میرے وجود میں بکھری
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میرے جیسی ہی کوئی ہستی ہو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تُم مُجھے آئینہ سی لگتی ہو

جب بھی تم مجھ سے بات کرتی ہو
تُم مُجھے آئینہ سی لگتی ہو

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دُعا گو


محبی وی بی جی: سلام مسنون
مدت ہوئی کہ آشتیءچشم وگوش ہے!
کفر ٹوٹا خدا خدا کرکے اور آپ یہاں اپنی نظم کے ساتھ تشریف لائے۔ زہے نصیب، خوشا مقدر! یا کہاوتوں کے رنگ میں کہوں کہ "بلی کے بھاگوں چھینکا ٹوٹا" البتہ یہ ضرور ڈر ہے کہ کچھ احباب "بھاگوں" اور "چھینکا" سن کر سر کھجانے لگیں گے کہ یہ کون سی زبان ہے۔ ہائے ہائے!کیسا وقت گزرگیا اور ہمارے ہاتھوں سے ہماری روایات اور تہذیب کی کیسی دولت چھوٹ گئی اور برابر چھوٹ رہی ہے۔ خیر اب یہ رونا کہاں تک روئیں۔ آئیے آپ کی نظم کو سراہتے ہیں۔
آپ ہمیشہ سے نظم کےدھنی رہے ہیں۔ کیسی کیسی معرکے کی نظمیں آپ نے لکھی ہیں اوراپنے قارئین کو سنائی ہیں۔ یہ نظم بھی اسی زنجیر کی ایک لڑی ہے۔ ہاں اگرجان کی امان پائوں تو عرض کروں گا کہ یہ آپ کی پچھلی نظموں سے کچھ ہیٹی رہ گئی ہے۔ وجہ کچھ بھی ہو ہم کو تو اس بات کی خوشی ہے کہ آپ پھر سے میدان سخن میں تال ٹھوک کر آ گئے ہیں۔ امید ہے اور دعا بھی کہ اب آپ قدم پیچھے نہیں ہٹائیں گے اور انجمن کو آباد رکھیں گے۔ آپ کی نظم ہمیشہ کی طرح جذباتی اور رومانی ہے۔ ایک بات سن لیں، پھر آپ کی بھی سن لی جائے گی۔
ایک شعر ہے :
وقت دو ہی زندگی  میں ہم  پہ  گزرے  ہیں کٹھن
اک ترے آنے سے پہلے، اک ترے جانے کے بعد
اور اس کی دوسری شکل یوں ہے :
وقت دو ہی زندگی میں ہم  پہ  گزرے  ہیں  کٹھن
اک ترے جانے سے پہلے، اک ترے آنے کے بعد
کسی ستم ظریف کا کہنا ہے (دروغ برگردن راوی!) کہ پہلا شعر شادی سے پہلے کا ہے اور دوسرا شادی کے بعد کا۔ اپ کی نظم پڑھ کر ایسے ہی خیالات ذہن میں آئے۔ تفصیل کی ضرورت نہیں۔ آپ ماشا اللہ خود ہی سمجھدار ہیں۔ راوی سن کر ہنس رہا ہے اور گڑگڑی بھول گیا ہے۔

سرورعالم راز




محترم جناب سرور عالم راز سرورؔ صاحب! السلام علیکم

کیا ہی خوب بات کہی صاحب آپ نے۔ راوی کے ساتھ ہم بھی دیر تک ہنستے رہے۔ درست ہی کہا کسی نے۔ ویسے صاحب اس سے بڑا ظلم اور کیا ہو گا کہ خدا نخواستہ،  کسی قنوطی شاعر کی محبت اچانک کامیاب ہی ہو جائے۔ :)

آپ نے بجا فرمایا کہ نظم پائے کی نہیں ہے۔ اب صاحب شعر کہاں سے لائیں۔ اچھی نظم کے لئیے ہمیں جس جذبہ کی شدت چاہئے ہوتی ہے وہ تو اب رہی نہیں۔ ویسے یہ بھی ہلکی پھُلکی سی لکھنے کی کوشش کی تھی۔ جیسے فلمی گیت ہؤا کرتے تھے۔ کئی مشہور فلمی گیت اپنی دھن کی وجہ سے پائے کے معلوم ہوتے رہے ہیں۔ کئی بار ہم نے ان کی شاعری پر غور کرنے کی کوشش کی تو کئی اغلاط سے واسطہ پڑا۔ اس کاوش میں بھی قافیہ مزے کا نہیں اور نہ خیال میں کُچھ وسعت۔

خیر صاحب ہم جہاں بھی ہوتے ہیں یہاں آتے جاتے رہتے ہیں۔ اور لطف اندوز ہوتے رہتے ہیں۔ یہ اور بات ہے کہ کہنے کو کُچھ ہوتا نہیں سو خاموشی کو نیم رضامندی سمجھ لیتے ہیں۔ کوشش تو کرتے رہیں گے کہ کُچھ پیش کرنے کو بھی ہو۔ باقی جو حال سو حاضر۔

یہ کاوش آپ کی توجہ کے لائق نہیں تھی۔ لیکن پھر بھی آپ نے  اس پر حوصلہ افزائی فرمائی۔ ممنون ہیں۔


دُعا گو

گنگناتی رهے گی انھیں تو سدا
اتنے نغمے تِرے نام کر جائیں گے

 

Copyright © اُردو انجمن