اُردو انجمن

 


مصنف موضوع: پڑوسن پھر امید سے ہیں  (پڑھا گیا 79 بار)

0 اراکین اور 1 مہمان یہ موضوع دیکھ رہے ہیں

غیرحاضر Ismaa'eel Aijaaz

  • Saaheb-e-adab
  • *****
  • تحریریں: 3323
پڑوسن پھر امید سے ہیں
« بروز: جولائی 07, 2018, 10:08:08 شام »

رضیہ : اے شمسہ  سنا ہے ہماری پڑوسن پھر امید سے ہیں
شمسہ : ہاں بہن ان کے گھر میں تو ہر سال بہار زبردستی چلی آتی ہے  ، ارے دیکھو تو کیا آڑے ترچھے بچے ہر سال لے آتی ہے کوئی کالا کوئی نکٹا کوئی چپٹا
رضیہ زوردار قہقہ لگاتی ہے شمسہ تم بھی ناں ۔۔۔۔۔
اچھا یہ بتاؤ شمسہ ماشااللہ تم بھی تو ایک عرصے سے  بابل کا گھر چھوڑ  پی کے نگر جا بیٹھی ہو تمھارے آنگن میں ابھی تک کوئی پھول نہیں کھلا کوئی بہار نہیں آئی
شمسہ ناک بھووں چڑھاتے ہوتے رضیہ سے بولی نا بابا نا ہم سے بچے سنبھالے نہیں جاتے ہم تو ایسے ہی بھلے ، ویسے ڈاکٹروں کے ہاں کئی بار چکر لگائے وہ یہی کہتے ہیں کہ تم میں ماں بننے کی صلاحیت نہیں ہے
رضیہ ہاں بہن اپنا بھی یہی حال ہے ، لیکن سچ پوچھو تو بچے مجھے پسند نہیں ہیں ، میں نے ایک آدھ بار کوشش تو کی تھی مگر سرخرو نہ ہو سکی ڈاکٹروں نے مجھے بھی یہی کہا ہے کہ میں ماں نہیں بن سکتی
  بے چاری بانجھ عورتیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

توجہ کا طلبگار

اسماعیل اعجاز خیالؔ


محبتوں سے محبت سمیٹنے والا
خیال آپ کی محفل میں آچ پھر آیا

خیال

muHabbatoN se muHabbat sameTne waalaa
Khayaal aap kee maiHfil meN aaj phir aayaa

(Khayaal)

 

Copyright © اُردو انجمن