اُردو انجمن

 


مصنف موضوع: اسیر دشت بلا کا نہ ماجرا کہنا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عالمتاب تشنہ  (پڑھا گیا 1357 بار)

0 اراکین اور 1 مہمان یہ موضوع دیکھ رہے ہیں

غیرحاضر زرقا مفتی

  • Qalamkaar-e-Anjuman
  • Saaheb-e-adab
  • *****
  • تحریریں: 5003
    • my blog
اسیر دشت بلا کا نہ ماجرا کہنا
تمام پوچھنے والوں‌کو بس دعا کہنا

یہ کہنا رات گذرتی ہے اب بھی آنکھوں‌میں
تمہاری یاد کا قائم ہے سلسلہ کہنا

یہ کہنا مسند شاخ نمو پہ تھا جو کبھی
وہ پھول صورت خوشبو بکھر گیا کہنا

یہ کہنا ہم نے ہی طوفاں‌میں‌ڈال دی کشتی
قصور اپنا ہے دریا کو کیا برا کہنا

یہ کہنا ہو گئے ہم اتنے مصلحت اندیش
چلے جو لو تو اسے بھی خنک ہوا کہنا

یہ کہنا ہار نہ مانی کبھی اندھیروں‌سے
بجھے چراغ تو دل کو جلا لیا کہنا

یہ کہنا تم سے بچھڑ کر بکھر گیا تشنہٓ
کہ جیسے ہاتھ سے گر جائے آئینہ کہنا


(عالمتاب تشنہ)



 

Copyright © اُردو انجمن