اُردو انجمن

 


مصنف موضوع: Aasaan Arooz #10آسان عروض سبق۔ ١٠  (پڑھا گیا 6538 بار)

0 اراکین اور 1 مہمان یہ موضوع دیکھ رہے ہیں

غیرحاضر سرور عالم راز

  • Muntazim-o-Mudeer
  • Saaheb-e-adab
  • ******
  • تحریریں: 5881
  • جنس: مرد
    • Kalam-e-Sarwar
Aasaan Arooz #10آسان عروض سبق۔ ١٠
« بروز: نومبر 30, 2009, 11:48:14 شام »

yaaraan-e-Anjuman: aadaab!

"Aasaan A'rooz aur Shaa,i'ree kee Bunyaadee" BaateN kaa Sabaq #10 pesh kar rahaa hooN. aap kee raaYe aur Khayaalaat kaa intiz^aar rahe gaa. shukriyah.

yeh is maZ^moon kee pehlee qist^ hai. is ke faura" ba'd mazeed do (2) qist^eN aaj hee lagaa rahaa hooN. pooraa maZ^moon teenoN qist^oN se mukammal paRhaa jaa saktaa hai.

Sarwar A. Raz :Sarwar:

]
یاران انجمن: آداب
:آسان عروض اور شاعری کی بنیادی باتیں: کا سبق نمبر١٠ آج تین قسطوں کی شکل میں لگا رہا ہوں۔ ان سب کو ساتھ ہی چھاپ لیں۔ سب مل کر مضمون کو مکمل کرتی ہیں۔ آپ کی رائے کا انتظار رہے گا۔
سرورعالم راز سرور





غیرحاضر سرور عالم راز

  • Muntazim-o-Mudeer
  • Saaheb-e-adab
  • ******
  • تحریریں: 5881
  • جنس: مرد
    • Kalam-e-Sarwar
Re: Aasaan Arooz #10آسان عروض سبق۔ ١٠
« Reply #1 بروز: نومبر 30, 2009, 11:49:41 شام »
yeh is maZ^moon kee qist^ #2 hai!



غیرحاضر سرور عالم راز

  • Muntazim-o-Mudeer
  • Saaheb-e-adab
  • ******
  • تحریریں: 5881
  • جنس: مرد
    • Kalam-e-Sarwar
Re: Aasaan Arooz #10آسان عروض سبق۔ ١٠
« Reply #2 بروز: نومبر 30, 2009, 11:50:49 شام »
yeh is maZ^moon kee qist^#3 (aaKhiree) hai. ab maZ^moon mukammal hai!



غیرحاضر عامر عباس

  • Naazim
  • Saaheb-e-adab
  • *****
  • تحریریں: 2374
  • جنس: مرد
Re: Aasaan Arooz #10آسان عروض سبق۔ ١٠
« Reply #3 بروز: دسمبر 04, 2009, 10:50:22 صبح »
muHtaramee o mukarramee Sarwar saaHib, aadaab o tasleemaat.
yeh mazmoon pichhle tamaam kee taraH bahot mufeed rahaa, balkeh pichhloN kee nisbat ziyaadah mustafeed kar gayaa. is ko paRh kar kuchh baateiN zehn meiN aa`ee haiN, woh aap kee KHidmat meiN 'arz kartaa huN. us se aap hee andaazah lagaa leejiye keh yaa to sab samajh aa gayaa hai yaa kuchh bhee samajh naheeN aayaa.. :)

guzaarishaat yeh haiN.

1) aap ne "fa'oolun fa'oolun fa'oolun fa'oolun" ke saath "muCamman (8 ruknee)" likhaa hai, aur aisaa hee baaqee (ya'nee musaddas, mu'ashshar vaGHairahum) ke saath bhee hai. savaal yeh hai keh is misr'e meiN rukn "fa'oolun" to 4 baar hee hai, to phir ise muCamman (8 ruknee) kyuNkar kahaa? agar is kaa javaab yeh hai keh rukn she'r meiN (ya'nee donoN misr'oN meiN milaa kar) 8 baar aa`e gaa, to phir ise "misr'e kee baHr / misr'e kaa vazn" kee jagah "she'r kee baHr / she'r kaa vazn" nah kaheiN? neez yeh keh agar (shaaNzdahum hee ko qayaas kar leejiye to) she'r kee jagah band ho to 3, 4, 5 yaa 6 misr'oN ke band meiN yeh arkaan jaane kis gintee tak chale jaa`eiN... to phir un kee baHr ko kyaa kahaa jaa`e gaa? :)

2) SafHah #11 par she'r # 26 meiN "aaj nah" kee taqtee' "fa'ilun" se kee hai. yeh mas`alah usee se muta'alliq hai jis par ham isee bazm meiN pehle bhee tabaadilah e KHayaal kar chuke haiN. agar is taqtee' par raushnee Daaliye to voh usool is naacheez kee samajh meiN aa jaa`e gaa, jis ke teHt :Meer: ne "pattah pattah booTaa booTa ... jaane nah jaane ..." kee taqtee' kee thee.

3) she'r #27, 28, 30, 31 aur 33 kee baHr "fa'ool fa'lun fa'ool fa'lun ..." hai, jo yaqeenan saHeeH hee ho gee. lekin, agar maiN ne is vazn par ko`ee she'r kahaa hai to us kee taqtee' "mufaa'ilaatun mufaa'ilaatun ..." se kee hai. bazaahir donoN baHroN kaa vazn aik hee hai. to phir in donoN meiN farq kyaa hu`aa? isee savaal kee ek soorat yeh ho saktee hai keh agar ek hee vazn kee ek se ziyaadah baHoor (jaise is misaal meiN hai) hoN, to us she'r ko kis baHr kaa maanaa jaa`e gaa, jabkeh un kaa vazn aik hee hai?

4) she'r #32, 34, 35, 36, 37 aur 38 meiN tamaam hee ke donoN misr'oN ke darmiyaan meiN, aur ek se zaa`id arkaan meiN ziHaaf kee muKHtalif shakleiN isti'maal hu`ee haiN. darj e zel baHreiN KHaas taur se qaabil e deed haiN.

#35:
fa'lun; fa'lu; fa'oolun; fa'; fa'lun; fa'lun; fa'lun; fa'
fa'lu; fa'oolun; fa'lu; fa'al; fa'lun; fa'lun; fa'lun; fa'

#36:
fa'lun; fa'lun; fa'lu; fa'ool; fa'lun; fa'lun; fa'lu; fa'al
fa'lun; fa'lun; fa'lun; fa'; fa'lun; fa'lun; fa'lun; fa'

'aam taur se anjuman meiN jo tabsire maiN ne paRhe haiN (yaa KHud likhe haiN), un meiN aise har maqaam par "be_waznee" kaa shak zaahir kiyaa gayaa hai. yeh aik tashveesh_naak baat ma'loom hotee hai. neez, agar taqtee' ke is usool ko (ya'nee, misr'e ke darmiyaan meiN aur ek se zaa`id iKHtilaafee ziHaafaat) Theek se isti'maal kiyaa jaa`e to nah sirf asaatizah ke aise ash'aar, jin kee taqtee' meiN shubhaat meHsoos hote haiN, balkeh apne aur deegar aHbaab ke woh ash'aar, jin par KHafeef saa tazaad bhee be_waznee se ta'beer kiyaa jaataa hai, Theek se samajhne aur samjhaane meiN bahot madad mile gee.

mujhe eHsaas hai keh mere sawaalaat bahot bachkaanah aur be_tuke ma'loom hote haiN. maiN apnee naa_ahlee par sharmindah huN aur guzaarish kartaa huN keh agar munaasib aur nateejah_KHez ma'loom ho to hee in kaa javaab deejiye, varnah ko`ee harj naheeN hai.

ek baar phir aap ke mazmoon (balkeh tamaam mazaameen) kaa aur aap kee is 'arq_rezee aur jaan_farsaa mashaqqat kaa jo aap ham aise logoN ke liye kar rahe haiN, tah e dil se shukriyah adaa kartaa huN aur du'aa hai keh Allah aap ko is kaa ajr e kareem 'ataa kare.

taalib e du'aa
Aamir Abbas

غیرحاضر سرور عالم راز

  • Muntazim-o-Mudeer
  • Saaheb-e-adab
  • ******
  • تحریریں: 5881
  • جنس: مرد
    • Kalam-e-Sarwar
Re: Aasaan Arooz #10آسان عروض سبق۔ ١٠
« Reply #4 بروز: دسمبر 04, 2009, 07:57:36 شام »
a'zeezam Aamir SaaHeb: salaam-e-muHabbat!

aap kaa Khat^ dekh kar Khushee huyee. mujh ko is kaa i'lm hai keh ek aap hee in maZ^aameen ko diqqat-e-naz^ar aur shauq se dekhte haiN. kabhee kabhee maiN himmat haarne lagtaa hooN lekin phir yeh soch kar keh agar ek shaKhS bhee in maZ^aameen se mustafeed ho sake to bohat achhaa ho gaa, kaam jaaree rakhne par Khud ko raaZ^ee kar letaa hooN. waise yeh kaam gunaah-e-be-laZZat ke miSdaaq hai. ab a'rooZ^ ko kaun poochhtaa hai?

aap ke sawaalaat ko hargiz :bachkaanah: naheeN kahaa jaa saktaa hai. haaN yeh Z^aroor hai keh aap pichhlee paRhee huyee baatoN ko bhool jaate haiN. so yeh to koyee aisaa :jurm: naheeN! mujh se bhee akcar is kaa sudoor ho jaataa hai. lekin mere paas to u'mr kaa :bahaanah: hai! aap kaa :bahaanah: kyaa hai? :-)

aap se chand guzaarishaat haiN:

(1) a'rooZ^ kee koyee mustanad kitaab le leejiYe. mujh ko yaad aataa hai keh ek kitaab aap ke paas hai jis kaa naam is waqt bhool rahaa hooN. Dr. Jamaluddin Jamal kee :Tafheem-ul-A'rooZ^: hai to bohat mushkil lekin us se ziyaadah tafSeel mujh ko kaheeN aur naheeN milee.

(2) a'rooZ^ par baat karte huwe Sirf afaa,e'elee wazn par iktifaa nah kareN bal.k miSre' bhee diyaa kareN. micaal ke t^aur par Mir ne :pattah pattah: kee kyaa taqt^ee' kee thee woh bhee likheN taa.k baat Saaf ho sake.

(3) ham meN se akcar log (maiN Khud in meN shaamil hooN) baGhair munaasib ma'loomaat ke :aNgusht-numaayee: kar dete haiN. is ke bajaaYe pehle mas,alah Zehn meN Saaf ho aur Hasb-e-maqdoor us kee teHqeeq kar lee jaaYe to behtar ho gaa. maiN bhee is Z^imn meN aa,indah muHtaat^ rahooN gaa. Khairaat apne hee ghar se shuroo' honee chaahiYe!

ab koshish kartaa hooN keh aap ke sawaalaat kaa jawaab dooN. inshaa Allah jab yeh silsilah ek kitaab kee shakl meN murattab ho gaa to yahaaN ke sab swaalaat par gehree naz^ar Daalee jaaYe gee.

dekheN kyaa guzre hai qat^reh peh guhar hone tak!
=======================================================

1) ::aap ne "fa'oolun fa'oolun fa'oolun fa'oolun" ke saath "muCamman (8 ruknee)" likhaa hai, aur aisaa hee baaqee (ya'nee musaddas, mu'ashshar vaGHairahum) ke saath bhee hai. savaal yeh hai keh is misr'e meiN rukn "fa'oolun" to 4 baar hee hai, to phir ise muCamman (8 ruknee) kyuNkar kahaa? agar is kaa javaab yeh hai keh rukn she'r meiN (ya'nee donoN misr'oN meiN milaa kar) 8 baar aa`e gaa, to phir ise "misr'e kee baHr / misr'e kaa vazn" kee jagah "she'r kee baHr / she'r kaa vazn" nah kaheiN? neez yeh keh agar (shaaNzdahum hee ko qayaas kar leejiye to) she'r kee jagah band ho to 3, 4, 5 yaa 6 misr'oN ke band meiN yeh arkaan jaane kis gintee tak chale jaa`eiN... to phir un kee baHr ko kyaa kahaa jaa`e gaa?::

jin buzurgoN ne i'lm-e-a'rooZ^ eejaad aur murattab kiyaa aur us ke qawaaneen banaaYe unhoN ne beHr bayaan karne kaa t^areeqah bhee banaayaa thaa. beHr ke bayaan meN Sirf ek miSre' ke arkaan kee ta'daad naheeN likhee jaatee hai bal.k donoN ko milaa kar jo ta'daad bantee hai us se beHr bayaan kee jaatee hai. jaisaa keh aap ne Khud likhaa hai keh beHr-e-mutaqaarib kee tafe'el (fa-o'o-lun; fa-o'o-lun; fa-o'o-lun; fa-o'o-lun) meN chaar arkaan haiN lekin is ko :mucamman: (aaTh ruknee) likhaa jaataa hai kyoN.k she'r meN 8 arkaan haiN. yehee dastoor hai. kyoN hai? is liYe keh is par sab kaa ijmaa,a' hai! is ko English meN :convention: keh leN! aisaa hamaaree zindagee meN bhee pesh aataa hai. USA meN mustaqil qiyaam ke liYe jo :green card: diyaa jaataa hai us kaa raNg :blue: hai! is ko :green: kyoN kehte haiN? wallah-o-aa'lam!

jin beHroN meN arkaan a'am buHoor se dugne hoN wahaaN beHr ke bayaan ke ba'd :muZ^aa,i'f: (do gunee) likh dete haiN. micaal ke t^aur par agar kisee she'r meN kul milaa kar 16 arkaan haiN to us ko :mucamman, muZ^aa,i'f: kehte haiN. is t^araH us kaa bunyaadee waz^n bhee bayaan ho jaataa hai aur us kaa aSl wazn bhee.

in baatoN kaa Zikr kaheeN is se qabl ho chukaa hai. ab yaad-dehaanee ho gayee, jo achhee baat hai.
-------------------------------
2) ::SafHah #11 par she'r # 26 meiN "aaj nah" kee taqtee' "fa'ilun" se kee hai. yeh mas`alah usee se muta'alliq hai jis par ham isee bazm meiN pehle bhee tabaadilah e KHayaal kar chuke haiN. agar is taqtee' par raushnee Daaliye to voh usool is naacheez kee samajh meiN aa jaa`e gaa, jis ke teHt :Meer: ne "pattah pattah booTaa booTa ... jaane nah jaane ..." kee taqtee' kee thee.::

aap ne yeh naheeN likhaa keh Mir ne kyaa taqt^ee' kee thee. ab likh deN to sab ko ek baat ma'loom ho jaaYe gee. yeh uSool bayaan ho chukaa hai keh agar misre' ke beech meN kisee lafz^ kaa aaKhiree Harf saakin ho aur us ke faura" ba'd aane waale lafz^ kaa pehlaa Harf mutaHarrik ho to taqt^ee' meN us saakin ko bhee mutaHarrik kar diyaa jaataa hai. isee kaa ista'maal maZkoorah micaal meN kiyaa gayaa hai.
----------------------
3) ::she'r #27, 28, 30, 31 aur 33 kee baHr "fa'ool fa'lun fa'ool fa'lun ..." hai, jo yaqeenan saHeeH hee ho gee. lekin, agar maiN ne is vazn par ko`ee she'r kahaa hai to us kee taqtee' "mufaa'ilaatun mufaa'ilaatun ..." se kee hai. bazaahir donoN baHroN kaa vazn aik hee hai. to phir in donoN meiN farq kyaa hu`aa? isee savaal kee ek soorat yeh ho saktee hai keh agar ek hee vazn kee ek se ziyaadah baHoor (jaise is misaal meiN hai) hoN, to us she'r ko kis baHr kaa maanaa jaa`e gaa, jabkeh un kaa vazn aik hee hai?::

agar aisee guftgoo meN miSre' yaa she'r likh diYe jaaYeN to behtar hotaa hai. pehlee baat to yeh hai keh :fa'ool fa'lun fa'ool fa'lun: aur :mu-faa-i'-laa-tun; mu-faa-i'-laa-tun: ham-wazn naheeN haiN! aap Khud dekh leN! agar kuchh micaaleN dee hoteeN to behtar hotaa. doosree baat yeh keh aisaa mumkin hai (go bohat kam hotaa hai) keh ek she'r do muKhtalif buHoor meN taqt^ee' ho. is shakl meN donoN meN se kisee beHr se us ko mansoob kiyaa jaa saktaa hai! is meN kyaa qabaaHat hai? beHroN ke naam to Sirf pehchaan ke liYe haiN. micaal ke t^aur par :fa'-lun: (ba-sukoon-e-a'in) :fa-o'o-lun: kaa aclam ziHaaf hai aur :faa-i'-lun: kaa maKhboon ziHaaf bhee hai. agar kisee she'r kaa wazn yooN hai:

fa'-lun; fa'-lun; fa'-lun; fa'-lun

to aap us ko "beHr-e-mutaqaarib, mucamman, aclam" kaheN yaa "beHr-e-mutadaarik, mucamman, maKhboon", wazn wohee rehtaa hai aur koyee farq naheeN paRtaa. jaise ghar meN koyee aap ko Aamir miaaN keh le yaa Ammoo bhaayee, aap kee shaKhsiyat naheeN badaltee hai!
--------------------------------
4) ::she'r #32, 34, 35, 36, 37 aur 38 meiN tamaam hee ke donoN misr'oN ke darmiyaan meiN, aur ek se zaa`id arkaan meiN ziHaaf kee muKHtalif shakleiN isti'maal hu`ee haiN. darj e zel baHreiN KHaas taur se qaabil e deed haiN.

#35:
fa'lun; fa'lu; fa'oolun; fa'; fa'lun; fa'lun; fa'lun; fa'
fa'lu; fa'oolun; fa'lu; fa'al; fa'lun; fa'lun; fa'lun; fa'

#36:
fa'lun; fa'lun; fa'lu; fa'ool; fa'lun; fa'lun; fa'lu; fa'al
fa'lun; fa'lun; fa'lun; fa'; fa'lun; fa'lun; fa'lun; fa'

'aam taur se anjuman meiN jo tabsire maiN ne paRhe haiN (yaa KHud likhe haiN), un meiN aise har maqaam par "be_waznee" kaa shak zaahir kiyaa gayaa hai. yeh aik tashveesh_naak baat ma'loom hotee hai. neez, agar taqtee' ke is usool ko (ya'nee, misr'e ke darmiyaan meiN aur ek se zaa`id iKHtilaafee ziHaafaat) Theek se isti'maal kiyaa jaa`e to nah sirf asaatizah ke aise ash'aar, jin kee taqtee' meiN shubhaat meHsoos hote haiN, balkeh apne aur deegar aHbaab ke woh ash'aar, jin par KHafeef saa tazaad bhee be_waznee se ta'beer kiyaa jaataa hai, Theek se samajhne aur samjhaane meiN bahot madad mile gee.::

mujh ko yaad naheeN keh Anjuman meN yaa kaheeN aur is par kyaa baat huyee thee. yeh bhee mumkin hai keh us guftgoo kaa nateejah ham ne Ghalat^ nikaalaa ho. so us ko ek t^araf rakh kar ham nafs-e-maZ^moon ko dekhte haiN.

jis qism kee :be-uSoolee: kaa aap ne Zikr kiyaa hai us kee ba'Z^ beHroN meN ijaazat hai. wajh kaheeN likhee huyee naheeN milee. shaayad rawaanee aur adaa,igee par is kee bunyaad hai. Jamaluddin Jamal SaaHeb ne apnee kitaab meN beHr-e-mutaqaarib meN hee is kee muta,a'ddid micaaleN dee haiN jo lut^f se Khaalee naheeN haiN. lekin is kee koyee tekneekee wajh naheeN bayaan kee hai. meraa Zaatee Khayaal hai (aur maiN kisee cheez kee sanad naheeN hooN) keh ek baar miSre' kee bunyaadee beHr t^ai ho jaaYe to phir baat rawaanee, adaa,igee aur ziHaafaat ke SaHeeH ista'maal kee aa jaatee hai keh miSro'N ko kis t^araH toRaa jaaYe keh us beHr ke ziHaafaat ke HiSaar meN us kee taqt^ee' ho sake.
--------------------------
ummeed hai keh is waqt itnaa kaafee ho gaa. yaqeen hai keh aap ke Zehn meN aur sawaal bhee ubhre hoN ge. to yaar zindah SuHbat baaqee?

Sarwar A. Raz :Sarwar:
 



غیرحاضر سہیل ملک

  • Naazim
  • Adab Fehm
  • *****
  • تحریریں: 1129
  • جنس: مرد
    • Medicine Pakistan
Re: Aasaan Arooz #10آسان عروض سبق۔ ١٠
« Reply #5 بروز: دسمبر 06, 2009, 04:20:24 صبح »
Mohtaram sarwar Saahab salaam!

umeed hay keh aap khairiet say hoN gay.

aap ki mehnet aur urdu zubaan say lagan hi kaa nateejah hay keh ham aisay maalumaati mazameen say mustafeed hotay rehtay haiN. agarcheh kaee martaba istifaada haSil kernay ki raseed dainay maiN kanjusi ya susti bhi ker jaatay haiN.

yaqeenan aap kay tawasut say ham sab per urdu zubaan o bayaan say muta'aliq kaee ramuz aashkaar hotay rehtay haiN jin per aap kaa shukria adaa nah kerna bakheeli say kam nahiN.

aik sawal zehn maiN aya so wazahat darkaar hay(is ka yeh matlab nahiN keh baaqi sab kuch samajh aa gaya hay   :)  )

aur jaisa keh aap akCer kehtay haiN "maqSud is say koee shararat nahiN mujhay"   :)


aap nay fermaya 

"pehlee baat to yeh hai keh :fa'ool fa'lun fa'ool fa'lun: aur :mu-faa-i'-laa-tun; mu-faa-i'-laa-tun: ham-wazn naheeN haiN"

is ki yaqeenan wazeh taSweer aap kay zehn maiN ho gi jo keh mujh per apni kam ilmi kay baeC khul nahiN paa rehi. agar aap is baat ko smjhanay kay liay kuch tashreeh ker dijiay to azhad mamnun huN gaa. aur koee aisay miSray bhi agar tehreer ker daiN jo keh derj e baala maiN say kissi aik kay wazan kay mutaabiq to hoN laikin dusri Suret per nahiN to shaed samajhnay maiN mazeed aasaani ho jaey.

khosha cheeN

sohail malik


ڈاکٹر سہیل ملک

http://www.medpk.com

غیرحاضر سرور عالم راز

  • Muntazim-o-Mudeer
  • Saaheb-e-adab
  • ******
  • تحریریں: 5881
  • جنس: مرد
    • Kalam-e-Sarwar
Re: Aasaan Arooz #10آسان عروض سبق۔ ١٠
« Reply #6 بروز: دسمبر 06, 2009, 05:55:11 شام »
Mohtaram sarwar Saahab salaam!

umeed hay keh aap khairiet say hoN gay.

aap ki mehnet aur urdu zubaan say lagan hi kaa nateejah hay keh ham aisay maalumaati mazameen say mustafeed hotay rehtay haiN. agarcheh kaee martaba istifaada haSil kernay ki raseed dainay maiN kanjusi ya susti bhi ker jaatay haiN.

yaqeenan aap kay tawasut say ham sab per urdu zubaan o bayaan say muta'aliq kaee ramuz aashkaar hotay rehtay haiN jin per aap kaa shukria adaa nah kerna bakheeli say kam nahiN.

aik sawal zehn maiN aya so wazahat darkaar hay(is ka yeh matlab nahiN keh baaqi sab kuch samajh aa gaya hay   :)  )

aur jaisa keh aap akCer kehtay haiN "maqSud is say koee shararat nahiN mujhay"   :)


aap nay fermaya 

"pehlee baat to yeh hai keh :fa'ool fa'lun fa'ool fa'lun: aur :mu-faa-i'-laa-tun; mu-faa-i'-laa-tun: ham-wazn naheeN haiN"

is ki yaqeenan wazeh taSweer aap kay zehn maiN ho gi jo keh mujh per apni kam ilmi kay baeC khul nahiN paa rehi. agar aap is baat ko smjhanay kay liay kuch tashreeh ker dijiay to azhad mamnun huN gaa. aur koee aisay miSray bhi agar tehreer ker daiN jo keh derj e baala maiN say kissi aik kay wazan kay mutaabiq to hoN laikin dusri Suret per nahiN to shaed samajhnay maiN mazeed aasaani ho jaey.

khosha cheeN

sohail malik

مکرم بندہ سہیل صاحب: آداب و تسلیمات
آسان عروض، سبق۔ ١٠ کو دیکھنے اور میری ہمت افزائی کے لئے دلی شکریہ قبول کیجئے۔ یہ سلسلہ کافی دنوں سے چل رہا ہے اور ابھی کافی مدت تک مزید چلے گا۔ مقصد احباب کی رہنمائی بھی ہے اور اس معلومات کو جو اب مشکل سے ہی ملتی ہے اور یوں بھی جس کے خریدار بے حد کم رہ گئے ہیں اگلی نسل تک پہنچا دینا ہے۔ آپ جیسے چند ہم ذوق و ہم نفس ان کو دیکھ لیتے ہیں تو آئندہ محنت کی للک پھر جاگ اٹھتی ہے۔ جزاک اللہ۔
میں آپ کے سوال کا جواب اُردو میں دے رہا ہوں کیوں کہ عروض کی اصطلاحات اور تفصیل کو رومن میں صحیح طور سے ادا کرنا ہمیشہ ہی ممکن نہیں ہوتا ہے۔ کتابت کے کئی طریقے ہیں اور یہ ہو سکتا ہے کہ ہم ایک دوسرے کے طریقہ سے پوری طرح واقف نہ ہونے کی وجہ سے مطلب بھی پوری طرح نہ سمجھ سکیں۔ چونکہ آپ کا سوال اوپر رومن میں لکھا ہوا ہے اس لئے میں اُس کو یہاں دوبارہ نہیں لکھ رہا ہوں اور اپنی گفتگو کو صرف اپنے جواب تک محدود رکھ رہا ہوں۔
اجمالاً سوال یہ ہے کہ :فَعُول فَعلُن فَعُول فَعلُن آخر کیوں مُفاعِلاتُن مُفاعِلاتُن کا ہم وزن نہیں ہے:؟ اس کے جواب کی وضاحت کے لئے عروض کے دو اصولوں کا اعادہ ضروری ہے:
اول تو یہ کہ تقطیع میں مصرع کےکسی لفظ کے ساکن حرف کے مقابل افاعیل میں بھی ساکن حرف اور مصرع کے کسی لفظ کے متحرک حرف کے مقابل افاعیل میں بھی متحرک حرف ہونا چاہئے۔
دوسرا اصول یہ ہے کہ اگر مصرع کے بیچ میں کسی لفظ  کا آخری حرف ساکن ہے اور اس کے فوراً بعد آنے والے لفظ کا پہلا حرف متحرک ہے تو وہ ساکن حرف بھی متحرک کر دیا جاتا ہے۔
دوسرے اصول کو دیکھئے تو :فَعول فَعلُن، فَعول فَعلُن: مصرع کا وزن نہیں ہو سکتا ہے کیوں کہ فَعُول کا لام ساکن ہے اور مصرع کے بیچ میں ہے جب کہ فَعلُن کا فے متحرک ہےچنانچہ فَعول کا لام متحرک کرنا لازمی ہے۔ گویا اصل وزن یوں ہو گا :فَعُولُ فَعلُن، فَعُولُ فَعلُن:اور اس صورت میں یہ  :مُفاعِلاتُن: کا ہم وزن ہو جاتا ہے کیوں کہ جہاں فَعولُ کی لام متحرک ہے وہیں مُفاعِلاتُن کی عین بھی متحرک ہے۔ یعنی عروضی شرط اب پوری ہو گئی۔
چونکہ مُفاع لاتُن (بہ سکون عین) کوئی زحاف ہی نہیں ہے اس لئے اس کا ذکر بے معنی ہے۔
اب جب یہ ثابت ہو گیا تو ایک شعر اور اس کی تقطیع پیش خدمت ہے۔ یہ شعر پروین شاکر مرحومہ کا ہے۔
نہ مٹ سکے گا کوئی مرے شیشہ گر سے کہہ دو
جو فاصلہ پڑ گیا دلوں میں لکیر ایسا
نہ مٹ سَ:فَعُولُ:، کے گا: فَعلُن:، کُ ئی مِ :فَعُولُ:، رِے شی:فَعلُن:، شَ گرسِ :فَعُولُ:، کہہ دو: فِعلُن:
جو فاصِ:فَعولُ:، :لہ پڑ:فَعلُن:، گَ یا دِ :فَعُولُ:، لو مے:فَعلُن:، لَ کی رَ:فِعُولُ: اے سا :فِعلُن
امید ہے کہ اب التباس دور ہو گیا ہوگا
باقی راوی سب چین بولتا ہے
سرور عالم راز سرور
   



غیرحاضر عامر عباس

  • Naazim
  • Saaheb-e-adab
  • *****
  • تحریریں: 2374
  • جنس: مرد
Re: Aasaan Arooz #10آسان عروض سبق۔ ١٠
« Reply #7 بروز: دسمبر 09, 2009, 05:02:36 صبح »
muHtaram Sarwar saaHib aur Sohail bhaa`ee, salaam.
sochaa thaa keh vaqt milte hee mere naam Sarwar saaHib ke KHat kaa javaab likhuNgaa... magar reh gayaa.. ab dekhaa to lagaa keh ek GHalat_fehmee paidaa ho ga`ee hai, jis kee shuroo'aat mere KHat se hu`ee.

dar_asl, apne KHat meiN maiN "fa'oolu fa'lun" hee ko "mufaa'ilaatun" ke baraabar likh rahaa thaa... patah naheeN yeh "fa'ool.." kahaaN se aa gaya.. is kee daleel yeh hai keh mazmoon ke jis Hisseh kaa maiN ne Havaalah diyaa hai, vahaaN "fa'oolu.." hee isti'maal hu`aa hai. pas, saabit hu`aa keh mere KHat meiN kitaabat kee GHalatee se ek uljhan paidaa hu`ee, aur aap Hazraat ko yuNhee KHat likhnaa paRe... :)

is GHalatee par sharmindah huN. phir bhee.. aap ke KHatoot paRh kar mustafeed hu`aa, us ke liye shukriyah qubool keejiye.

muKHlis
Aamir Abbas

غیرحاضر mnmsidhu

  • Adab Aashnaa
  • *
  • تحریریں: 2
Re: Aasaan Arooz #10آسان عروض سبق۔ ١٠
« Reply #8 بروز: دسمبر 10, 2010, 02:40:43 صبح »
بہت ہی اعلی کاوش ہے۔ مبارکباوصول کریں اور اسی طرح علم بانٹتے رہیں۔ اللہ آپ کو آسانیاں عطا فرمائے

غیرحاضر Asadullah Khan

  • Adab Aashnaa
  • *
  • تحریریں: 8
جواب: Aasaan Arooz #10آسان عروض سبق۔ ١٠
« Reply #9 بروز: جنوری 29, 2016, 02:12:09 صبح »

 

آداب

میں یہاں پہلی مرتبہ کچھ لکھ رہا ہوں۔ میں عروض کی تلاش میں آیا تھا لیکن میرا جو مسلہ تھا وہ یہاں بھی حل نہیں ہوا۔ جناب نے لکھا کہ ایک شعر کے دو مصرعوں میں مختلف تفاعیل کا استعمال شاعر کے ذوقِ سلیم پر منحصر۔ مجھے اس ہی کی وضاحت چاہیے۔ اس ضمن میں میرے سوال یہ ہیں۔۔

کیا اس بارے میں کوئی اصول نہیں ہے ؟

کیا ایسا ہر بحر میں ہو سکتا؟

یا کیا ایک ہی بحر کے مختلف زحافات ایک ہی شعر یا غزل میں استعمال کیے جا سکتے ہیں؟ میں نے یہ شکل متقارب میں بہت دیکھی ہے۔ رہنمائی فرمایئے۔

 

اسد



غیرحاضر vb jee

  • Adab Fehm
  • ****
  • تحریریں: 1129
  • جنس: مرد
جواب: Aasaan Arooz #10آسان عروض سبق۔ ١٠
« Reply #10 بروز: جنوری 30, 2016, 05:59:32 صبح »

 

آداب

میں یہاں پہلی مرتبہ کچھ لکھ رہا ہوں۔ میں عروض کی تلاش میں آیا تھا لیکن میرا جو مسلہ تھا وہ یہاں بھی حل نہیں ہوا۔ جناب نے لکھا کہ ایک شعر کے دو مصرعوں میں مختلف تفاعیل کا استعمال شاعر کے ذوقِ سلیم پر منحصر۔ مجھے اس ہی کی وضاحت چاہیے۔ اس ضمن میں میرے سوال یہ ہیں۔۔

کیا اس بارے میں کوئی اصول نہیں ہے ؟

کیا ایسا ہر بحر میں ہو سکتا؟

یا کیا ایک ہی بحر کے مختلف زحافات ایک ہی شعر یا غزل میں استعمال کیے جا سکتے ہیں؟ میں نے یہ شکل متقارب میں بہت دیکھی ہے۔ رہنمائی فرمایئے۔

 

اسد



محترم جناب اسداللہ خان صاحب ۔۔۔ السلام علیکم

پہلے تو ہم آپ کو اس بزم میں خوش آمدید کہتے ہیں۔ اس بزم میں سب احباب مل کر کُچھ سیکھنے سکھانے کا ماحول قائم رکھتے ہیں۔ انشااللہ ہم سب کی کوشش ہو گی کہ آپ کو اپنے تمام سوالوں کے جواب یہاں سے مل سکیں۔ اگرچہ ہم سب ہی یہاں عروض کے شاگرد ہیں، لیکن جس قدر بھی علم ہے، ایک دوسرے کے ساتھ بانٹتے ہیں تو ایک دوسرے سے سیکھنے کا موقع بھی ملتا رہتا ہے۔ امید ہے کہ آپ سے بھی بُہت کُچھ سیکھنے کا موقع، ہمیں بھی ملے گا۔ آپ کا سوال اگرچہ محترم سرور عالم راز سرور صاحب سے ہے لیکن ہم اپنے علم کے لحاظ سے آپ کے سوال کا جواب دینے کی کوشش کرتے ہیں، امید ہے کہ ناراض نہ ہونگے اور درگزر سے کام لیں گے۔ مقصد یہی ہے کہ احباب ہماری بھی رہنمائی کر دیں گے۔

آپ نے حوالہ دے کر پوچھا ہے کہ  اس کے کوئی اصول ہیں یا نہیں۔ آپ نے جہاں سے حوالہ دیا ہے وہاں تھوڑا اوپر  سے دیکھیئے تو معلوم ہو جائے گا کہ شاعر کو کسی بحر کی تمام مزاحف شکلوں کو ایک جگہ جمع کرنے کی اجازت نہیں ہے، بلکہ کسی بھی ایک شکل جو مزاحف شکل بھی ہو سکتی ہے کے اندر موجود اجازتوں کے دائرہ میں رہتے ہوئے ہی ایسا کیا جا سکتا ہے۔

آپ نے پوچھا کہ، ہر بحر میں ایسا ہی ہے، تو جواب وہی ہے کہ ہر بحر میں موجود اجازتوں کے دائرہ میں رہتے ہوئے ہی شاعر کو اجازت ہے۔ کسی بھی بحر کی مزاحف شکلیں تو بُہت ہو سکتی ہیں، ان تمام کو ایک جگہ اکٹھا نہیں کیا جا سکتا۔
اب ذوقِ سلیم کی طرف آتے ہیں۔  :)

اس ضمن میں ایک مثال دیتے ہیں ہم، اسی بحر سے جس کی بات ہو رہی ہے۔ جہاں تک ہمیں یاد پڑتا ہے، اسے متقارب اثرم کہا جاتا ہے۔ اس کی 16 رکنی شکل دیکھیئے

فعلن فعلن فعلن فعلن فعلن فعلن فعلن فعلن

اس بحر کی اجازتوں کی رُو سے، کسی بھی دو فعلن فعلن کو فَعلُ فعولن کیا جا سکتا ہے۔ ایسی صورت میں ہمارے پاس کافی شکلیں نکل آئیں گی جیسے

فعل فعولن فعلن فعلن فعلن فعلن فعلن فعلن
فعلن فعل فعولن فعلن فعلن فعلن فعل فعولن

شکلیں کافی ہوجائیں گی سو ان تمام صورتوں کو لکھنا دشوار کام ہے کیوں نہ صرف اتنا ہی یاد کر لیا جائے کہ کسی بھی دو :فعلن فعلن: کو :فعلُ فعولن: کیا جا سکتا ہے۔ اگر اس اصول کو نظر میں رکھ لیا جائے تو پھر بات شاعر کے ذوقِ سلیم پر ہی ہے کہ وہ کسی بھی :فعلن فعلن: کو :فعلُ فعولن: باندھے۔

آپ کی بات بجا ہے کہ متقارب میں ایسا بُہت نظر آتا ہے۔ اگرچہ ڈاکٹر جمال الدین جمال صاحب نے اپنی کتاب :تفہمِ سُخن: میں اس بحر میں موجود کافی پابندیاں بھی بیان کی ہیں لیکن دراصل ہماری زبان کے لحاظ سے شعرا نے اس میں خود بھی کافی چیزیں اپنے لئیے حلال کر لی ہیں۔ اوپر جو ہم نے اصول بیان کیا ہے کہ کسی بھی :فعلن فعلن: کو :فعلُ فعولن: کرنے کی اجازت ہے، اسی کو ہمارے ہاں عام طور پر شعرا استعمال کر رہے ہیں، لیکن اصل علم عروض کے لحاظ سے (بحوالہ تفہیمِ سُخن) صرف انہی :فعلن فعلن: کو فعل فعولن کیا جائے گا جن کے آگے یا پیچھے دو بار :فعلن فعلن: لازمی ہو گا۔ دوسرے الفاظ میں کہیں بھی :فعل فعولن: دو بار اکٹھا نہیں آ سکتا۔ خیر یہ بات لمبی بھی ہو جائے گی اور شاید بلا مقصد بھی، سو واپس آتے ہیں۔

محترم سرور عالم راز سرور صاحب نے :کُچھ بحور: کی بات کی ہے سو اس کی ایک اور مثال بھی دیتے ہیں۔ اس بحر میں اردو میں بہت شاعری کی گئی ہے۔

فاعلاتن فعلاتن فعلاتن فعلن

اس بحر میں موجود اجازتوں کے لحاظ سے اگر تمام وہ صورتیں لکھیں جو ایک جگہ یکجا کی جا سکتی ہیں تو بُہت زیادہ ہو جائیں گی سو اصول کو دیکھ لیتے ہیں۔

1. شروع میں موجود فاعلاتن کو فَعِلاتن باندھا جا سکتا ہے
2. آخری فعلن کو فَعِلُن بھی باندھا جا سکتا ہے
3. آخری رکن کے آخر میں ایک ساکن حرف کے اضافہ کی اجازت بھی ہے یعنی فعلان بھی باندھا جا سکتا ہے
4. آخری رکن اگر :فَعِلُن: ہے تو ایک حرف کے اضافہ کے ساتھ فَعِلان بھی باندھا جا سکتا ہے۔
5. حشوین میں موجود دونوں :فعلاتن فعلاتن: میں سے کسی بھی ایک کو :مفعولن: بھی باندھا جا سکتا ہے۔
6. اوپر دئیے گئے اصولوں میں  سے کوئی بھی ایک دو تین چار پانچ یا سب ایک ساتھ بھی  استعمال کئیے جا سکتے ہیں۔

ان اصولوں کے پیش نظر کئی صورتیں بن سکتی ہیں جنہیں ایک ہی غزل میں یکجا کیا جا سکتا ہے ۔۔ جیسے

فعلاتن فعلاتن فعلاتن فَعِلان
فاعلاتن مفعولن فعلاتن فعلن۔۔۔۔ وغیرہ

بحر کی ایک سالم شکل ہوتی ہے۔ اس پر کُچھ زحاف لگا کر اس بحر سے مزاحف شکلیں دریافت کی جاتی ہیں۔ ان تمام مزاحف شکلوں کو ایک جگہ اکٹھا کرنے کی اجازت نہیں ہے، بلکہ ہر مزاحف شکل کے اپنے کُچھ اصول ہوتے ہیں اور اس میں اتنا ہی ایک شاعر کو اختیار ہوتا ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔

ہم نے اپنے علم کے لحاظ سے جواب دینے کی کوشش کی ہے تاکہ اگر کہیں جزوی یا کُلی طور ہم غلطی پر ہیں تو آپ یا احباب ہماری بھی رہنمائی فرمائیں۔ ہمارے جواب دینے کی کوشش کو مطلق درست نہیں جانئیے گا، کیونکہ ہم خود بھی ابھی طفلِ مکتب ہی ہیں اور آپ احباب سے سیکھتے رہتے ہیں۔ اگر ہماری کوشش سے سوال کا جواب آپ کو نہیں مل سکا ہے تو پیشگی معذرت چاہیں گے اور درخواست کریں گے کہ ہمیں دوبارہ خدمت کا موقع دیا جائے۔ امید ہے کہ آپ یہیں ہیں تو اب بات بھی ہوتی رہے گی اور بُہت کُچھ سیکھنے کو بھی ملے گا۔

دُعا گو

گنگناتی رهے گی انھیں تو سدا
اتنے نغمے تِرے نام کر جائیں گے

غیرحاضر سرور عالم راز

  • Muntazim-o-Mudeer
  • Saaheb-e-adab
  • ******
  • تحریریں: 5881
  • جنس: مرد
    • Kalam-e-Sarwar
جواب: Aasaan Arooz #10آسان عروض سبق۔ ١٠
« Reply #11 بروز: جنوری 30, 2016, 11:49:46 صبح »

 

آداب

میں یہاں پہلی مرتبہ کچھ لکھ رہا ہوں۔ میں عروض کی تلاش میں آیا تھا لیکن میرا جو مسلہ تھا وہ یہاں بھی حل نہیں ہوا۔ جناب نے لکھا کہ ایک شعر کے دو مصرعوں میں مختلف تفاعیل کا استعمال شاعر کے ذوقِ سلیم پر منحصر۔ مجھے اس ہی کی وضاحت چاہیے۔ اس ضمن میں میرے سوال یہ ہیں۔۔

کیا اس بارے میں کوئی اصول نہیں ہے ؟

کیا ایسا ہر بحر میں ہو سکتا؟

یا کیا ایک ہی بحر کے مختلف زحافات ایک ہی شعر یا غزل میں استعمال کیے جا سکتے ہیں؟ میں نے یہ شکل متقارب میں بہت دیکھی ہے۔ رہنمائی فرمایئے۔

 

اسد



محترم جناب اسداللہ خان صاحب ۔۔۔ السلام علیکم

پہلے تو ہم آپ کو اس بزم میں خوش آمدید کہتے ہیں۔ اس بزم میں سب احباب مل کر کُچھ سیکھنے سکھانے کا ماحول قائم رکھتے ہیں۔ انشااللہ ہم سب کی کوشش ہو گی کہ آپ کو اپنے تمام سوالوں کے جواب یہاں سے مل سکیں۔ اگرچہ ہم سب ہی یہاں عروض کے شاگرد ہیں، لیکن جس قدر بھی علم ہے، ایک دوسرے کے ساتھ بانٹتے ہیں تو ایک دوسرے سے سیکھنے کا موقع بھی ملتا رہتا ہے۔ امید ہے کہ آپ سے بھی بُہت کُچھ سیکھنے کا موقع، ہمیں بھی ملے گا۔ آپ کا سوال اگرچہ محترم سرور عالم راز سرور صاحب سے ہے لیکن ہم اپنے علم کے لحاظ سے آپ کے سوال کا جواب دینے کی کوشش کرتے ہیں، امید ہے کہ ناراض نہ ہونگے اور درگزر سے کام لیں گے۔ مقصد یہی ہے کہ احباب ہماری بھی رہنمائی کر دیں گے۔

آپ نے حوالہ دے کر پوچھا ہے کہ  اس کے کوئی اصول ہیں یا نہیں۔ آپ نے جہاں سے حوالہ دیا ہے وہاں تھوڑا اوپر  سے دیکھیئے تو معلوم ہو جائے گا کہ شاعر کو کسی بحر کی تمام مزاحف شکلوں کو ایک جگہ جمع کرنے کی اجازت نہیں ہے، بلکہ کسی بھی ایک شکل جو مزاحف شکل بھی ہو سکتی ہے کے اندر موجود اجازتوں کے دائرہ میں رہتے ہوئے ہی ایسا کیا جا سکتا ہے۔

آپ نے پوچھا کہ، ہر بحر میں ایسا ہی ہے، تو جواب وہی ہے کہ ہر بحر میں موجود اجازتوں کے دائرہ میں رہتے ہوئے ہی شاعر کو اجازت ہے۔ کسی بھی بحر کی مزاحف شکلیں تو بُہت ہو سکتی ہیں، ان تمام کو ایک جگہ اکٹھا نہیں کیا جا سکتا۔
اب ذوقِ سلیم کی طرف آتے ہیں۔  :)

اس ضمن میں ایک مثال دیتے ہیں ہم، اسی بحر سے جس کی بات ہو رہی ہے۔ جہاں تک ہمیں یاد پڑتا ہے، اسے متقارب اثرم کہا جاتا ہے۔ اس کی 16 رکنی شکل دیکھیئے

فعلن فعلن فعلن فعلن فعلن فعلن فعلن فعلن

اس بحر کی اجازتوں کی رُو سے، کسی بھی دو فعلن فعلن کو فَعلُ فعولن کیا جا سکتا ہے۔ ایسی صورت میں ہمارے پاس کافی شکلیں نکل آئیں گی جیسے

فعل فعولن فعلن فعلن فعلن فعلن فعلن فعلن
فعلن فعل فعولن فعلن فعلن فعلن فعل فعولن

شکلیں کافی ہوجائیں گی سو ان تمام صورتوں کو لکھنا دشوار کام ہے کیوں نہ صرف اتنا ہی یاد کر لیا جائے کہ کسی بھی دو :فعلن فعلن: کو :فعلُ فعولن: کیا جا سکتا ہے۔ اگر اس اصول کو نظر میں رکھ لیا جائے تو پھر بات شاعر کے ذوقِ سلیم پر ہی ہے کہ وہ کسی بھی :فعلن فعلن: کو :فعلُ فعولن: باندھے۔

آپ کی بات بجا ہے کہ متقارب میں ایسا بُہت نظر آتا ہے۔ اگرچہ ڈاکٹر جمال الدین جمال صاحب نے اپنی کتاب :تفہمِ سُخن: میں اس بحر میں موجود کافی پابندیاں بھی بیان کی ہیں لیکن دراصل ہماری زبان کے لحاظ سے شعرا نے اس میں خود بھی کافی چیزیں اپنے لئیے حلال کر لی ہیں۔ اوپر جو ہم نے اصول بیان کیا ہے کہ کسی بھی :فعلن فعلن: کو :فعلُ فعولن: کرنے کی اجازت ہے، اسی کو ہمارے ہاں عام طور پر شعرا استعمال کر رہے ہیں، لیکن اصل علم عروض کے لحاظ سے (بحوالہ تفہیمِ سُخن) صرف انہی :فعلن فعلن: کو فعل فعولن کیا جائے گا جن کے آگے یا پیچھے دو بار :فعلن فعلن: لازمی ہو گا۔ دوسرے الفاظ میں کہیں بھی :فعل فعولن: دو بار اکٹھا نہیں آ سکتا۔ خیر یہ بات لمبی بھی ہو جائے گی اور شاید بلا مقصد بھی، سو واپس آتے ہیں۔

محترم سرور عالم راز سرور صاحب نے :کُچھ بحور: کی بات کی ہے سو اس کی ایک اور مثال بھی دیتے ہیں۔ اس بحر میں اردو میں بہت شاعری کی گئی ہے۔

فاعلاتن فعلاتن فعلاتن فعلن

اس بحر میں موجود اجازتوں کے لحاظ سے اگر تمام وہ صورتیں لکھیں جو ایک جگہ یکجا کی جا سکتی ہیں تو بُہت زیادہ ہو جائیں گی سو اصول کو دیکھ لیتے ہیں۔

1. شروع میں موجود فاعلاتن کو فَعِلاتن باندھا جا سکتا ہے
2. آخری فعلن کو فَعِلُن بھی باندھا جا سکتا ہے
3. آخری رکن کے آخر میں ایک ساکن حرف کے اضافہ کی اجازت بھی ہے یعنی فعلان بھی باندھا جا سکتا ہے
4. آخری رکن اگر :فَعِلُن: ہے تو ایک حرف کے اضافہ کے ساتھ فَعِلان بھی باندھا جا سکتا ہے۔
5. حشوین میں موجود دونوں :فعلاتن فعلاتن: میں سے کسی بھی ایک کو :مفعولن: بھی باندھا جا سکتا ہے۔
6. اوپر دئیے گئے اصولوں میں  سے کوئی بھی ایک دو تین چار پانچ یا سب ایک ساتھ بھی  استعمال کئیے جا سکتے ہیں۔

ان اصولوں کے پیش نظر کئی صورتیں بن سکتی ہیں جنہیں ایک ہی غزل میں یکجا کیا جا سکتا ہے ۔۔ جیسے

فعلاتن فعلاتن فعلاتن فَعِلان
فاعلاتن مفعولن فعلاتن فعلن۔۔۔۔ وغیرہ

بحر کی ایک سالم شکل ہوتی ہے۔ اس پر کُچھ زحاف لگا کر اس بحر سے مزاحف شکلیں دریافت کی جاتی ہیں۔ ان تمام مزاحف شکلوں کو ایک جگہ اکٹھا کرنے کی اجازت نہیں ہے، بلکہ ہر مزاحف شکل کے اپنے کُچھ اصول ہوتے ہیں اور اس میں اتنا ہی ایک شاعر کو اختیار ہوتا ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔

ہم نے اپنے علم کے لحاظ سے جواب دینے کی کوشش کی ہے تاکہ اگر کہیں جزوی یا کُلی طور ہم غلطی پر ہیں تو آپ یا احباب ہماری بھی رہنمائی فرمائیں۔ ہمارے جواب دینے کی کوشش کو مطلق درست نہیں جانئیے گا، کیونکہ ہم خود بھی ابھی طفلِ مکتب ہی ہیں اور آپ احباب سے سیکھتے رہتے ہیں۔ اگر ہماری کوشش سے سوال کا جواب آپ کو نہیں مل سکا ہے تو پیشگی معذرت چاہیں گے اور درخواست کریں گے کہ ہمیں دوبارہ خدمت کا موقع دیا جائے۔ امید ہے کہ آپ یہیں ہیں تو اب بات بھی ہوتی رہے گی اور بُہت کُچھ سیکھنے کو بھی ملے گا۔

دُعا گو



یاران اردو انجمن: تسلیمات
نادم ہوں کہ کچھ عرصے یہاں سےغائب رہا۔ تفصیل اس اجمال کی یہ ہے کہ کافی علیل ہوگیا تھا، اسپتال کا چکر لگاکر آیا ہوں۔ دل کی مرمت ہوئی ہے اور دل کا معاملہ یہ ہے کہ جب جب ڈاکٹر صاحبان اس سے "چھیڑ خانی" کرتے ہیں نقاہت بہت بڑھ جاتی ہے۔ خِیر یہ تو جملہ معترضہ تھا۔ زندگی کا یہی حال ہے۔ ویسے سب اللہ کا شکر ہے۔
میں ان سب دوستوں کا دلی شکرگزار ہوں جو یہاں آ کر ادب کی خدمت کر رہےہیں۔ اس سے قبل میں نے عرض کیا تھا کہ شاید یہ چوپال مارچ کے وسط تک بند کردی جائے۔ ابھی تک انتہائی تذبذب کی کیفیت میں ہوں کہ کروں تو کیا کروں۔ میری عمر اور صحت اجازت نہیں دیتی کہ زیادہ محنت کروں۔ بہر حال دیکھتے ہیں کہ فروری میں کیا پیش آتا ہے۔ عروض کا سلسلہ دیکھا اور نہایت مسرت سے دوچار ہوا۔ جزاکم اللہ خیرا۔
باقی راوی چین ہی چین بولتا ہے۔

سرور عالم راز





غیرحاضر Asadullah Khan

  • Adab Aashnaa
  • *
  • تحریریں: 8
جواب: Aasaan Arooz #10آسان عروض سبق۔ ١٠
« Reply #12 بروز: فروری 01, 2016, 04:56:49 صبح »

 

آداب

میں یہاں پہلی مرتبہ کچھ لکھ رہا ہوں۔ میں عروض کی تلاش میں آیا تھا لیکن میرا جو مسلہ تھا وہ یہاں بھی حل نہیں ہوا۔ جناب نے لکھا کہ ایک شعر کے دو مصرعوں میں مختلف تفاعیل کا استعمال شاعر کے ذوقِ سلیم پر منحصر۔ مجھے اس ہی کی وضاحت چاہیے۔ اس ضمن میں میرے سوال یہ ہیں۔۔

کیا اس بارے میں کوئی اصول نہیں ہے ؟

کیا ایسا ہر بحر میں ہو سکتا؟

یا کیا ایک ہی بحر کے مختلف زحافات ایک ہی شعر یا غزل میں استعمال کیے جا سکتے ہیں؟ میں نے یہ شکل متقارب میں بہت دیکھی ہے۔ رہنمائی فرمایئے۔

 

اسد



محترم جناب اسداللہ خان صاحب ۔۔۔ السلام علیکم

پہلے تو ہم آپ کو اس بزم میں خوش آمدید کہتے ہیں۔ اس بزم میں سب احباب مل کر کُچھ سیکھنے سکھانے کا ماحول قائم رکھتے ہیں۔ انشااللہ ہم سب کی کوشش ہو گی کہ آپ کو اپنے تمام سوالوں کے جواب یہاں سے مل سکیں۔ اگرچہ ہم سب ہی یہاں عروض کے شاگرد ہیں، لیکن جس قدر بھی علم ہے، ایک دوسرے کے ساتھ بانٹتے ہیں تو ایک دوسرے سے سیکھنے کا موقع بھی ملتا رہتا ہے۔ امید ہے کہ آپ سے بھی بُہت کُچھ سیکھنے کا موقع، ہمیں بھی ملے گا۔ آپ کا سوال اگرچہ محترم سرور عالم راز سرور صاحب سے ہے لیکن ہم اپنے علم کے لحاظ سے آپ کے سوال کا جواب دینے کی کوشش کرتے ہیں، امید ہے کہ ناراض نہ ہونگے اور درگزر سے کام لیں گے۔ مقصد یہی ہے کہ احباب ہماری بھی رہنمائی کر دیں گے۔

آپ نے حوالہ دے کر پوچھا ہے کہ  اس کے کوئی اصول ہیں یا نہیں۔ آپ نے جہاں سے حوالہ دیا ہے وہاں تھوڑا اوپر  سے دیکھیئے تو معلوم ہو جائے گا کہ شاعر کو کسی بحر کی تمام مزاحف شکلوں کو ایک جگہ جمع کرنے کی اجازت نہیں ہے، بلکہ کسی بھی ایک شکل جو مزاحف شکل بھی ہو سکتی ہے کے اندر موجود اجازتوں کے دائرہ میں رہتے ہوئے ہی ایسا کیا جا سکتا ہے۔

آپ نے پوچھا کہ، ہر بحر میں ایسا ہی ہے، تو جواب وہی ہے کہ ہر بحر میں موجود اجازتوں کے دائرہ میں رہتے ہوئے ہی شاعر کو اجازت ہے۔ کسی بھی بحر کی مزاحف شکلیں تو بُہت ہو سکتی ہیں، ان تمام کو ایک جگہ اکٹھا نہیں کیا جا سکتا۔
اب ذوقِ سلیم کی طرف آتے ہیں۔  :)

اس ضمن میں ایک مثال دیتے ہیں ہم، اسی بحر سے جس کی بات ہو رہی ہے۔ جہاں تک ہمیں یاد پڑتا ہے، اسے متقارب اثرم کہا جاتا ہے۔ اس کی 16 رکنی شکل دیکھیئے

فعلن فعلن فعلن فعلن فعلن فعلن فعلن فعلن

اس بحر کی اجازتوں کی رُو سے، کسی بھی دو فعلن فعلن کو فَعلُ فعولن کیا جا سکتا ہے۔ ایسی صورت میں ہمارے پاس کافی شکلیں نکل آئیں گی جیسے

فعل فعولن فعلن فعلن فعلن فعلن فعلن فعلن
فعلن فعل فعولن فعلن فعلن فعلن فعل فعولن

شکلیں کافی ہوجائیں گی سو ان تمام صورتوں کو لکھنا دشوار کام ہے کیوں نہ صرف اتنا ہی یاد کر لیا جائے کہ کسی بھی دو :فعلن فعلن: کو :فعلُ فعولن: کیا جا سکتا ہے۔ اگر اس اصول کو نظر میں رکھ لیا جائے تو پھر بات شاعر کے ذوقِ سلیم پر ہی ہے کہ وہ کسی بھی :فعلن فعلن: کو :فعلُ فعولن: باندھے۔

آپ کی بات بجا ہے کہ متقارب میں ایسا بُہت نظر آتا ہے۔ اگرچہ ڈاکٹر جمال الدین جمال صاحب نے اپنی کتاب :تفہمِ سُخن: میں اس بحر میں موجود کافی پابندیاں بھی بیان کی ہیں لیکن دراصل ہماری زبان کے لحاظ سے شعرا نے اس میں خود بھی کافی چیزیں اپنے لئیے حلال کر لی ہیں۔ اوپر جو ہم نے اصول بیان کیا ہے کہ کسی بھی :فعلن فعلن: کو :فعلُ فعولن: کرنے کی اجازت ہے، اسی کو ہمارے ہاں عام طور پر شعرا استعمال کر رہے ہیں، لیکن اصل علم عروض کے لحاظ سے (بحوالہ تفہیمِ سُخن) صرف انہی :فعلن فعلن: کو فعل فعولن کیا جائے گا جن کے آگے یا پیچھے دو بار :فعلن فعلن: لازمی ہو گا۔ دوسرے الفاظ میں کہیں بھی :فعل فعولن: دو بار اکٹھا نہیں آ سکتا۔ خیر یہ بات لمبی بھی ہو جائے گی اور شاید بلا مقصد بھی، سو واپس آتے ہیں۔

محترم سرور عالم راز سرور صاحب نے :کُچھ بحور: کی بات کی ہے سو اس کی ایک اور مثال بھی دیتے ہیں۔ اس بحر میں اردو میں بہت شاعری کی گئی ہے۔

فاعلاتن فعلاتن فعلاتن فعلن

اس بحر میں موجود اجازتوں کے لحاظ سے اگر تمام وہ صورتیں لکھیں جو ایک جگہ یکجا کی جا سکتی ہیں تو بُہت زیادہ ہو جائیں گی سو اصول کو دیکھ لیتے ہیں۔

1. شروع میں موجود فاعلاتن کو فَعِلاتن باندھا جا سکتا ہے
2. آخری فعلن کو فَعِلُن بھی باندھا جا سکتا ہے
3. آخری رکن کے آخر میں ایک ساکن حرف کے اضافہ کی اجازت بھی ہے یعنی فعلان بھی باندھا جا سکتا ہے
4. آخری رکن اگر :فَعِلُن: ہے تو ایک حرف کے اضافہ کے ساتھ فَعِلان بھی باندھا جا سکتا ہے۔
5. حشوین میں موجود دونوں :فعلاتن فعلاتن: میں سے کسی بھی ایک کو :مفعولن: بھی باندھا جا سکتا ہے۔
6. اوپر دئیے گئے اصولوں میں  سے کوئی بھی ایک دو تین چار پانچ یا سب ایک ساتھ بھی  استعمال کئیے جا سکتے ہیں۔

ان اصولوں کے پیش نظر کئی صورتیں بن سکتی ہیں جنہیں ایک ہی غزل میں یکجا کیا جا سکتا ہے ۔۔ جیسے

فعلاتن فعلاتن فعلاتن فَعِلان
فاعلاتن مفعولن فعلاتن فعلن۔۔۔۔ وغیرہ

بحر کی ایک سالم شکل ہوتی ہے۔ اس پر کُچھ زحاف لگا کر اس بحر سے مزاحف شکلیں دریافت کی جاتی ہیں۔ ان تمام مزاحف شکلوں کو ایک جگہ اکٹھا کرنے کی اجازت نہیں ہے، بلکہ ہر مزاحف شکل کے اپنے کُچھ اصول ہوتے ہیں اور اس میں اتنا ہی ایک شاعر کو اختیار ہوتا ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔

ہم نے اپنے علم کے لحاظ سے جواب دینے کی کوشش کی ہے تاکہ اگر کہیں جزوی یا کُلی طور ہم غلطی پر ہیں تو آپ یا احباب ہماری بھی رہنمائی فرمائیں۔ ہمارے جواب دینے کی کوشش کو مطلق درست نہیں جانئیے گا، کیونکہ ہم خود بھی ابھی طفلِ مکتب ہی ہیں اور آپ احباب سے سیکھتے رہتے ہیں۔ اگر ہماری کوشش سے سوال کا جواب آپ کو نہیں مل سکا ہے تو پیشگی معذرت چاہیں گے اور درخواست کریں گے کہ ہمیں دوبارہ خدمت کا موقع دیا جائے۔ امید ہے کہ آپ یہیں ہیں تو اب بات بھی ہوتی رہے گی اور بُہت کُچھ سیکھنے کو بھی ملے گا۔

دُعا گو


وعلیکم السلام۔

 

آپ کے فوری جواب سے بہت حوصلہ افزائی ہوئی جس کی مجھے اُمید نہیں تھی کیونکہ دو سال پہلے جب میں نے یہ بزم دریافت کی تھی تو یہ ایک اُجاڑ سے شاہی باغ کی سی تھی۔ یا یوں کہیے کہ "کھنڈر بتا رہے" تھے "کہ عمارت تھی شاندار"! میں نے خوشی اور اشتیاق کے عالم میں رُکنیت کی درخواست بھیجی لیکن شاید کوئی رکنیت کی منظوری دینے والا بھی نہیں تھا۔ میں یہاں آتا جاتا رہتا تھا اور ایک قدردان کی طرح یہاں مدفون ادبی خزانوں سے مستفید بھی ہوتا رہا۔ اب  کچھ دنوں سے لوگوں کو اِدھر آتا دیکھا تو دوبارہ کوشش کی اور پتہ چلا کہ رُکنیت مل چکی ہے۔ لیکن ابھی اس بات کی خوشی منائی بھی نہیں تھی تو دیکھا کہ اس برم کو ختم کرنے کی باتیں ہو رہی ہیں۔

 

جناب کے جوابی پیغام سے میری سمجھ میں یہ آیا ہے کہ زیرِبحث مسئلے کے لیے کوئی واضح اُصول نہیں ہے، کوئی کسوٹی نہیں ہے جس پرشاعر اپنے ذوقِ سلیم کو پرکھ سکے، بس چند اجازتیں یا رُخصتیں ہیں جن کے دائرے میں رہتے ہوئے ہی کچھ کیا جا سکتا ہے۔ اور شاید یہ اجازتیں اساتذہ کے کلام ہی سے اخذ کی گئ ہیں۔ جو ان کے باہر جا کر کچھ کرے وہ غلط ہی ہوگا چاہے وہ سننے میں کتنا ہی بھلا معلوم ہو۔ یہ بھی ہو سکتا ہے کہ جتنی ممکن شکلیں جو کانوں کو بھلی معلوم ہو سکتی ہوں ان سب کا احاطہ ان رُخصتوں یا اجازتوں میں‌ہو گیا ہو اور یہ بات مسلمہ ہو چکی ہو کہ ان سے باہر کسی آہنگ کا کانوں کو بھلا لگنا نا ممکن ہے۔ اگر میں غلط ہوں تو براہِ مہربانی نشاندہی کر دیجیے کہ میں اس اصول کو دماغ میں بٹھائے لے رہا ہوں۔

 

اس ہی سلسلے میں ایک سوال یہ بھی ہے کہ کوئی آہنگ جو کسی بھی بحر میں نہ ہو اور شاید سننے میں بھی کچھ خاص نہ لگتا ہو لیکن وزن میں ہو تو اُس کی کیا حیثیت ہو گی؟

 

اسد

 

غیرحاضر vb jee

  • Adab Fehm
  • ****
  • تحریریں: 1129
  • جنس: مرد
جواب: Aasaan Arooz #10آسان عروض سبق۔ ١٠
« Reply #13 بروز: فروری 01, 2016, 06:06:12 صبح »

 

آداب

میں یہاں پہلی مرتبہ کچھ لکھ رہا ہوں۔ میں عروض کی تلاش میں آیا تھا لیکن میرا جو مسلہ تھا وہ یہاں بھی حل نہیں ہوا۔ جناب نے لکھا کہ ایک شعر کے دو مصرعوں میں مختلف تفاعیل کا استعمال شاعر کے ذوقِ سلیم پر منحصر۔ مجھے اس ہی کی وضاحت چاہیے۔ اس ضمن میں میرے سوال یہ ہیں۔۔

کیا اس بارے میں کوئی اصول نہیں ہے ؟

کیا ایسا ہر بحر میں ہو سکتا؟

یا کیا ایک ہی بحر کے مختلف زحافات ایک ہی شعر یا غزل میں استعمال کیے جا سکتے ہیں؟ میں نے یہ شکل متقارب میں بہت دیکھی ہے۔ رہنمائی فرمایئے۔

 

اسد



محترم جناب اسداللہ خان صاحب ۔۔۔ السلام علیکم

پہلے تو ہم آپ کو اس بزم میں خوش آمدید کہتے ہیں۔ اس بزم میں سب احباب مل کر کُچھ سیکھنے سکھانے کا ماحول قائم رکھتے ہیں۔ انشااللہ ہم سب کی کوشش ہو گی کہ آپ کو اپنے تمام سوالوں کے جواب یہاں سے مل سکیں۔ اگرچہ ہم سب ہی یہاں عروض کے شاگرد ہیں، لیکن جس قدر بھی علم ہے، ایک دوسرے کے ساتھ بانٹتے ہیں تو ایک دوسرے سے سیکھنے کا موقع بھی ملتا رہتا ہے۔ امید ہے کہ آپ سے بھی بُہت کُچھ سیکھنے کا موقع، ہمیں بھی ملے گا۔ آپ کا سوال اگرچہ محترم سرور عالم راز سرور صاحب سے ہے لیکن ہم اپنے علم کے لحاظ سے آپ کے سوال کا جواب دینے کی کوشش کرتے ہیں، امید ہے کہ ناراض نہ ہونگے اور درگزر سے کام لیں گے۔ مقصد یہی ہے کہ احباب ہماری بھی رہنمائی کر دیں گے۔

آپ نے حوالہ دے کر پوچھا ہے کہ  اس کے کوئی اصول ہیں یا نہیں۔ آپ نے جہاں سے حوالہ دیا ہے وہاں تھوڑا اوپر  سے دیکھیئے تو معلوم ہو جائے گا کہ شاعر کو کسی بحر کی تمام مزاحف شکلوں کو ایک جگہ جمع کرنے کی اجازت نہیں ہے، بلکہ کسی بھی ایک شکل جو مزاحف شکل بھی ہو سکتی ہے کے اندر موجود اجازتوں کے دائرہ میں رہتے ہوئے ہی ایسا کیا جا سکتا ہے۔

آپ نے پوچھا کہ، ہر بحر میں ایسا ہی ہے، تو جواب وہی ہے کہ ہر بحر میں موجود اجازتوں کے دائرہ میں رہتے ہوئے ہی شاعر کو اجازت ہے۔ کسی بھی بحر کی مزاحف شکلیں تو بُہت ہو سکتی ہیں، ان تمام کو ایک جگہ اکٹھا نہیں کیا جا سکتا۔
اب ذوقِ سلیم کی طرف آتے ہیں۔  :)

اس ضمن میں ایک مثال دیتے ہیں ہم، اسی بحر سے جس کی بات ہو رہی ہے۔ جہاں تک ہمیں یاد پڑتا ہے، اسے متقارب اثرم کہا جاتا ہے۔ اس کی 16 رکنی شکل دیکھیئے

فعلن فعلن فعلن فعلن فعلن فعلن فعلن فعلن

اس بحر کی اجازتوں کی رُو سے، کسی بھی دو فعلن فعلن کو فَعلُ فعولن کیا جا سکتا ہے۔ ایسی صورت میں ہمارے پاس کافی شکلیں نکل آئیں گی جیسے

فعل فعولن فعلن فعلن فعلن فعلن فعلن فعلن
فعلن فعل فعولن فعلن فعلن فعلن فعل فعولن

شکلیں کافی ہوجائیں گی سو ان تمام صورتوں کو لکھنا دشوار کام ہے کیوں نہ صرف اتنا ہی یاد کر لیا جائے کہ کسی بھی دو :فعلن فعلن: کو :فعلُ فعولن: کیا جا سکتا ہے۔ اگر اس اصول کو نظر میں رکھ لیا جائے تو پھر بات شاعر کے ذوقِ سلیم پر ہی ہے کہ وہ کسی بھی :فعلن فعلن: کو :فعلُ فعولن: باندھے۔

آپ کی بات بجا ہے کہ متقارب میں ایسا بُہت نظر آتا ہے۔ اگرچہ ڈاکٹر جمال الدین جمال صاحب نے اپنی کتاب :تفہمِ سُخن: میں اس بحر میں موجود کافی پابندیاں بھی بیان کی ہیں لیکن دراصل ہماری زبان کے لحاظ سے شعرا نے اس میں خود بھی کافی چیزیں اپنے لئیے حلال کر لی ہیں۔ اوپر جو ہم نے اصول بیان کیا ہے کہ کسی بھی :فعلن فعلن: کو :فعلُ فعولن: کرنے کی اجازت ہے، اسی کو ہمارے ہاں عام طور پر شعرا استعمال کر رہے ہیں، لیکن اصل علم عروض کے لحاظ سے (بحوالہ تفہیمِ سُخن) صرف انہی :فعلن فعلن: کو فعل فعولن کیا جائے گا جن کے آگے یا پیچھے دو بار :فعلن فعلن: لازمی ہو گا۔ دوسرے الفاظ میں کہیں بھی :فعل فعولن: دو بار اکٹھا نہیں آ سکتا۔ خیر یہ بات لمبی بھی ہو جائے گی اور شاید بلا مقصد بھی، سو واپس آتے ہیں۔

محترم سرور عالم راز سرور صاحب نے :کُچھ بحور: کی بات کی ہے سو اس کی ایک اور مثال بھی دیتے ہیں۔ اس بحر میں اردو میں بہت شاعری کی گئی ہے۔

فاعلاتن فعلاتن فعلاتن فعلن

اس بحر میں موجود اجازتوں کے لحاظ سے اگر تمام وہ صورتیں لکھیں جو ایک جگہ یکجا کی جا سکتی ہیں تو بُہت زیادہ ہو جائیں گی سو اصول کو دیکھ لیتے ہیں۔

1. شروع میں موجود فاعلاتن کو فَعِلاتن باندھا جا سکتا ہے
2. آخری فعلن کو فَعِلُن بھی باندھا جا سکتا ہے
3. آخری رکن کے آخر میں ایک ساکن حرف کے اضافہ کی اجازت بھی ہے یعنی فعلان بھی باندھا جا سکتا ہے
4. آخری رکن اگر :فَعِلُن: ہے تو ایک حرف کے اضافہ کے ساتھ فَعِلان بھی باندھا جا سکتا ہے۔
5. حشوین میں موجود دونوں :فعلاتن فعلاتن: میں سے کسی بھی ایک کو :مفعولن: بھی باندھا جا سکتا ہے۔
6. اوپر دئیے گئے اصولوں میں  سے کوئی بھی ایک دو تین چار پانچ یا سب ایک ساتھ بھی  استعمال کئیے جا سکتے ہیں۔

ان اصولوں کے پیش نظر کئی صورتیں بن سکتی ہیں جنہیں ایک ہی غزل میں یکجا کیا جا سکتا ہے ۔۔ جیسے

فعلاتن فعلاتن فعلاتن فَعِلان
فاعلاتن مفعولن فعلاتن فعلن۔۔۔۔ وغیرہ

بحر کی ایک سالم شکل ہوتی ہے۔ اس پر کُچھ زحاف لگا کر اس بحر سے مزاحف شکلیں دریافت کی جاتی ہیں۔ ان تمام مزاحف شکلوں کو ایک جگہ اکٹھا کرنے کی اجازت نہیں ہے، بلکہ ہر مزاحف شکل کے اپنے کُچھ اصول ہوتے ہیں اور اس میں اتنا ہی ایک شاعر کو اختیار ہوتا ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔

ہم نے اپنے علم کے لحاظ سے جواب دینے کی کوشش کی ہے تاکہ اگر کہیں جزوی یا کُلی طور ہم غلطی پر ہیں تو آپ یا احباب ہماری بھی رہنمائی فرمائیں۔ ہمارے جواب دینے کی کوشش کو مطلق درست نہیں جانئیے گا، کیونکہ ہم خود بھی ابھی طفلِ مکتب ہی ہیں اور آپ احباب سے سیکھتے رہتے ہیں۔ اگر ہماری کوشش سے سوال کا جواب آپ کو نہیں مل سکا ہے تو پیشگی معذرت چاہیں گے اور درخواست کریں گے کہ ہمیں دوبارہ خدمت کا موقع دیا جائے۔ امید ہے کہ آپ یہیں ہیں تو اب بات بھی ہوتی رہے گی اور بُہت کُچھ سیکھنے کو بھی ملے گا۔

دُعا گو


وعلیکم السلام۔

 

آپ کے فوری جواب سے بہت حوصلہ افزائی ہوئی جس کی مجھے اُمید نہیں تھی کیونکہ دو سال پہلے جب میں نے یہ بزم دریافت کی تھی تو یہ ایک اُجاڑ سے شاہی باغ کی سی تھی۔ یا یوں کہیے کہ "کھنڈر بتا رہے" تھے "کہ عمارت تھی شاندار"! میں نے خوشی اور اشتیاق کے عالم میں رُکنیت کی درخواست بھیجی لیکن شاید کوئی رکنیت کی منظوری دینے والا بھی نہیں تھا۔ میں یہاں آتا جاتا رہتا تھا اور ایک قدردان کی طرح یہاں مدفون ادبی خزانوں سے مستفید بھی ہوتا رہا۔ اب  کچھ دنوں سے لوگوں کو اِدھر آتا دیکھا تو دوبارہ کوشش کی اور پتہ چلا کہ رُکنیت مل چکی ہے۔ لیکن ابھی اس بات کی خوشی منائی بھی نہیں تھی تو دیکھا کہ اس برم کو ختم کرنے کی باتیں ہو رہی ہیں۔

 

جناب کے جوابی پیغام سے میری سمجھ میں یہ آیا ہے کہ زیرِبحث مسئلے کے لیے کوئی واضح اُصول نہیں ہے، کوئی کسوٹی نہیں ہے جس پرشاعر اپنے ذوقِ سلیم کو پرکھ سکے، بس چند اجازتیں یا رُخصتیں ہیں جن کے دائرے میں رہتے ہوئے ہی کچھ کیا جا سکتا ہے۔ اور شاید یہ اجازتیں اساتذہ کے کلام ہی سے اخذ کی گئ ہیں۔ جو ان کے باہر جا کر کچھ کرے وہ غلط ہی ہوگا چاہے وہ سننے میں کتنا ہی بھلا معلوم ہو۔ یہ بھی ہو سکتا ہے کہ جتنی ممکن شکلیں جو کانوں کو بھلی معلوم ہو سکتی ہوں ان سب کا احاطہ ان رُخصتوں یا اجازتوں میں‌ہو گیا ہو اور یہ بات مسلمہ ہو چکی ہو کہ ان سے باہر کسی آہنگ کا کانوں کو بھلا لگنا نا ممکن ہے۔ اگر میں غلط ہوں تو براہِ مہربانی نشاندہی کر دیجیے کہ میں اس اصول کو دماغ میں بٹھائے لے رہا ہوں۔

 

اس ہی سلسلے میں ایک سوال یہ بھی ہے کہ کوئی آہنگ جو کسی بھی بحر میں نہ ہو اور شاید سننے میں بھی کچھ خاص نہ لگتا ہو لیکن وزن میں ہو تو اُس کی کیا حیثیت ہو گی؟

 

اسد


محترم جناب اسداللہ خان صاحب ! آداب

صاحب! ہم تو پشیمان تھے کہ جواب دینے میں کُچھ تاخیر ہو گئی۔ دراصل ہم نے جواب آدھا لکھا تھا کہ وہ جگہ چھوڑنی پڑ گئی، جہاں لکھ رہے تھے۔ پھر وقت ملتے ہی مکمل جواب ہمیں دوبارہ لکھنا پڑا۔ خیر، ہمارے لیئے خوشی کی بات ہے کہ آپ نے بھی جواب دینے میں دیر نہیں لگائی۔ شکریہ

یہ بزم دراصل آپ سے اور ہم سے ہی ہے۔ محترم سرور عالم راز سرور صاحب کی محنت سے یہاں کُچھ باذوق لوگ جمع ہو سکے ہیں، لیکن ظاہر ہے کہ اُن پر ہی منحصر ہے کہ کس قدر اس بزم کو سرگرم رکھتے ہیں۔ اگر یہاں موجود چند لوگ بھی خاموش ہو جائیں تو پیچھے کیا رہ جاتا ہے، آپ نے فرما ہی دیا ہے۔ واقعی، اب بزم بند ہونے کی ہی اطلاع ہے۔ امید تو ہے کہ کوئی نہ کوئی بزم کو مزید چلانے کی سعی کرے گا اور شاید کسی نے کوشش بھی کی ہو، لیکن محترم سرور عالم راز سرورؔ صاحب پر ہی منحصر ہے کہ وہ کیا فیصلہ کرتے ہیں۔ ظاہر ہے اُن کے شاگردوں میں سے تو کوئی یہ کہنے کی ہمت نہ کرے گا کہ  جناب آپ فکر نا کیجے، ہم آپ سے بڑھ کر خدمت کر سکتے ہیں۔ اُن کا مقام ہماری نظر میں بُہت اونچا ہے۔ خیر دیکھئیے اونٹ کس کروٹ بیٹھتا ہے۔

اب بات آتی ہے جناب آپ نے کیا اصول اخذ کیا :)

صاحب! ایسا نہیں ہے کہ علمِ عروض پرانے شعرا نے جو جیسے کہہ دیا اُس پر قائم ہے۔ اور نہ ہی بحور یا اُن کی مزاحف اشکال میں آزادی اُن شعرا کی شاعری کی پابند ہے۔ اس کے لیئے تھوڑی سی اس کی تاریخ دیکھنی چاہیئے۔

اصل میں ایک عرب خلیل اس کا مؤجد ہے۔ عرب رواج اور عربی زبان کے لحاظ سے اُس نے کئی آہنگ دریافت کئیے۔ پھر اُن تمام آہنگوں سے مزید آہنگ دریافت کرنے کے اصول بھی وضح کیئے۔ کُچھ زحاف (وہ قوانین جن کا اطلاق بحر کے کسی بھی رُکن پر کر کے مذید بحور دریافت کی جائیں) بھی دریافت کئیے۔ وہ قوانین اُس نے کیسے نکالے، کہاں سے آئے، یہ ہمیں تو نہیں مل سکا آج تک، لیکن اتنا ضرور ہے کہ اُن کے تحت واقعی تمام بحور دریافت بھی ہوئیں بلکہ ہو سکتی ہیں۔ ان مزاحف شکلوں میں، اجازتیں بھی انہیں قوانین کی رُو سے ہی ہوئیں۔ مثلاً خلیل نے سالم بحور کے دائرے بنائے۔ دائرے کی وضاحت تھوڑی سی دیتے ہیں۔

آپ نے غور کیا ہو گا کہ آہنگ اصل میں آوازوں کی کوئی بھی خاص ترتیب ہوتی ہے۔ ایک آہنگ کو اگر درمیان سے یا کسی اور جگہ سے شروع کر دیا جائے تو وہ ایک نیا آہنگ بن جاتا ہے۔ اس کی مثال ہے جیسے :فعولن: کا وزن 221 (دائیں سے بائیں) ہے۔ اسے چار بار لکھتے ہیں۔

فعولن فعولن فعولن فعولن
یعنی 221 221 221 221

اب اگر ہم اسے پہلے رکن کے آخری 2 سے شروع کریں اور پھر جہاں ختم ہو اسے پہلے سرے سے جوڑ دیں تو

212 212 212 212 بنے گا

یعنی فاعلن فاعلن فاعلن فاعلن

ایک نئی بحر ہمارے سامنے ہے۔

معذرت چاہتے ہیں اگر ہم اصل سوال سے ہٹ گئے ہیں۔ دراصل ہمیں علم نہیں ہے کہ آپ اس کے بارے مٰیں پہلے ہی کتنا علم رکھتے ہیں۔ دوسرا ہم نے سوچا کہ مثال بھی دی جائے کہ کیسے آہنگ دریافت کئیے گئے۔

علمِ عروض میں کئی بحور دریافت کی جا چُکی ہیں انہیں اصولوں کو نظر میں رکھتے ہوئے۔ اور اُن میں سے کئی بُہت پسندیدہ بھی ہیں۔ لیکن یہاں کُچھ مسائل بھی پیدا ہوئے۔ ہؤا یہ کہ عربوں سے یہ علم فارسی میں آیا، اور پھر اُردو میں آیا۔ فارسی بولنے والوں نے اس میں سے جو انہیں اپنی زبان کے لحاظ سے بہتر نہ معلوم ہوئے انہیں چھوڑ دیا اور جن اوزان نے اردو میں مزا نہ دیا انہیں ہم نے چھوڑ دیا۔ ہمارے ہاں کے عروض دانوں نے جہاں تک ہو سکا اُنہیں اصولوں کو اپنی زبان پر بھی لاگو کیا۔ آپ نے درست طنز فرمایا کہ جیسے اور کوئی آہنگ ہو ہی نہیں سکتے۔ ایسا نہیں ہے۔ آہنگ کئی موجود ہیں، جیسا کہ پہلے جواب میں ہم نے ایک مثال بھی دی۔ جو علمِ عروض میں نہیں ملتے لیکن ہمارے ہاں موجود بھی ہیں اور کئی شعرا ان کو استعمال بھی کر رہے ہیں۔ مثال کے طور پر یہ ایک ہماری اپنی ہی تُک بندی دیکھئیے، کیا یہ آہنگ نہیں؟

طوم طوم کر طبلہ باجے، جھوم جھوم کر گا
دیکھ دیکھ کر دُنیا ناچے، انگ انگ لہرا

مندرجہ بالا وزن عروض میں کہیں نہیں مِلتا۔ علاوہ ازیں یہ بھی دیکھئیے

کِسی کی بھیگی نگاہوں کا اشارہ تھا مُجھے
کہ بارِ ترکِ مُحبت بھی گوارا تھا مُجھے
اس کا وزن :مفاعلن فعلاتن فعلاتن فعلن: ہے جو عروض میں کہیں نہیں، البتہ کافی لوگوں نے اسے پڑھ کر ہمیں بتایا کہ اس میں آہنگ موجود ہے اور اچھا بھی ہے۔ آپ کی کیا رائے ہے؟

یقیناً کافی سارے ایسے اور بھی ہونگے اور ان میں شعر کہنے پر کوئی پابندی نہیں ہونی چاہئیے۔ البتہ ایک بات اہم ہے کہ ہماری ذاتی رائے کے مطابق شعر کا جو بھی وزن ہو، چاہے وہ عروض میں ملتا ہے یا نہیں، تمام شعر اسی وزن میں ہونا چاہیئں۔ اصل میں شعرا کی کوشش تو یہی ہوتی ہے کہ اُن کے کلام کو زیادہ لوگ پسند کریں۔ اتنے قدیم عرصہ سے لوگ کئی آہنگ پڑھ پڑھ کر اُن کو وزن کے لحاظ سے پڑھنے میں ماہر ہو گئے ہیں اور ان کی مشق ہو چُکی ہے۔ سو اگر آپ کوئی نیا وزن لاتے بھی ہیں تو لوگ اُس سے اُتنا محظوط نہیں ہو پاتے۔ جس کی وجہ سے شاعر بھی اس سے اجتناب ہی کرتے ہیں۔ دوسری بات کہ چاہے علمِ عروض ہمارے لیئے مکمل نہ سہی، لیکن اس کی حیثیت اپنی جگہ قائم ہے۔ اور اردو کی بیش تر شاعری اس کے دارئرہ میں رہتے ہوئے ہی کی گئی ہے۔ اگر ہم شعر کے وزن کی بات کریں گے، تو ہمیں اسی علمِ عروض کا سہارا لینا پڑے گا، سو ہمارے نکتہ نگاہ سے، علمِ عروض کو ترک کرنا ممکن نہیں بلکہ اسی پر مذید کام کرنے کی ضرورت ہے۔ آپ کے سوال کا جواب دینے کا حق کسے ہے؟ ۔۔ دراصل علمِ عروض کا کوئی مالک نہیں جس کا جواب ماننا پڑے۔ ہماری رائے ہو سکتی ہے۔ اور وہ یہ کہ اگر کوئی وزن ایسا ہے جو علمِ عروض میں نہیں اور پھر سُننے میں بھی خاص نہیں تو بھی شاعر پر کوئی پابندی نہیں۔ لیکن اگر کوئی شاعر چاہتا ہے کہ اس کا کلام لوگوں کو اچھا لگے اور سراہا جائے۔ جو بات وہ کہہ رہا ہے وہ لوگوں کے دل کو چھوُ لے تو اسے ایسے آہنگ کی ہی تلاش ہوگی جو چاہے علم عروض میں ہو یا نہ ہو، لیکن پڑھنے والوں کو اچھا لگے۔ کیونکہ بالآخر زبانِ خلق نقارائے خُدا ۔۔۔

ہم نے فقط اپنی رائے دی ہے، باقی آپ بہتر جانتے ہی ہیں کہ ہر انسان کو اختلافِ رائے کا حق تو ہے ہی۔ :)

دُعا گو


گنگناتی رهے گی انھیں تو سدا
اتنے نغمے تِرے نام کر جائیں گے

غیرحاضر vb jee

  • Adab Fehm
  • ****
  • تحریریں: 1129
  • جنس: مرد
جواب: Aasaan Arooz #10آسان عروض سبق۔ ١٠
« Reply #14 بروز: فروری 01, 2016, 06:57:25 صبح »

 

آداب

میں یہاں پہلی مرتبہ کچھ لکھ رہا ہوں۔ میں عروض کی تلاش میں آیا تھا لیکن میرا جو مسلہ تھا وہ یہاں بھی حل نہیں ہوا۔ جناب نے لکھا کہ ایک شعر کے دو مصرعوں میں مختلف تفاعیل کا استعمال شاعر کے ذوقِ سلیم پر منحصر۔ مجھے اس ہی کی وضاحت چاہیے۔ اس ضمن میں میرے سوال یہ ہیں۔۔

کیا اس بارے میں کوئی اصول نہیں ہے ؟

کیا ایسا ہر بحر میں ہو سکتا؟

یا کیا ایک ہی بحر کے مختلف زحافات ایک ہی شعر یا غزل میں استعمال کیے جا سکتے ہیں؟ میں نے یہ شکل متقارب میں بہت دیکھی ہے۔ رہنمائی فرمایئے۔

 

اسد



محترم جناب اسداللہ خان صاحب ۔۔۔ السلام علیکم

پہلے تو ہم آپ کو اس بزم میں خوش آمدید کہتے ہیں۔ اس بزم میں سب احباب مل کر کُچھ سیکھنے سکھانے کا ماحول قائم رکھتے ہیں۔ انشااللہ ہم سب کی کوشش ہو گی کہ آپ کو اپنے تمام سوالوں کے جواب یہاں سے مل سکیں۔ اگرچہ ہم سب ہی یہاں عروض کے شاگرد ہیں، لیکن جس قدر بھی علم ہے، ایک دوسرے کے ساتھ بانٹتے ہیں تو ایک دوسرے سے سیکھنے کا موقع بھی ملتا رہتا ہے۔ امید ہے کہ آپ سے بھی بُہت کُچھ سیکھنے کا موقع، ہمیں بھی ملے گا۔ آپ کا سوال اگرچہ محترم سرور عالم راز سرور صاحب سے ہے لیکن ہم اپنے علم کے لحاظ سے آپ کے سوال کا جواب دینے کی کوشش کرتے ہیں، امید ہے کہ ناراض نہ ہونگے اور درگزر سے کام لیں گے۔ مقصد یہی ہے کہ احباب ہماری بھی رہنمائی کر دیں گے۔

آپ نے حوالہ دے کر پوچھا ہے کہ  اس کے کوئی اصول ہیں یا نہیں۔ آپ نے جہاں سے حوالہ دیا ہے وہاں تھوڑا اوپر  سے دیکھیئے تو معلوم ہو جائے گا کہ شاعر کو کسی بحر کی تمام مزاحف شکلوں کو ایک جگہ جمع کرنے کی اجازت نہیں ہے، بلکہ کسی بھی ایک شکل جو مزاحف شکل بھی ہو سکتی ہے کے اندر موجود اجازتوں کے دائرہ میں رہتے ہوئے ہی ایسا کیا جا سکتا ہے۔

آپ نے پوچھا کہ، ہر بحر میں ایسا ہی ہے، تو جواب وہی ہے کہ ہر بحر میں موجود اجازتوں کے دائرہ میں رہتے ہوئے ہی شاعر کو اجازت ہے۔ کسی بھی بحر کی مزاحف شکلیں تو بُہت ہو سکتی ہیں، ان تمام کو ایک جگہ اکٹھا نہیں کیا جا سکتا۔
اب ذوقِ سلیم کی طرف آتے ہیں۔  :)

اس ضمن میں ایک مثال دیتے ہیں ہم، اسی بحر سے جس کی بات ہو رہی ہے۔ جہاں تک ہمیں یاد پڑتا ہے، اسے متقارب اثرم کہا جاتا ہے۔ اس کی 16 رکنی شکل دیکھیئے

فعلن فعلن فعلن فعلن فعلن فعلن فعلن فعلن

اس بحر کی اجازتوں کی رُو سے، کسی بھی دو فعلن فعلن کو فَعلُ فعولن کیا جا سکتا ہے۔ ایسی صورت میں ہمارے پاس کافی شکلیں نکل آئیں گی جیسے

فعل فعولن فعلن فعلن فعلن فعلن فعلن فعلن
فعلن فعل فعولن فعلن فعلن فعلن فعل فعولن

شکلیں کافی ہوجائیں گی سو ان تمام صورتوں کو لکھنا دشوار کام ہے کیوں نہ صرف اتنا ہی یاد کر لیا جائے کہ کسی بھی دو :فعلن فعلن: کو :فعلُ فعولن: کیا جا سکتا ہے۔ اگر اس اصول کو نظر میں رکھ لیا جائے تو پھر بات شاعر کے ذوقِ سلیم پر ہی ہے کہ وہ کسی بھی :فعلن فعلن: کو :فعلُ فعولن: باندھے۔

آپ کی بات بجا ہے کہ متقارب میں ایسا بُہت نظر آتا ہے۔ اگرچہ ڈاکٹر جمال الدین جمال صاحب نے اپنی کتاب :تفہمِ سُخن: میں اس بحر میں موجود کافی پابندیاں بھی بیان کی ہیں لیکن دراصل ہماری زبان کے لحاظ سے شعرا نے اس میں خود بھی کافی چیزیں اپنے لئیے حلال کر لی ہیں۔ اوپر جو ہم نے اصول بیان کیا ہے کہ کسی بھی :فعلن فعلن: کو :فعلُ فعولن: کرنے کی اجازت ہے، اسی کو ہمارے ہاں عام طور پر شعرا استعمال کر رہے ہیں، لیکن اصل علم عروض کے لحاظ سے (بحوالہ تفہیمِ سُخن) صرف انہی :فعلن فعلن: کو فعل فعولن کیا جائے گا جن کے آگے یا پیچھے دو بار :فعلن فعلن: لازمی ہو گا۔ دوسرے الفاظ میں کہیں بھی :فعل فعولن: دو بار اکٹھا نہیں آ سکتا۔ خیر یہ بات لمبی بھی ہو جائے گی اور شاید بلا مقصد بھی، سو واپس آتے ہیں۔

محترم سرور عالم راز سرور صاحب نے :کُچھ بحور: کی بات کی ہے سو اس کی ایک اور مثال بھی دیتے ہیں۔ اس بحر میں اردو میں بہت شاعری کی گئی ہے۔

فاعلاتن فعلاتن فعلاتن فعلن

اس بحر میں موجود اجازتوں کے لحاظ سے اگر تمام وہ صورتیں لکھیں جو ایک جگہ یکجا کی جا سکتی ہیں تو بُہت زیادہ ہو جائیں گی سو اصول کو دیکھ لیتے ہیں۔

1. شروع میں موجود فاعلاتن کو فَعِلاتن باندھا جا سکتا ہے
2. آخری فعلن کو فَعِلُن بھی باندھا جا سکتا ہے
3. آخری رکن کے آخر میں ایک ساکن حرف کے اضافہ کی اجازت بھی ہے یعنی فعلان بھی باندھا جا سکتا ہے
4. آخری رکن اگر :فَعِلُن: ہے تو ایک حرف کے اضافہ کے ساتھ فَعِلان بھی باندھا جا سکتا ہے۔
5. حشوین میں موجود دونوں :فعلاتن فعلاتن: میں سے کسی بھی ایک کو :مفعولن: بھی باندھا جا سکتا ہے۔
6. اوپر دئیے گئے اصولوں میں  سے کوئی بھی ایک دو تین چار پانچ یا سب ایک ساتھ بھی  استعمال کئیے جا سکتے ہیں۔

ان اصولوں کے پیش نظر کئی صورتیں بن سکتی ہیں جنہیں ایک ہی غزل میں یکجا کیا جا سکتا ہے ۔۔ جیسے

فعلاتن فعلاتن فعلاتن فَعِلان
فاعلاتن مفعولن فعلاتن فعلن۔۔۔۔ وغیرہ

بحر کی ایک سالم شکل ہوتی ہے۔ اس پر کُچھ زحاف لگا کر اس بحر سے مزاحف شکلیں دریافت کی جاتی ہیں۔ ان تمام مزاحف شکلوں کو ایک جگہ اکٹھا کرنے کی اجازت نہیں ہے، بلکہ ہر مزاحف شکل کے اپنے کُچھ اصول ہوتے ہیں اور اس میں اتنا ہی ایک شاعر کو اختیار ہوتا ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔

ہم نے اپنے علم کے لحاظ سے جواب دینے کی کوشش کی ہے تاکہ اگر کہیں جزوی یا کُلی طور ہم غلطی پر ہیں تو آپ یا احباب ہماری بھی رہنمائی فرمائیں۔ ہمارے جواب دینے کی کوشش کو مطلق درست نہیں جانئیے گا، کیونکہ ہم خود بھی ابھی طفلِ مکتب ہی ہیں اور آپ احباب سے سیکھتے رہتے ہیں۔ اگر ہماری کوشش سے سوال کا جواب آپ کو نہیں مل سکا ہے تو پیشگی معذرت چاہیں گے اور درخواست کریں گے کہ ہمیں دوبارہ خدمت کا موقع دیا جائے۔ امید ہے کہ آپ یہیں ہیں تو اب بات بھی ہوتی رہے گی اور بُہت کُچھ سیکھنے کو بھی ملے گا۔

دُعا گو



یاران اردو انجمن: تسلیمات
نادم ہوں کہ کچھ عرصے یہاں سےغائب رہا۔ تفصیل اس اجمال کی یہ ہے کہ کافی علیل ہوگیا تھا، اسپتال کا چکر لگاکر آیا ہوں۔ دل کی مرمت ہوئی ہے اور دل کا معاملہ یہ ہے کہ جب جب ڈاکٹر صاحبان اس سے "چھیڑ خانی" کرتے ہیں نقاہت بہت بڑھ جاتی ہے۔ خِیر یہ تو جملہ معترضہ تھا۔ زندگی کا یہی حال ہے۔ ویسے سب اللہ کا شکر ہے۔
میں ان سب دوستوں کا دلی شکرگزار ہوں جو یہاں آ کر ادب کی خدمت کر رہےہیں۔ اس سے قبل میں نے عرض کیا تھا کہ شاید یہ چوپال مارچ کے وسط تک بند کردی جائے۔ ابھی تک انتہائی تذبذب کی کیفیت میں ہوں کہ کروں تو کیا کروں۔ میری عمر اور صحت اجازت نہیں دیتی کہ زیادہ محنت کروں۔ بہر حال دیکھتے ہیں کہ فروری میں کیا پیش آتا ہے۔ عروض کا سلسلہ دیکھا اور نہایت مسرت سے دوچار ہوا۔ جزاکم اللہ خیرا۔
باقی راوی چین ہی چین بولتا ہے۔

سرور عالم راز





محترم جناب سرور عالم راز سرورؔ صاحب! السلام علیکم

آپ کی طبعیت کی ناسازی کی خبر سُن کر رنج ہؤا، لیکن پھر بھی اللہ کا شکر ہے کہ آپ ہمارے درمیان موجود ہیں۔ اللہ پاک آپ کو صحتمند رکھے اور عمر دراز عطا فرمائے۔ انجمن کی اس قدر فکر مت کیجے۔ رہے نہ رہے، آپ نے کئی شمعیں روشن کر دی ہیں، سو روشنی دور دور تک جاتی رہے گی۔

دُعا گو


گنگناتی رهے گی انھیں تو سدا
اتنے نغمے تِرے نام کر جائیں گے

 

Copyright © اُردو انجمن