اُردو انجمن

 


مصنف موضوع: جذبہء شوق ، ناخدائے دل !  (پڑھا گیا 3209 بار)

0 اراکین اور 1 مہمان یہ موضوع دیکھ رہے ہیں

غیرحاضر ہما حمید ناز

  • Adab Aashnaa
  • *
  • تحریریں: 15
  • جنس: عورت
  • زندگی کو خوبصورتی سے جینا بھی ایک آرٹ ہے
جذبہء شوق ، ناخدائے دل !
« بروز: فروری 02, 2015, 03:18:47 شام »
]معزز اراکینِ اردو انجمن ۔ آداب ۔
ایک غزل  پیش کرنے کی جسارت پھر کر رہی ہوں ۔ امید ہے کہ  میری اس کاوش مین موجود  کوتاہیوں  کی نشاندہی  کی جائے گی ۔  آپ کی توجہ اور    قدر دانی کے لئے بہت مشکور ہوں ۔     آپ کے چند الفاظ اس ناچیز کے لئے حوصلہ افزائی کا کام دیں گے  ۔ گر قبول افتد زہے عز و شرف !!!

غزل 

جذبہء  شوق ، ناخدائے دل !
کاش سن لے مری نوائے دل

کم نہیں ہوگا حوصلہ  میرا
جس طرح چاہے آزمائے دل

کوئی سرگم ہو، کوئی موسم ہو
راگ تیرا ہی گنگنائے دل

کوئی منظر  ہو ، کوئی   عالم ہو
تیری جانب ہی دیکھےجائے دل

ہائے مجبوریاں محبت کی !
آنکھ ہنستی ہے روتا جائے دل

دیپ جلتا ہے رات بھر تنہا
بن مسافر ہے اب سرائے دل

بات ساری ہے بس نصیبوں کی
ہم اکیلے ہیں بربنائے دل

قسمتیں لکھ رہی تھی جب قدرت
کاش لکھ دیتی دل برائے دل !

ناز انجامِ  دل لگی دیکھا
 کون دنیا میں اب لگائے دل 
 
[/size]
« آخری ترمیم: جنوری 13, 2016, 02:00:12 شام منجانب ہما حمید ناز »


خود کو سدھارلیجیئے ۔ معاشرےسے ایک برا انسان کم ہوجائے گا ۔ . (ایک  مفکر  کا قول)

غیرحاضر سرور عالم راز

  • Muntazim-o-Mudeer
  • Saaheb-e-adab
  • ******
  • تحریریں: 6168
  • جنس: مرد
    • Kalam-e-Sarwar
جواب: جذبہء عشق ! ناخدائے دل !
« Reply #1 بروز: فروری 02, 2015, 09:21:32 شام »

عزیزہ ناز صاحبہ:سلام مسنون!
آپ کی غزل دیکھی۔ میں اس سےقبل بھی شاید لکھ چکا ہوں کہ آپ کی مشق کافی پرانی معلوم ہوتی ہے۔ زبان و بیان، وزن وبحر پر آپ کو خاصہ عبور ہے۔ اس مرتبہ آپ نے ایک چھوٹی بحر اور مشکل زمین میں غزل کہی ہے جو آپ کی خود اعتمادی کی نشانی ہے۔ اردو انجمن میں ایک باب نو آموز دوستوں کی اصلاح کے لئے مخصوص ہے۔ دوسرے ابواب میں اصلاح نہیں بلکہ صرف رائے دی جاتی ہے جسے میں "فکر بہ آواز بلند" کہتا ہوں۔ یعنی کسی کے کلام پر اپنی سوچ کا اظہار۔ ضروری نہیں کہ آپ دوسروں کی رائے سے متفق ہوں اور اختلاف کی صورت میں کوئی برا ماننے والا بھی نہیں ہے۔ تبادلہؑ خیال سے نئی سوچوں کی راہ کھل سکتی ہے اور یہی اس کوشش کا مقصد ہے۔
آپ کی غزل پر عمومی داد کے بعد چند باتیں کہنے کی اجازت چاہتا ہوں۔ آپ کے بے لاگ خیالات کا انتظار رہے گا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جذبہء عشق ! ناخدائے دل !
 سن  کبھی تو مری نوائے دل
مطلع اچھا ہے۔ داد حاضر ہے۔ ایک صورت ذہن میں آئی سو لکھتا ہوں۔ یہ بندش "عشق" کی شدت کو کم رکھتی ہے اور نسبتا نرم لہجہ میں ہے۔ 
جذبہء شوق، نا خدائے دل!
کاش سن لے مری نوائے دل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کم نہ پائے گا حوصلہ میرا   
جس قرینے سے آزمائے دل
دونوں مصرعے مجھ کو کمزور بندش کے محسوس ہوئے۔ عام طور سے "دل" خود آزمائش میں مبتلا ہوتا ہے لیکن آپ کے یہاں آپ کا دل آپ کو ہی آزمارہا ہے۔ ایک سوچ یہ ہے، شاید کسی قابل ہو:
کم نہیں ہوگا حوصلہ میرا
جس طرح چاہے آزمائے دل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کوئی سرگم ہو، کوئی موسم ہو
راگ تیرا ہی گنگنائے دل
میں جانتا ہوں کہ موسموں سے بھی راگوں کا رشتہ ہے۔ البتہ میری سوچ کچھ اس طرح مرتب ہوئی:
کوئی ہو تان، کوئی سرگم ہو
راگ تیرا ہی گنگنائے دل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کوئی رستہ ہو ، کوئی منزل ہو
تیری جانب ہی تکتا جائے دل
میرا خیال ہے کہ یہاں آپ قافیہ پیمائی کا شکار ہو گئی ہیں۔ شعر اچھا نہیں ہے۔ بندش بھی سست ہے اور مضمون بھی کمزور۔ جب محبوب اس طرح نظر آرہا ہے کہ آپ اس کو دیکھ سکتی ہیں تو پھر دوسری راہ پر کسی اور منزل کی جانب آپ کے قدم کیوںکر اٹھ سکتے ہیں؟ اس شعر کو پھر سے سوچنے کی ضرورت ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایسے غم سے تو ہم بھی بھرپائے
آنکھ ہنستی ہے روتا جائے دل
دوسرا ،صرع کیسا تیکھا ہے اور پہلا کتنا پھیکا!مزید یہ کہ آپ نے "ہم بھی بھر پائے" لکھا ہے گویا آپ کے علاوہ اور بھی اس غم میں گرفتار ہیں۔ سو پھر آپ کی محبت کی انفرادیت کہاں رہی؟ شعر کا رنگ ذرا سا بدلئے تو ایک صورت ذہن میں آتی ہے، دوسری آپ سوچ ہی لیں گی:
ہائے مجبوریاں محبت کی!
آنکھ ہنستی ہے، روتا جائے دل!
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دیپ جلتا ہے رات بھر تنہا
بن مسافر ہے اب سرائے دل
خیال خوبصورت ہے، بیان شاید اور نکھر سکتا ہے۔ یہ صورت دیکھئے، شاید پسند آئے یا ایسی ہی کوئی اور شکل۔ دو الفاظ بدلنے سے فرق تو محسوس ہوتا ہے۔
دیپ جلتا تھا رات بھر تنہا
بن مسافر رہی سرائے دل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بات ساری ہے بس نصیبوں کی
ہم اکیلے ہیں بربنائے دل
خوب کہا ہے آپ نے۔ داد!
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
قسمتیں لکھ رہی تھی جب تقدیر
کاش لکھ دیتی دل برائے دل
یہ بھی قافیہ پیمائی کی کوشش ہے۔ آپ "برائے" باندھنا چاہتی تھیں سو یہ صورت بنی لیکن بات نہیں بنی۔ تقدیر آپ کی قسمتیں لکھ رہی تھی؟ قسمت اور تقدیر ایک ہی چیز نہیں ہے؟ سہگل کا گانا سنا ہوگا آپ نے :
اے کاتب تقدیر مجھے اتنا بتا دے
کیوں مجھ سے خفا ہے تو ، کیا میں نے کیا ہے
اوروں کو خوشی مجھ کو فقط درد و رنج و غم
دنیا کو ہنسی اور مجھے رونا دیا ہے
تو کسی طرح "کاتب تقدیر" کو اس شعر کی خدمت میں کیوں نہ لگایا جائے!
کیا ترا جاتا کاتب تقدیر؟
تو جو لکھ دیتا دل برائے دل
دیکھئے مفتیان دین متین بیچ اس مسئلہ کے کیا کہتے ہیں!  :)
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ناز انجامِ  دل لگی دیکھا
 کون دنیا میں اب لگائے دل
اس شعر سے ایک سوال پیدا ہوتا ہے۔ "دل" فارسی ہے اور "لگی" ہندوستانی، چنانچہ ان کو ملا کر ادب میں "دل لگی" ترکیب بنانا خلاف اصول ہے لیکن شاعری میں "دل لگی" سب نے دیکھا ہے ۔
دل لگی ہی دل لگی میں دل چرا کر چل دئے
ہم یہ کہتے ہی رہے، یہ دل لگی اچھی نہیں !
خیر آپ یہ دیکھئے اور اپنی رائے دیجئے۔
"ناز" ! انجام دل لگی دیکھا؟
کون کس دل سے اب لگائے دل!
امید ہے کہ اپنے خیالات سے ضرور آگاہ کریں گی۔ باقی راوی سب چین بولتا ہے۔

سرور عالم راز "سرور"


 






غیرحاضر imran kamal

  • Adab Shinaas
  • **
  • تحریریں: 387
جواب: جذبہء عشق ! ناخدائے دل !
« Reply #2 بروز: فروری 03, 2015, 12:40:10 صبح »
]معزز اراکینِ اردو انجمن ۔ آداب ۔
ایک غزل  پیش کرنے کی جسارت پھر کر رہی ہوں ۔ امید ہے کہ  میری اس کاوش مین موجود  کوتاہیوں  کی نشاندہی  کی جائے گی ۔  آپ کی توجہ اور    قدر دانی کے لئے بہت مشکور ہوں ۔     آپ کے چند الفاظ اس ناچیز کے لئے حوصلہ افزائی کا کام دیں گے  ۔ گر قبول افتد زہے عز و شرف ۔

غزل 

جذبہء عشق ! ناخدائے دل !
 سن  کبھی تو مری نوائے دل

کم نہ پائے گا حوصلہ میرا   
جس قرینے سے آزمائے دل

کوئی سرگم ہو، کوئی موسم ہو
راگ تیرا ہی گنگنائے دل

کوئی رستہ ہو ، کوئی منزل ہو
تیری جانب ہی تکتا جائے دل

ایسے غم سے تو ہم بھی بھرپائے
آنکھ ہنستی ہے روتا جائے دل

دیپ جلتا ہے رات بھر تنہا
بن مسافر ہے اب سرائے دل

بات ساری ہے بس نصیبوں کی
ہم اکیلے ہیں بربنائے دل

قسمتیں لکھ رہی تھی جب تقدیر
کاش لکھ دیتی دل برائے دل

ناز انجامِ  دل لگی دیکھا
 کون دنیا میں اب لگائے دل
 
[/size]


السلام علیکم محترمہ ناز صاحبہ

ماشاء اللہ بہت ہی اچھی غزل ہے
محترم راز صاحب کے تبصرے کے بعد اور کچھ کہنے کی گنجائش نہیں ہے سو ہماری طرف سے بہت بہت داد قبول کیجیے۔
 لفظ  (تکتا) ہمیں کچھ مناسب نہیں لگا  باقی غزل خوب ہے محترم راز صاحب  نے اسے خوب تر کر دیا ہے
غزل پر ایک بار پھر سے داد اللہ حافظ

غیرحاضر vb jee

  • Adab Fehm
  • ****
  • تحریریں: 1232
  • جنس: مرد
جواب: جذبہء عشق ! ناخدائے دل !
« Reply #3 بروز: فروری 03, 2015, 04:51:40 صبح »
]معزز اراکینِ اردو انجمن ۔ آداب ۔
ایک غزل  پیش کرنے کی جسارت پھر کر رہی ہوں ۔ امید ہے کہ  میری اس کاوش مین موجود  کوتاہیوں  کی نشاندہی  کی جائے گی ۔  آپ کی توجہ اور    قدر دانی کے لئے بہت مشکور ہوں ۔     آپ کے چند الفاظ اس ناچیز کے لئے حوصلہ افزائی کا کام دیں گے  ۔ گر قبول افتد زہے عز و شرف ۔

غزل 

جذبہء عشق ! ناخدائے دل !
 سن  کبھی تو مری نوائے دل

کم نہ پائے گا حوصلہ میرا   
جس قرینے سے آزمائے دل

کوئی سرگم ہو، کوئی موسم ہو
راگ تیرا ہی گنگنائے دل

کوئی رستہ ہو ، کوئی منزل ہو
تیری جانب ہی تکتا جائے دل

ایسے غم سے تو ہم بھی بھرپائے
آنکھ ہنستی ہے روتا جائے دل

دیپ جلتا ہے رات بھر تنہا
بن مسافر ہے اب سرائے دل

بات ساری ہے بس نصیبوں کی
ہم اکیلے ہیں بربنائے دل

قسمتیں لکھ رہی تھی جب تقدیر
کاش لکھ دیتی دل برائے دل

ناز انجامِ  دل لگی دیکھا
 کون دنیا میں اب لگائے دل
 
[/size]


محترمہ ہما حمید ناز صاحبہ! سلام

اب ایسی استادانہ غزل پر ہم ایسے بیچارے کیا کہیں۔ سوائے داد کی واہ واہ کے۔ ہمیں بُہت پسند آئی یہ غزل۔ اس قدر سلجھے ہوئے مضامین کے ساتھ ایسا شائستہ بیان بھی۔ تاثرات بھی برقرار اور کلام کی پُختگی بھی، واضح۔ بھرپور داد قبول کیجے۔ اور اب اپنے آپ کو ہمارے اساتذہ میں شمار کیا کیجے :)

محترم سرور عالم راز سرورؔ صاحب کی تو کیا ہی بات ہے۔ ان کا تبصرہ کیسا علم افروز، سلجھا ہؤا اور بیان اس قدر شائستہ اور خوبصورت زبان میں ہوتا ہے کہ ہمیں رشک آتا ہے۔ اُن کا شکرگزار ہیں کہ اُن کے تبصرہ سے ہمیں بھی بُہت کُچھ سیکھنے کو ملتا ہے۔ اب معاملہ کُچھ یوں ہے کہ ایک آدھ جگہ غزل میں ہمارے خیالات اور رائے، محترم سرور عالم راز سرورؔ صاحب سے کُچھ مختلف ہے۔ ہمارے بس میں ہو تو اپنی رائے کو راوی ہی کے کنارے مُرغا بنا دیں، لیکن کیا کیجے کہ اس پر زور نہیں، سو پیش ہے۔ امید ہے خوب سرزنش ہو گی۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جذبہء عشق ! ناخدائے دل !
سن  کبھی تو مری نوائے دل

بھرپور داد۔ لیکن سچ یہ ہے کہ محترم سرور عالم راز سرورؔ صاحب کی تجویز ہمیں زیادہ اچھی لگ رہی ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کم نہ پائے گا حوصلہ میرا   
جس قرینے سے آزمائے دل

یہاں بھی محترم سرور عالم راز سرورؔ صاحب کی رائے اچھی ہے۔ لفظ :قرینے: ویسے بھی ادائگی میں مشکل سا محسوس ہوتا ہے ہمیں۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کوئی سرگم ہو، کوئی موسم ہو
راگ تیرا ہی گنگنائے دل

یہاں اختلاف ہے۔ جہاں تک ہمیں علم ہے، تکنیکی اعتبار سے، ہر راگ کی اپنی سرگم ہوتی ہے اور راگ کی پہچان ہی اس سرگم سے ہے۔ چنانچہ یہ کہنا درست نہیں ہو سکتا کہ کسی بھی سرگم میں ایک ہی راگ الاپا، ہمارا مقصد ہے، گنگنایا جا سکے۔ نیز :تان: کا بھی ایسا ہی حال ہے کہ کسی بھی تان کو آزادی سے کسی راگ میں نہیں لگایا جا سکتا، کیونکہ ہر راگ اپنی ہی سرگم پر مشتمل تانوں سے مل کر بنتا ہے۔ البتہ راگوں سے موسموں کا تعلق ہم سب جانتے ہی ہیں کہ اگرچہ راگوں کے موسم مختص ہیں، لیکن پھر بھی راگ تو موسم کو نظر انداز کرتے ہوئے بھی گا سکتے ہیں۔ تکنیکی اعتبار سے، راگوں کی تقسیم، سب سے پہلے :سپتک: کے سروں پر ہوتی ہے۔ اس کے بعد وقت اور موسم کے لحاظ سے۔ یہاں وقت کو پہلے آٹھ پہروں (جنہیں :ٹھاٹھ: بھی کہتے ہیں) میں تقسیم کیا جاتا ہے اور موسم باہر اور اندر کے دونوں ہی ہو سکتے ہیں۔ ایسی صورت میں کسی راگ کو بے وقت گایا جا سکتا ہے (جیسے ہم ابھی بے وقت کی راگنی الاپ رہے ہیں) اور بے موسم بھی۔ سو ہمارا خیال ہے کہ یہ مصرع کُچھ ایسے بہتر ہو گا

کوئی بھی وقت ہو کوئی موسم ۔۔۔۔۔ یا ۔۔۔۔۔ وقت کوئی ہو، کوئی موسم ہو ۔۔ وغیرہ

علاوہ ازیں لفظ :پہر: بھی :وقت: کی جگہ لایا جا سکتا ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کوئی رستہ ہو ، کوئی منزل ہو
تیری جانب ہی تکتا جائے دل

یہاں ہمیں، محترم سرور عالم راز سرورؔ صاحب سے مکمل اتفاق ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ایسے غم سے تو ہم بھی بھرپائے
آنکھ ہنستی ہے روتا جائے دل

:بھر پائے: ہم نے پہلے نہیں سُنا تھا۔ آپ کی وساطت سے سیکھا ہم نے سو شکر گزار بھی ہیں۔ اور آپ ہی کے بقول ایک لفظ بھی جس سے سیکھا جائے وہ استاد ہوتا ہے :)

محترم سرور عالم راز سرورؔ صاحب کی تجویز ہمیں اچھی لگی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

دیپ جلتا ہے رات بھر تنہا
بن مسافر ہے اب سرائے دل

ہمیں شعر بُہت اچھا لگا۔ محترم سرور عالم راز سرورؔ صاحب کی تجویز سے ہمیں اتفاق نہیں ہے۔ ظاہر ہے کہ ہماری کم فہمی ہو سکتی ہے۔ اُن کی تجویز یہیں لکھ دیتے ہیں

دیپ جلتا تھا رات بھر تنہا
بن مسافر رہی سرائے دل

یہاں پہلے مصرع میں :تھا: اور دوسرے میں :رہی: ہمیں ٹھیک نہیں لگ رہا گویا یہ ویسا ہی مسئلہ محسوس ہو رہا ہے جس پر ہمارے محترم خاک زنبیلی صاحب،  ماضی استمراری اور ماضی مطلق اور جانے ایسے ہی کتنے مشکل لفظوں سے سمجھایا کرتے تھے، اور ہمیں صرف تاثرات سے اُن کی بات سمجھ آ جاتی تھی، بالکل ویسے ہی جیسے ہم پشتو، پٹھانوں کے چہرے کے اتار چڑھاؤ سے سمجھ جاتے ہیں کہ :خان صاحب غصے میں ہیں: :خان صاحب احتجاج کر رہے ہیں: یا :خان صاحب خوش ہوئے ہیں: وغیرہ :)

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بات ساری ہے بس نصیبوں کی
ہم اکیلے ہیں بربنائے دل

محترم سرور عالم راز سرورؔ صاحب نے ایسے ہی تو داد نہیں دی ہو گی، شعر یقیناً اچھا ہے، اگر ہمیں سمجھ نہیں آیا تو کیا۔ :) ۔۔ لیکن ہماری عقل یہاں بھی ہمارا ساتھ نہیں دے رہی۔ سمجھ یہ نہیں آیا کہ نصیبوں کو قصوروار سمجھا جائے یا :دل: کو۔ اکیلے پن کی وجہ، نصیب ہیں یا دل؟ یا پھر شاید، بربنائے دِل، اکیلے ہیں اور یہ بدنصیبی ہے سو، نصیب سے گلہ ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
قسمتیں لکھ رہی تھی جب تقدیر
کاش لکھ دیتی دل برائے دل

ہمیں محترم سرور عالم راز سرورؔ صاحب سے مکمل اتفاق ہے۔ ہماری بات، مفتان دین متین سے ہوئی اور انہوں نے تجویز کردہ شعر کو بُہت سراہا :) ساتھ قسمت سے شکایت کرنے پر لمبی لمبی تقیریں بھی فرمائیں جنہیں ہم سر جھکائے :ماشااللہ: اور :انشااللہ: کہہ کہہ کر سنتے رہے :(
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ناز انجامِ  دل لگی دیکھا
کون دنیا میں اب لگائے دل

محترم سرور عالم راز سرورؔ صاحب کے شکر گزار ہیں کہ ایک ترکیب سے متعلق ہمارے علم میں بھی اضافہ فرمایا۔ آپ کا شعر اور اُن کی تجویز دونوں ہی اچھے ہیں، البتہ اُن کی تجویز سے شعر کا مفہوم بدل سا گیا ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

یہ تھی فدوی کی بے لاگ رائے۔۔۔ امید ہے کہ فدوی کی رہنمائی اور خوب سرزنش کی جاوے گی۔ لیکن حقیقت یہ ہے کہ غزل ہمیں بُہت اچھی لگی۔ سو بھرپور داد ایک بار پھر قبول کیجے۔۔۔

دعا گو

« آخری ترمیم: فروری 03, 2015, 05:01:49 صبح منجانب vb jee »
گنگناتی رهے گی انھیں تو سدا
اتنے نغمے تِرے نام کر جائیں گے

غیرحاضر سرور عالم راز

  • Muntazim-o-Mudeer
  • Saaheb-e-adab
  • ******
  • تحریریں: 6168
  • جنس: مرد
    • Kalam-e-Sarwar
جواب: جذبہء عشق ! ناخدائے دل !
« Reply #4 بروز: فروری 03, 2015, 10:48:05 صبح »
]معزز اراکینِ اردو انجمن ۔ آداب ۔
ایک غزل  پیش کرنے کی جسارت پھر کر رہی ہوں ۔ امید ہے کہ  میری اس کاوش مین موجود  کوتاہیوں  کی نشاندہی  کی جائے گی ۔  آپ کی توجہ اور    قدر دانی کے لئے بہت مشکور ہوں ۔     آپ کے چند الفاظ اس ناچیز کے لئے حوصلہ افزائی کا کام دیں گے  ۔ گر قبول افتد زہے عز و شرف ۔

غزل 

جذبہء عشق ! ناخدائے دل !
 سن  کبھی تو مری نوائے دل

کم نہ پائے گا حوصلہ میرا   
جس قرینے سے آزمائے دل

کوئی سرگم ہو، کوئی موسم ہو
راگ تیرا ہی گنگنائے دل

کوئی رستہ ہو ، کوئی منزل ہو
تیری جانب ہی تکتا جائے دل

ایسے غم سے تو ہم بھی بھرپائے
آنکھ ہنستی ہے روتا جائے دل

دیپ جلتا ہے رات بھر تنہا
بن مسافر ہے اب سرائے دل

بات ساری ہے بس نصیبوں کی
ہم اکیلے ہیں بربنائے دل

قسمتیں لکھ رہی تھی جب تقدیر
کاش لکھ دیتی دل برائے دل

ناز انجامِ  دل لگی دیکھا
 کون دنیا میں اب لگائے دل
 
[/size]


محترمہ ہما حمید ناز صاحبہ! سلام

اب ایسی استادانہ غزل پر ہم ایسے بیچارے کیا کہیں۔ سوائے داد کی واہ واہ کے۔ ہمیں بُہت پسند آئی یہ غزل۔ اس قدر سلجھے ہوئے مضامین کے ساتھ ایسا شائستہ بیان بھی۔ تاثرات بھی برقرار اور کلام کی پُختگی بھی، واضح۔ بھرپور داد قبول کیجے۔ اور اب اپنے آپ کو ہمارے اساتذہ میں شمار کیا کیجے :)

محترم سرور عالم راز سرورؔ صاحب کی تو کیا ہی بات ہے۔ ان کا تبصرہ کیسا علم افروز، سلجھا ہؤا اور بیان اس قدر شائستہ اور خوبصورت زبان میں ہوتا ہے کہ ہمیں رشک آتا ہے۔ اُن کا شکرگزار ہیں کہ اُن کے تبصرہ سے ہمیں بھی بُہت کُچھ سیکھنے کو ملتا ہے۔ اب معاملہ کُچھ یوں ہے کہ ایک آدھ جگہ غزل میں ہمارے خیالات اور رائے، محترم سرور عالم راز سرورؔ صاحب سے کُچھ مختلف ہے۔ ہمارے بس میں ہو تو اپنی رائے کو راوی ہی کے کنارے مُرغا بنا دیں، لیکن کیا کیجے کہ اس پر زور نہیں، سو پیش ہے۔ امید ہے خوب سرزنش ہو گی۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جذبہء عشق ! ناخدائے دل !
سن  کبھی تو مری نوائے دل

بھرپور داد۔ لیکن سچ یہ ہے کہ محترم سرور عالم راز سرورؔ صاحب کی تجویز ہمیں زیادہ اچھی لگ رہی ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کم نہ پائے گا حوصلہ میرا   
جس قرینے سے آزمائے دل

یہاں بھی محترم سرور عالم راز سرورؔ صاحب کی رائے اچھی ہے۔ لفظ :قرینے: ویسے بھی ادائگی میں مشکل سا محسوس ہوتا ہے ہمیں۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کوئی سرگم ہو، کوئی موسم ہو
راگ تیرا ہی گنگنائے دل

یہاں اختلاف ہے۔ جہاں تک ہمیں علم ہے، تکنیکی اعتبار سے، ہر راگ کی اپنی سرگم ہوتی ہے اور راگ کی پہچان ہی اس سرگم سے ہے۔ چنانچہ یہ کہنا درست نہیں ہو سکتا کہ کسی بھی سرگم میں ایک ہی راگ الاپا، ہمارا مقصد ہے، گنگنایا جا سکے۔ نیز :تان: کا بھی ایسا ہی حال ہے کہ کسی بھی تان کو آزادی سے کسی راگ میں نہیں لگایا جا سکتا، کیونکہ ہر راگ اپنی ہی سرگم پر مشتمل تانوں سے مل کر بنتا ہے۔ البتہ راگوں سے موسموں کا تعلق ہم سب جانتے ہی ہیں کہ اگرچہ راگوں کے موسم مختص ہیں، لیکن پھر بھی راگ تو موسم کو نظر انداز کرتے ہوئے بھی گا سکتے ہیں۔ تکنیکی اعتبار سے، راگوں کی تقسیم، سب سے پہلے :سپتک: کے سروں پر ہوتی ہے۔ اس کے بعد وقت اور موسم کے لحاظ سے۔ یہاں وقت کو پہلے آٹھ پہروں (جنہیں :ٹھاٹھ: بھی کہتے ہیں) میں تقسیم کیا جاتا ہے اور موسم باہر اور اندر کے دونوں ہی ہو سکتے ہیں۔ ایسی صورت میں کسی راگ کو بے وقت گایا جا سکتا ہے (جیسے ہم ابھی بے وقت کی راگنی الاپ رہے ہیں) اور بے موسم بھی۔ سو ہمارا خیال ہے کہ یہ مصرع کُچھ ایسے بہتر ہو گا

کوئی بھی وقت ہو کوئی موسم ۔۔۔۔۔ یا ۔۔۔۔۔ وقت کوئی ہو، کوئی موسم ہو ۔۔ وغیرہ

علاوہ ازیں لفظ :پہر: بھی :وقت: کی جگہ لایا جا سکتا ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کوئی رستہ ہو ، کوئی منزل ہو
تیری جانب ہی تکتا جائے دل

یہاں ہمیں، محترم سرور عالم راز سرورؔ صاحب سے مکمل اتفاق ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ایسے غم سے تو ہم بھی بھرپائے
آنکھ ہنستی ہے روتا جائے دل

:بھر پائے: ہم نے پہلے نہیں سُنا تھا۔ آپ کی وساطت سے سیکھا ہم نے سو شکر گزار بھی ہیں۔ اور آپ ہی کے بقول ایک لفظ بھی جس سے سیکھا جائے وہ استاد ہوتا ہے :)

محترم سرور عالم راز سرورؔ صاحب کی تجویز ہمیں اچھی لگی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

دیپ جلتا ہے رات بھر تنہا
بن مسافر ہے اب سرائے دل

ہمیں شعر بُہت اچھا لگا۔ محترم سرور عالم راز سرورؔ صاحب کی تجویز سے ہمیں اتفاق نہیں ہے۔ ظاہر ہے کہ ہماری کم فہمی ہو سکتی ہے۔ اُن کی تجویز یہیں لکھ دیتے ہیں

دیپ جلتا تھا رات بھر تنہا
بن مسافر رہی سرائے دل

یہاں پہلے مصرع میں :تھا: اور دوسرے میں :رہی: ہمیں ٹھیک نہیں لگ رہا گویا یہ ویسا ہی مسئلہ محسوس ہو رہا ہے جس پر ہمارے محترم خاک زنبیلی صاحب،  ماضی استمراری اور ماضی مطلق اور جانے ایسے ہی کتنے مشکل لفظوں سے سمجھایا کرتے تھے، اور ہمیں صرف تاثرات سے اُن کی بات سمجھ آ جاتی تھی، بالکل ویسے ہی جیسے ہم پشتو، پٹھانوں کے چہرے کے اتار چڑھاؤ سے سمجھ جاتے ہیں کہ :خان صاحب غصے میں ہیں: :خان صاحب احتجاج کر رہے ہیں: یا :خان صاحب خوش ہوئے ہیں: وغیرہ :)

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بات ساری ہے بس نصیبوں کی
ہم اکیلے ہیں بربنائے دل

محترم سرور عالم راز سرورؔ صاحب نے ایسے ہی تو داد نہیں دی ہو گی، شعر یقیناً اچھا ہے، اگر ہمیں سمجھ نہیں آیا تو کیا۔ :) ۔۔ لیکن ہماری عقل یہاں بھی ہمارا ساتھ نہیں دے رہی۔ سمجھ یہ نہیں آیا کہ نصیبوں کو قصوروار سمجھا جائے یا :دل: کو۔ اکیلے پن کی وجہ، نصیب ہیں یا دل؟ یا پھر شاید، بربنائے دِل، اکیلے ہیں اور یہ بدنصیبی ہے سو، نصیب سے گلہ ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
قسمتیں لکھ رہی تھی جب تقدیر
کاش لکھ دیتی دل برائے دل

ہمیں محترم سرور عالم راز سرورؔ صاحب سے مکمل اتفاق ہے۔ ہماری بات، مفتان دین متین سے ہوئی اور انہوں نے تجویز کردہ شعر کو بُہت سراہا :) ساتھ قسمت سے شکایت کرنے پر لمبی لمبی تقیریں بھی فرمائیں جنہیں ہم سر جھکائے :ماشااللہ: اور :انشااللہ: کہہ کہہ کر سنتے رہے :(
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ناز انجامِ  دل لگی دیکھا
کون دنیا میں اب لگائے دل

محترم سرور عالم راز سرورؔ صاحب کے شکر گزار ہیں کہ ایک ترکیب سے متعلق ہمارے علم میں بھی اضافہ فرمایا۔ آپ کا شعر اور اُن کی تجویز دونوں ہی اچھے ہیں، البتہ اُن کی تجویز سے شعر کا مفہوم بدل سا گیا ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

یہ تھی فدوی کی بے لاگ رائے۔۔۔ امید ہے کہ فدوی کی رہنمائی اور خوب سرزنش کی جاوے گی۔ لیکن حقیقت یہ ہے کہ غزل ہمیں بُہت اچھی لگی۔ سو بھرپور داد ایک بار پھر قبول کیجے۔۔۔

دعا گو



عزیز مکرم وی بی جی :سلام شوق!

صآحب! آپ بھی کمال کرتے ہیں! یہ "محترم، محترم" ! اتنا شرمندہ نہ کریں۔ یہ تو وہی بات ہوئی کہ "کسی کی جان گئی، آپ کی ادا ٹھہری!" صرف نام لینے سے کیا آپ کا وضو ٹوٹ جاتا ہے؟  :)
رہ گیا اتفاق اور اختلاف کا معاملہ تو اس میں کیا مضائقہ ہے؟ ہر ایک کی سوچ مختلف ہوتی ہے۔ جہاں تک راگ راگنی کا تعلق ہے اس فن میں آپ ماہر ہیں۔ آپ کی رائے نہ مان کر ہمیں کچھ ملنا ملانا تو ہے نہیں، سو سر تسلیم خم ہے! باقی اشعار پر آپ کے خیالات پڑھ کر مسرت ہوئی۔ اور دوست بھی اسی طرح لکھیں تو لطف دو بالا ہو جائے۔ خیر، امید پر دنیا قائم ہے۔
آپ نے "سرزنش" استعمال کیا ہے۔ اب یہ لفظ نہت کم دکھائی دیتا ہے۔ اس پر مجھ کو اپنی ایک غزل یاد آ گئی۔ مطلع اور ایک شعر لکھتا ہوں:
کیا قیامت تھی، کیا قیامت تھی
صاحبو! ہم کو جب محبت تھی!

سرزنش کے لئے ہی آ جاتے
آپ کو اس میں کیا قباحت تھی؟
اب آپ سے ایک سوال ہے۔ مومن خاں مومن کا ایک شعر ہے :
اس غیرت ناہید کی ہر تان ہے دیپک
شعلہ سا لپک جائے ہے آواز تو دیکھو
گزارش ہے کہ دیپک راگ میں کیا واقعی ایسی تان ہوتی ہے کہ مومن اس کا خاص طور سے ذکر کر رہے ہیں۔ مومن کئی فنون میں ماہر تھے۔ رمل جفر حکمت، شاعری ۔ لیکن یہ علم نہیں کہ موسیقی میں بھی ہنرمند تھے کہ نہیں۔ آپ کے جواب کا انتظار رہے گا۔
باقی راوی سب چین بولتا ہے۔

« آخری ترمیم: فروری 03, 2015, 01:46:28 شام منجانب سرور عالم راز »



غیرحاضر vb jee

  • Adab Fehm
  • ****
  • تحریریں: 1232
  • جنس: مرد
جواب: جذبہء عشق ! ناخدائے دل !
« Reply #5 بروز: فروری 04, 2015, 09:22:43 صبح »
]معزز اراکینِ اردو انجمن ۔ آداب ۔
ایک غزل  پیش کرنے کی جسارت پھر کر رہی ہوں ۔ امید ہے کہ  میری اس کاوش مین موجود  کوتاہیوں  کی نشاندہی  کی جائے گی ۔  آپ کی توجہ اور    قدر دانی کے لئے بہت مشکور ہوں ۔     آپ کے چند الفاظ اس ناچیز کے لئے حوصلہ افزائی کا کام دیں گے  ۔ گر قبول افتد زہے عز و شرف ۔

غزل 

جذبہء عشق ! ناخدائے دل !
 سن  کبھی تو مری نوائے دل

کم نہ پائے گا حوصلہ میرا   
جس قرینے سے آزمائے دل

کوئی سرگم ہو، کوئی موسم ہو
راگ تیرا ہی گنگنائے دل

کوئی رستہ ہو ، کوئی منزل ہو
تیری جانب ہی تکتا جائے دل

ایسے غم سے تو ہم بھی بھرپائے
آنکھ ہنستی ہے روتا جائے دل

دیپ جلتا ہے رات بھر تنہا
بن مسافر ہے اب سرائے دل

بات ساری ہے بس نصیبوں کی
ہم اکیلے ہیں بربنائے دل

قسمتیں لکھ رہی تھی جب تقدیر
کاش لکھ دیتی دل برائے دل

ناز انجامِ  دل لگی دیکھا
 کون دنیا میں اب لگائے دل
 
[/size]


محترمہ ہما حمید ناز صاحبہ! سلام

اب ایسی استادانہ غزل پر ہم ایسے بیچارے کیا کہیں۔ سوائے داد کی واہ واہ کے۔ ہمیں بُہت پسند آئی یہ غزل۔ اس قدر سلجھے ہوئے مضامین کے ساتھ ایسا شائستہ بیان بھی۔ تاثرات بھی برقرار اور کلام کی پُختگی بھی، واضح۔ بھرپور داد قبول کیجے۔ اور اب اپنے آپ کو ہمارے اساتذہ میں شمار کیا کیجے :)

محترم سرور عالم راز سرورؔ صاحب کی تو کیا ہی بات ہے۔ ان کا تبصرہ کیسا علم افروز، سلجھا ہؤا اور بیان اس قدر شائستہ اور خوبصورت زبان میں ہوتا ہے کہ ہمیں رشک آتا ہے۔ اُن کا شکرگزار ہیں کہ اُن کے تبصرہ سے ہمیں بھی بُہت کُچھ سیکھنے کو ملتا ہے۔ اب معاملہ کُچھ یوں ہے کہ ایک آدھ جگہ غزل میں ہمارے خیالات اور رائے، محترم سرور عالم راز سرورؔ صاحب سے کُچھ مختلف ہے۔ ہمارے بس میں ہو تو اپنی رائے کو راوی ہی کے کنارے مُرغا بنا دیں، لیکن کیا کیجے کہ اس پر زور نہیں، سو پیش ہے۔ امید ہے خوب سرزنش ہو گی۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جذبہء عشق ! ناخدائے دل !
سن  کبھی تو مری نوائے دل

بھرپور داد۔ لیکن سچ یہ ہے کہ محترم سرور عالم راز سرورؔ صاحب کی تجویز ہمیں زیادہ اچھی لگ رہی ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کم نہ پائے گا حوصلہ میرا   
جس قرینے سے آزمائے دل

یہاں بھی محترم سرور عالم راز سرورؔ صاحب کی رائے اچھی ہے۔ لفظ :قرینے: ویسے بھی ادائگی میں مشکل سا محسوس ہوتا ہے ہمیں۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کوئی سرگم ہو، کوئی موسم ہو
راگ تیرا ہی گنگنائے دل

یہاں اختلاف ہے۔ جہاں تک ہمیں علم ہے، تکنیکی اعتبار سے، ہر راگ کی اپنی سرگم ہوتی ہے اور راگ کی پہچان ہی اس سرگم سے ہے۔ چنانچہ یہ کہنا درست نہیں ہو سکتا کہ کسی بھی سرگم میں ایک ہی راگ الاپا، ہمارا مقصد ہے، گنگنایا جا سکے۔ نیز :تان: کا بھی ایسا ہی حال ہے کہ کسی بھی تان کو آزادی سے کسی راگ میں نہیں لگایا جا سکتا، کیونکہ ہر راگ اپنی ہی سرگم پر مشتمل تانوں سے مل کر بنتا ہے۔ البتہ راگوں سے موسموں کا تعلق ہم سب جانتے ہی ہیں کہ اگرچہ راگوں کے موسم مختص ہیں، لیکن پھر بھی راگ تو موسم کو نظر انداز کرتے ہوئے بھی گا سکتے ہیں۔ تکنیکی اعتبار سے، راگوں کی تقسیم، سب سے پہلے :سپتک: کے سروں پر ہوتی ہے۔ اس کے بعد وقت اور موسم کے لحاظ سے۔ یہاں وقت کو پہلے آٹھ پہروں (جنہیں :ٹھاٹھ: بھی کہتے ہیں) میں تقسیم کیا جاتا ہے اور موسم باہر اور اندر کے دونوں ہی ہو سکتے ہیں۔ ایسی صورت میں کسی راگ کو بے وقت گایا جا سکتا ہے (جیسے ہم ابھی بے وقت کی راگنی الاپ رہے ہیں) اور بے موسم بھی۔ سو ہمارا خیال ہے کہ یہ مصرع کُچھ ایسے بہتر ہو گا

کوئی بھی وقت ہو کوئی موسم ۔۔۔۔۔ یا ۔۔۔۔۔ وقت کوئی ہو، کوئی موسم ہو ۔۔ وغیرہ

علاوہ ازیں لفظ :پہر: بھی :وقت: کی جگہ لایا جا سکتا ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کوئی رستہ ہو ، کوئی منزل ہو
تیری جانب ہی تکتا جائے دل

یہاں ہمیں، محترم سرور عالم راز سرورؔ صاحب سے مکمل اتفاق ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ایسے غم سے تو ہم بھی بھرپائے
آنکھ ہنستی ہے روتا جائے دل

:بھر پائے: ہم نے پہلے نہیں سُنا تھا۔ آپ کی وساطت سے سیکھا ہم نے سو شکر گزار بھی ہیں۔ اور آپ ہی کے بقول ایک لفظ بھی جس سے سیکھا جائے وہ استاد ہوتا ہے :)

محترم سرور عالم راز سرورؔ صاحب کی تجویز ہمیں اچھی لگی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

دیپ جلتا ہے رات بھر تنہا
بن مسافر ہے اب سرائے دل

ہمیں شعر بُہت اچھا لگا۔ محترم سرور عالم راز سرورؔ صاحب کی تجویز سے ہمیں اتفاق نہیں ہے۔ ظاہر ہے کہ ہماری کم فہمی ہو سکتی ہے۔ اُن کی تجویز یہیں لکھ دیتے ہیں

دیپ جلتا تھا رات بھر تنہا
بن مسافر رہی سرائے دل

یہاں پہلے مصرع میں :تھا: اور دوسرے میں :رہی: ہمیں ٹھیک نہیں لگ رہا گویا یہ ویسا ہی مسئلہ محسوس ہو رہا ہے جس پر ہمارے محترم خاک زنبیلی صاحب،  ماضی استمراری اور ماضی مطلق اور جانے ایسے ہی کتنے مشکل لفظوں سے سمجھایا کرتے تھے، اور ہمیں صرف تاثرات سے اُن کی بات سمجھ آ جاتی تھی، بالکل ویسے ہی جیسے ہم پشتو، پٹھانوں کے چہرے کے اتار چڑھاؤ سے سمجھ جاتے ہیں کہ :خان صاحب غصے میں ہیں: :خان صاحب احتجاج کر رہے ہیں: یا :خان صاحب خوش ہوئے ہیں: وغیرہ :)

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بات ساری ہے بس نصیبوں کی
ہم اکیلے ہیں بربنائے دل

محترم سرور عالم راز سرورؔ صاحب نے ایسے ہی تو داد نہیں دی ہو گی، شعر یقیناً اچھا ہے، اگر ہمیں سمجھ نہیں آیا تو کیا۔ :) ۔۔ لیکن ہماری عقل یہاں بھی ہمارا ساتھ نہیں دے رہی۔ سمجھ یہ نہیں آیا کہ نصیبوں کو قصوروار سمجھا جائے یا :دل: کو۔ اکیلے پن کی وجہ، نصیب ہیں یا دل؟ یا پھر شاید، بربنائے دِل، اکیلے ہیں اور یہ بدنصیبی ہے سو، نصیب سے گلہ ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
قسمتیں لکھ رہی تھی جب تقدیر
کاش لکھ دیتی دل برائے دل

ہمیں محترم سرور عالم راز سرورؔ صاحب سے مکمل اتفاق ہے۔ ہماری بات، مفتان دین متین سے ہوئی اور انہوں نے تجویز کردہ شعر کو بُہت سراہا :) ساتھ قسمت سے شکایت کرنے پر لمبی لمبی تقیریں بھی فرمائیں جنہیں ہم سر جھکائے :ماشااللہ: اور :انشااللہ: کہہ کہہ کر سنتے رہے :(
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ناز انجامِ  دل لگی دیکھا
کون دنیا میں اب لگائے دل

محترم سرور عالم راز سرورؔ صاحب کے شکر گزار ہیں کہ ایک ترکیب سے متعلق ہمارے علم میں بھی اضافہ فرمایا۔ آپ کا شعر اور اُن کی تجویز دونوں ہی اچھے ہیں، البتہ اُن کی تجویز سے شعر کا مفہوم بدل سا گیا ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

یہ تھی فدوی کی بے لاگ رائے۔۔۔ امید ہے کہ فدوی کی رہنمائی اور خوب سرزنش کی جاوے گی۔ لیکن حقیقت یہ ہے کہ غزل ہمیں بُہت اچھی لگی۔ سو بھرپور داد ایک بار پھر قبول کیجے۔۔۔

دعا گو



عزیز مکرم وی بی جی :سلام شوق!

صآحب! آپ بھی کمال کرتے ہیں! یہ "محترم، محترم" ! اتنا شرمندہ نہ کریں۔ یہ تو وہی بات ہوئی کہ "کسی کی جان گئی، آپ کی ادا ٹھہری!" صرف نام لینے سے کیا آپ کا وضو ٹوٹ جاتا ہے؟  :)
رہ گیا اتفاق اور اختلاف کا معاملہ تو اس میں کیا مضائقہ ہے؟ ہر ایک کی سوچ مختلف ہوتی ہے۔ جہاں تک راگ راگنی کا تعلق ہے اس فن میں آپ ماہر ہیں۔ آپ کی رائے نہ مان کر ہمیں کچھ ملنا ملانا تو ہے نہیں، سو سر تسلیم خم ہے! باقی اشعار پر آپ کے خیالات پڑھ کر مسرت ہوئی۔ اور دوست بھی اسی طرح لکھیں تو لطف دو بالا ہو جائے۔ خیر، امید پر دنیا قائم ہے۔
آپ نے "سرزنش" استعمال کیا ہے۔ اب یہ لفظ نہت کم دکھائی دیتا ہے۔ اس پر مجھ کو اپنی ایک غزل یاد آ گئی۔ مطلع اور ایک شعر لکھتا ہوں:
کیا قیامت تھی، کیا قیامت تھی
صاحبو! ہم کو جب محبت تھی!

سرزنش کے لئے ہی آ جاتے
آپ کو اس میں کیا قباحت تھی؟
اب آپ سے ایک سوال ہے۔ مومن خاں مومن کا ایک شعر ہے :
اس غیرت ناہید کی ہر تان ہے دیپک
شعلہ سا لپک جائے ہے آواز تو دیکھو
گزارش ہے کہ دیپک راگ میں کیا واقعی ایسی تان ہوتی ہے کہ مومن اس کا خاص طور سے ذکر کر رہے ہیں۔ مومن کئی فنون میں ماہر تھے۔ رمل جفر حکمت، شاعری ۔ لیکن یہ علم نہیں کہ موسیقی میں بھی ہنرمند تھے کہ نہیں۔ آپ کے جواب کا انتظار رہے گا۔
باقی راوی سب چین بولتا ہے۔

محترمی و مکرمی و محبی، جناب سیدنا حضرت سرور عالم راز سرورؔ رحمتہ اللہ صاحب! اسلام علیکم :)

حضور! مانا کہ ہماری عمر بھی اتنی تو ہو ہی گئی ہے کہ ہر بُری بات، سچ مُچ بُری ہی لگنے لگ گئی ہے نیز محلے کی خواتین نے بھی اب ہم سے پردہ کرنا چھوڑ دیا ہے لیکن ابھی ایسا وقت نہیں آیا کہ ہم آنجناب کو فقط نام سے مخاطب کرنے کے جسارت کر سکیں۔ برقی مراسلہِ ہذا کے کلماتِ تخاطب کو مدِ نظر رکھتے ہوئے آپ اندازہ لگا ہی سکتے ہیں، کہ ہم نے گزشتہ مراسلہ میں فقط :محترم اور صاحب: لکھ کر کتنی رعایت دے رکھی تھی۔ دوسری بات یہ کہ ایک تو آپ کا نام پورا لکھنا ہے ہی بُہت آسان، جو محاورتاً نہیں بلکہ حقیقتاً ہمارے بائیں ہاتھ کا کھیل ہے۔ کیونکہ  :سرور عالم راز سرور: لکھنے میں صرف :ل اور م: ہمیں دائیں ہاتھ سے لکھنے پڑتے ہیں :) ۔۔۔ نیز اب کمپیوٹر کی سہولت برائے نقل  و چسپاں نے بھی یہ کام آسان کر دیا ہے :) سو کوئی ایسی بات نہیں۔

اگرچہ ہماری عمر کا بھید، ابھی تک ہمارے اپنے اوپر بھی نہیں کھُل سکا، لیکن بالفرض، ہم آپ کے ہم عمر بھی ہوں تو بھی بقول سعدیؔ مرحوم کہ بزرگی بہ عقل ہست نہ بہ سال، اپنے آپ کو آپ سے بُہت چھوٹا تصور کرتے۔ ظاہر ہے کہ اگر ہمارا سر جو اب مولوی محمد اسماعیل میرٹھی کے گنبدِ مینا کے مصداق ۔۔۔

؎ بنایا ہے کیا دستِ قدرت نے گول
چُرس ہے، نہ جھُری، نہ سِلوٹ نہ جھول

ایسا سہی، لیکن ضروری تو نہیں کہ اس میں عقل بھی ہو۔ سو آپ ہمارے بزرگ و برتر ہیں، چنانچہ اس پیری میں یہ حقِ مریدی ہم سے نہ چھینئیے :) ۔۔ ویسے سچ تو یہ ہے کہ زیرِ عتاب غزل پر تبصرہ، ہم نے آپ کے تبصرہ کی وساطت سے فقط اس لیئے کیا تھا کہ آپ سے کُچھ ہم کلامی کا شرف مل سکے، وگرنہ آپ جس غزل پر اپنی ماہرانہ رائے دے جائیں، وہاں ہم ایسے ناہنجاروں کا کیا کلام۔

اب ان اشعار پر ناچیز کی داد قبول کیجے۔ کیا ہی سادہ سے الفاظ اور مضامین ہیں، لیکن :صاحبو: پڑھ کر زیادہ مزا آیا۔ :)

کیا قیامت تھی، کیا قیامت تھی
صاحبو! ہم کو جب محبت تھی!

سرزنش کے لئے ہی آ جاتے
آپ کو اس میں کیا قباحت تھی؟

اب آتے ہیں سوال کی جانب۔ پہلے تو عرض ہے کہ ہمیں راگ راگنیوں کا ماہر کہہ کہ شرمندہ نہ کریں، ہماری تو کیا اوقات، یہاں تو بڑے بڑے استاد گائیک بھی شرمندہ نظر آتے ہیں۔ جو تھوڑا بُہت علم ہے احباب کے سامنے رکھنے کی کوشش کرتے ہیں۔ البتہ سوال پر کافی دیر غور کرتے رہے، جس کی وجہ سے یہ ہمیں دو رُخہ معلوم ہونے لگا ہے۔ شعر یہیں درج کرتے ہیں۔

اس غیرت ناہید کی ہر تان ہے دیپک
شعلہ سا لپک جائے ہے آواز تو دیکھو

ایک تو کہ شعر میں مومنؔ میاں نے، کسی محترمہ ناہید :) کی ہر تان کو دیپک کہہ دیا چنانچہ سوال ہو سکتا ہے کہ ہم نے کیسے کہہ دیا کہ ہر تان کسی ایک راگ میں نہیں لگ سکتی؟

جواباً استدعا ہے، کہ ایک تو شعر نے یہ نہیں کہا کہ محترمہ ناہید، دیپک کے علاوہ بھی کوئی تانیں لگاتی ہیں۔ دوسرا یہ کہ اگر فرض بھی کر لیا جائے کہ محترمہ ناہید مختلف راگوں کی تانیں لگاتی ہیں تو بھی اسے استعارہ کے طور پر دیپک کہا گیا ہے کیونکہ اس کی تاثیر شاعر کو شعلہ صفت معلوم ہو رہی ہے۔ دوسری طرف محترمہ ہما حمید ناز صاحبہ  :) کی تان اور سرگم کا معاملہ ہے، جہاں کسی بھی تان اور کسی بھی سرگم میں کسی مخصوص راگ گانے کی بات ہو رہی ہے جو تکنیکی اعتبار سے ہمیں درست نہیں معلوم ہو رہا، بلکہ قابلِ دست اندازیِ میراثیانِ ہند، جرم ہے۔

دوسرا رُخ جو زیادہ واضح ہے، وہ یہ کہ کیا دیپک میں کوئی ایسی تان ہوتی ہے جس سے شعلہ سا لپک جائے؟

اس ضمن میں ہمارا ذاتی خیال تو یہی ہے کہ ایسا نہیں، قدرت نے یہ آتش فشاں نما اور لاوا اُگلتا گلہ صرف محترمہ ناہید (یا پھر ہماری بیگم) ہی کو تفویض کیا، لیکن ماہرینِ فنِ موسیقی اس سے کُچھ اختلاف رکھتے ہیں، اور پھر ماہرین نفسیات مذید اختلاف در اختلاف رکھتے ہیں۔ آپ کے قیمتی وقت کا ضیاع تو ہوگا، لیکن ہمارا جی چاہ رہا ہے کہ تھوڑا سا تفصیلاً لکھ دیں۔ غلطی سے سہی، شاید کوئی کام کی بات، ہم بھی کر ہی جائیں، کیونکہ غلطی تو انسانوں سے بھی ہو جاتی ہے۔ :)

زمانہ سلف کے ماہرین موسیقی نے، راگوں کے وقت اور موسموں کا تعین کیا۔ راگ دیپک کے موسم انہوں نے :گرم: یعنی جیٹھ اور اساڑھ بیان کئیے ہیں۔ اگر انہیں ماہرین کی سُنیں تو فرماتے ہیں کہ :یہ راگ موسیقار جانور کی آواز سے نکلا ہے: اور اس راگ کی بیان کردہ شکل دیکھیں تو اس میں ایسی کوئی بات نہیں کہ شعلے بھڑک آٹھیں۔ آپ بھی پڑھیے اور لطف لیجے۔

راگ دیپک
شکل: مرد سرخ رنگ لباس مختلف الوان کا پہنے۔ مالا موتیوں کی گلے میں ڈالے اندھیرے کمرے میں بیٹھا ہے لیکن اس کے پیشانی کے نُور سے در و دیوار روشن ہو رہے ہیں۔

راگ دیپک کی راگنیاں
1. دیسی ، 2. کامود، 3. نٹ، 4. کدارا، 5. کانہڑا کرناٹی

ان راگنیوں کی اشکال اور مزید اس راگ کے :پُتر بھارجا: (یعنی بیٹے اور اُن کی بیویوں) اور اُن کی اشکال کا ذکر کریں تو آپ ہمارے مراسلے کے بعد ناصرؔ کا یہ معروف مصرع کُچھ یوں پڑھیں گے (عجیب :منحوس: اجنبی تھا، مجھے تو :حریان: کر گیا وہ) :)

اگرچہ یہ راگ گرم موسم سے منسلک ہے، لیکن، کہیں یہ ذکر نہیں کہ شعلہ بھڑک اُٹھیں۔ البتہ یہ بات مشہور تب ہوئی جب شہنشاہ اکبر کے دؤر میں، تان ثین نے یہ راگ گا کر پانی سے بھرے دیپ روشن کر دئیے۔ مشہور یہی ہے، لیکن ہمارا خیال ہے کہ اکبر جیسا بادشاہ کہے اور دیپ نہ جلیں یہ کیسے ممکن تھا۔ یہ راگ اب متروک ہے، اور شاذ ہی کسی نے گایا ہو۔ گائیک کہتے ہیں کہ جب تک ایسی تاثیر نہ پیدا کر لیں، وہ یہ راگ نہیں گائیں گے۔

ماہرینِ نفسیات کا کہنا ہے کہ راگوں کی تاثیر کا معاملہ نفسیاتی ذیادہ ہے، (اگرچہ راقم الحروف نہیں سمجھتا کہ بزرگانِ موسیقی اتنے بے وقوف تھے) اور اس میں شاعری کا اہم کردار ہے۔ ہوتا یہ تھا کہ مخصوص قسم کی نظموں یا شاعری کو مخصوص راگوں میں گایا جاتا تھا چنانچہ اداس اور بوجھل تاثرات والا کلام اُن راگوں میں گایا جاتا تھا جن میں کومل سُر زیادہ ہوں، علاوہ ازیں سُر بھی ایک دوسرے سے فاصلے پر نہ لگتے ہوں یعنی سا رے گا ما پا دھا نی اور نی دھا ما کی طرح بالترتیب اتار چڑھاؤ ہو نیز یہ شام اور صبح کو گائے جاتے کیونکہ گائیک کا ذہن بھی نیم بیداری کی کیفیت میں ہوتا اور تیز سُر لگانے کے قابل نہ ہوتا۔ خوش قسم کے تاثرات والا کلام ایسے راگوں میں گایا جاتا جن کی ادائگی مشکل اور تیز ہو جائے جیسے سا دھا رے سا ما نی گا سا پا وغیرہ۔ ایسے راگ چاق و چوبند ذہن کی حالت میں یعنی دن میں گایا جاتا۔ وقت کے ساتھ لوگوں کے ذہن جب بھی کوئی راگ سُنتے تو انہیں وہ کیفیت یا تاثرات یاد آ جاتے جو مختلف نظموں کے الفاظ میں وہ سنتے آئے تھے لہذٰہ، راگوں کو سن کر لوگوں کو مختلف کیفیات محسوس ہونے لگیں۔

صاحب! اب پڑھ پڑھ کر آپ تھک چُکے ہونگے، سو یہیں ختم کرتے ہیں کہ زیادہ علم تو اب اساتذہ کو بھی نہیں رہا۔ راگ دیپک سے دیپ جلیں نہ جلیں یہ بات واضح ہے کہ اب یہ فن، عروض سے زیادہ مشکل میں ہے۔ یہ بھی عروض کی طرح کئی سکہ بند اصولوں پر قائم ہے، لیکن اس کا علم رکھنے والے اب ناپید ہو چُکے ہیں۔ ایسے لوگ تو شاید اب بھی کئی ہیں، جو ڈھونڈ ڈھونڈ کر راگ سُنتے ہیں، لیکن ایسے لوگ معلوم نہیں اب ہیں بھی یا نہیں، جو کوئل کی آواز میں پُکار محسوس کر سکتے ہوں، راگ سوہنی سُنتے سانسیں اُکھڑتی ہوں، پہاڑی کے وین رُلا دیتے ہوں، کسی کُتیا کا رونا سُن کر ساتھ رو دیتے ہوں۔ خاموش رات کے کسی پہر، لکڑیوں کے جلنے، سلگنے اور چٹخنے کے ماحول کو دیپک کی الاپ میں محسوس کر سکتے ہوں۔ 

اللہ تمام علوم کا مالک ہے۔

دُعا گو

گنگناتی رهے گی انھیں تو سدا
اتنے نغمے تِرے نام کر جائیں گے

غیرحاضر ہما حمید ناز

  • Adab Aashnaa
  • *
  • تحریریں: 15
  • جنس: عورت
  • زندگی کو خوبصورتی سے جینا بھی ایک آرٹ ہے
جواب: جذبہء عشق ! ناخدائے دل !
« Reply #6 بروز: فروری 04, 2015, 10:42:47 صبح »

عزیزہ ناز صاحبہ:سلام مسنون!
آپ کی غزل دیکھی۔ میں اس سےقبل بھی شاید لکھ چکا ہوں کہ آپ کی مشق کافی پرانی معلوم ہوتی ہے۔ زبان و بیان، وزن وبحر پر آپ کو خاصہ عبور ہے۔ اس مرتبہ آپ نے ایک چھوٹی بحر اور مشکل زمین میں غزل کہی ہے جو آپ کی خود اعتمادی کی نشانی ہے۔ اردو انجمن میں ایک باب نو آموز دوستوں کی اصلاح کے لئے مخصوص ہے۔ دوسرے ابواب میں اصلاح نہیں بلکہ صرف رائے دی جاتی ہے جسے میں "فکر بہ آواز بلند" کہتا ہوں۔ یعنی کسی کے کلام پر اپنی سوچ کا اظہار۔ ضروری نہیں کہ آپ دوسروں کی رائے سے متفق ہوں اور اختلاف کی صورت میں کوئی برا ماننے والا بھی نہیں ہے۔ تبادلہؑ خیال سے نئی سوچوں کی راہ کھل سکتی ہے اور یہی اس کوشش کا مقصد ہے۔
آپ کی غزل پر عمومی داد کے بعد چند باتیں کہنے کی اجازت چاہتا ہوں۔ آپ کے بے لاگ خیالات کا انتظار رہے گا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جذبہء عشق ! ناخدائے دل !
 سن  کبھی تو مری نوائے دل
مطلع اچھا ہے۔ داد حاضر ہے۔ ایک صورت ذہن میں آئی سو لکھتا ہوں۔ یہ بندش "عشق" کی شدت کو کم رکھتی ہے اور نسبتا نرم لہجہ میں ہے۔ 
جذبہء شوق، نا خدائے دل!
کاش سن لے مری نوائے دل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کم نہ پائے گا حوصلہ میرا   
جس قرینے سے آزمائے دل
دونوں مصرعے مجھ کو کمزور بندش کے محسوس ہوئے۔ عام طور سے "دل" خود آزمائش میں مبتلا ہوتا ہے لیکن آپ کے یہاں آپ کا دل آپ کو ہی آزمارہا ہے۔ ایک سوچ یہ ہے، شاید کسی قابل ہو:
کم نہیں ہوگا حوصلہ میرا
جس طرح چاہے آزمائے دل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کوئی سرگم ہو، کوئی موسم ہو
راگ تیرا ہی گنگنائے دل
میں جانتا ہوں کہ موسموں سے بھی راگوں کا رشتہ ہے۔ البتہ میری سوچ کچھ اس طرح مرتب ہوئی:
کوئی ہو تان، کوئی سرگم ہو
راگ تیرا ہی گنگنائے دل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کوئی رستہ ہو ، کوئی منزل ہو
تیری جانب ہی تکتا جائے دل
میرا خیال ہے کہ یہاں آپ قافیہ پیمائی کا شکار ہو گئی ہیں۔ شعر اچھا نہیں ہے۔ بندش بھی سست ہے اور مضمون بھی کمزور۔ جب محبوب اس طرح نظر آرہا ہے کہ آپ اس کو دیکھ سکتی ہیں تو پھر دوسری راہ پر کسی اور منزل کی جانب آپ کے قدم کیوںکر اٹھ سکتے ہیں؟ اس شعر کو پھر سے سوچنے کی ضرورت ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایسے غم سے تو ہم بھی بھرپائے
آنکھ ہنستی ہے روتا جائے دل
دوسرا ،صرع کیسا تیکھا ہے اور پہلا کتنا پھیکا!مزید یہ کہ آپ نے "ہم بھی بھر پائے" لکھا ہے گویا آپ کے علاوہ اور بھی اس غم میں گرفتار ہیں۔ سو پھر آپ کی محبت کی انفرادیت کہاں رہی؟ شعر کا رنگ ذرا سا بدلئے تو ایک صورت ذہن میں آتی ہے، دوسری آپ سوچ ہی لیں گی:
ہائے مجبوریاں محبت کی!
آنکھ ہنستی ہے، روتا جائے دل!
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دیپ جلتا ہے رات بھر تنہا
بن مسافر ہے اب سرائے دل
خیال خوبصورت ہے، بیان شاید اور نکھر سکتا ہے۔ یہ صورت دیکھئے، شاید پسند آئے یا ایسی ہی کوئی اور شکل۔ دو الفاظ بدلنے سے فرق تو محسوس ہوتا ہے۔
دیپ جلتا تھا رات بھر تنہا
بن مسافر رہی سرائے دل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بات ساری ہے بس نصیبوں کی
ہم اکیلے ہیں بربنائے دل
خوب کہا ہے آپ نے۔ داد!
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
قسمتیں لکھ رہی تھی جب تقدیر
کاش لکھ دیتی دل برائے دل
یہ بھی قافیہ پیمائی کی کوشش ہے۔ آپ "برائے" باندھنا چاہتی تھیں سو یہ صورت بنی لیکن بات نہیں بنی۔ تقدیر آپ کی قسمتیں لکھ رہی تھی؟ قسمت اور تقدیر ایک ہی چیز نہیں ہے؟ سہگل کا گانا سنا ہوگا آپ نے :
اے کاتب تقدیر مجھے اتنا بتا دے
کیوں مجھ سے خفا ہے تو ، کیا میں نے کیا ہے
اوروں کو خوشی مجھ کو فقط درد و رنج و غم
دنیا کو ہنسی اور مجھے رونا دیا ہے
تو کسی طرح "کاتب تقدیر" کو اس شعر کی خدمت میں کیوں نہ لگایا جائے!
کیا ترا جاتا کاتب تقدیر؟
تو جو لکھ دیتا دل برائے دل
دیکھئے مفتیان دین متین بیچ اس مسئلہ کے کیا کہتے ہیں!  :)
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ناز انجامِ  دل لگی دیکھا
 کون دنیا میں اب لگائے دل
اس شعر سے ایک سوال پیدا ہوتا ہے۔ "دل" فارسی ہے اور "لگی" ہندوستانی، چنانچہ ان کو ملا کر ادب میں "دل لگی" ترکیب بنانا خلاف اصول ہے لیکن شاعری میں "دل لگی" سب نے دیکھا ہے ۔
دل لگی ہی دل لگی میں دل چرا کر چل دئے
ہم یہ کہتے ہی رہے، یہ دل لگی اچھی نہیں !
خیر آپ یہ دیکھئے اور اپنی رائے دیجئے۔
"ناز" ! انجام دل لگی دیکھا؟
کون کس دل سے اب لگائے دل!
امید ہے کہ اپنے خیالات سے ضرور آگاہ کریں گی۔ باقی راوی سب چین بولتا ہے۔

سرور عالم راز "سرور"


 





جناب محترم سرور عالم راز  صاحب ۔  آداب ۔
اظہارِ تشکر کے لئے الفاظ ڈھونڈنے میں تاخیر ہوئی ۔  الفاظ تو پھر بھی نہ ملے لیکن شکریہ تو لازمی ہے اس لئے    بہت خلوص کے ساتھ آپ کا انتہائے شکریہ۔
 آ پ کی اصلاح نے میرے عام سے  اشعار کو    کیا خوب سنوارا ہے  اور بعض اشعار کو تو بہت ہی  خوبصورت بنادیا ہے ۔ خاس طور پر مطلع  بہت ہی نکھر  گیا ہے ۔  اس کے لئے  میں جتنا شکریہ ادا کروں کم ہے ۔  آپ کی اصلاح کے مطابق میں نے غزل میں  تبدیلیاں کردی ہیں ۔  ایک ٓدھ جگہ آ پ سے مودبانہ اختلاف کی جرات کروں گی ۔ امید ہے     درگزر سے کام لیں گے ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کم نہ پائے گا حوصلہ میرا   
جس قرینے سے آزمائے دل
اس شعر میں  اس کشمکش کی طرف اشارہ کرنے کی کوشش  کی تھی  جو دل کی دم  بہ دم  نئی خواہشات ( جو اکثر متضاد  بھی ہوتی  ہیں ) اور عقلی اور دنیاوی تقاضوں کے درمیاں جاری رہتی ہے ۔ اس حوالے سے دیکھا جائے تو خود ہمارا دل  انوکھی اور ناممکن خواہشات کر کے  خود ہمیں کو  ایک آزمائش مین مبتلا کردیتا ہے ۔  اور ہمیں اس سے  نبٹنا پڑتا ہے ۔   چونکہ بات موسیقی اور فلمی گانوں کی بھی ہورہی ہے اس لئے یہاں میں بھی ایک مشہورِ عام گانے کا  حوالہ دونگی ۔
باوری چکوری کرے   دنیا سے چوری چوری
چندا سے پیا ر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کوئی سرگم ہو، کوئی موسم ہو
راگ تیرا ہی گنگنائے دل
 اس شعر میں میں نے سرگم کو اس کے مقبولِ عام معنوں میں استعمال کیا  ہے  یعنی   سُر یا ساز ۔ آپ اہلِ علم لوگ  ہیں اور اس ایک لفظ میں سے  کیا کیا نکات نکا لے ہیں ۔ لیکن میں سمجھتی ہوں کہ ایک عام شخص ان سے ناواقف ہے اور سرگم کا مطلب سُر یا  ساز  ہی سمجھے گا ۔   موسم کا حوالہ اس شعر میں صرف  یہ بتانے کے لئے استعمال کیا  ہے کہ  میں تیرا راگ  سارا سال بلکہ سالوں سے گنگنارہی ہوں ۔ یہاں موسم ایک طویل وقت کی طرف اشارہ کرتا ہے  اور میری ناچیز رائے میں شعر کی گہرائی میں اضافہ کرتا ہے ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کوئی رستہ ہو ، کوئی منزل ہو
تیری جانب ہی تکتا جائے دل
آپکے مشورے کے مطابق اس پر نظر  ِثانی کی ہے ۔
کوئی منظر ہو ، کوئی عالم ہو
تیری جانب ہی دیکھے جائے دل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دیپ جلتا ہے رات بھر تنہا
بن مسافر ہے اب سرائے دل
 اس شعر پر آپ کی اصلاح بات کو   کچھ الجھارہی ہے  جس کے بارے میں محترم وی بی جی نے بھی لکھا ہے ۔  میں آپ کی بات سمجھ رہی ہوں کی دوسرے مصرع میں ــ   ہے اب  کو نکال کر کوئی ایک لفظ رکھنا چاہئے ۔ لیکن  اب تک کچھ متبادل سمجھ مین نہیں آیا ۔
دیپ جلتا  ہے رات بھر تنہا
بن مسافر  ہوئی سرائے دل
 لیکن بن مسافر ہوئی سرائے دل بھی  کچھ بہتر نہیں لگتا  ۔   بن مسافر ہے اب سرائے دل پھر بہتر لگتا  ہے اس سے ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
قسمتیں لکھ رہی تھی جب تقدیر
کاش لکھ دیتی دل برائے دل

یہاں دراصل مجھ سے  نقل کرنے میں غلطی ہوئی ۔ پہلا مصرع  اصل میں یو ں ہے :  قسمتیں لکھ رہی تھی جب  قدرت
لیکن کاغذ پر اتنی کاٹ پیٹ  ہوچکی تھی  کہ کمپیوٹر پر نقل کرتے وقت  قدرت کے بجائے  تقدیر لکھ  دیا ۔ آ پ درست کہتے ہیں کہ قسمت اور تقدیر  تو ہم معنی ہیں ۔  شعر میں اشارہ اسی طرف ہے کہ جوڑے آسمان پر بنائے جاتے ہیں ۔ وغیرہ وغیرہ  ۔ 
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ناز انجامِ  دل لگی دیکھا
 کون دنیا میں اب لگائے دل

نہایت معذرت کیساتھ  عرض ہے کہ اس شعر پر آپکی اصلاح تع بہت اچھی ہے لیکن  اس سے شعر کا  مرکزی خیال بدل گیا ہے  ۔   اس شعر میں جو  کہنے کی کوشش کی ہے وہ یہ ہے    محبت کی ناکامی کے بعد عام طور پر لوگ دنیا سے کنارہ کش ہو جاتے ہیں   ۔ پھر دوست احباب سمجھاتے ہیں کہ   دنیا میں اور بھی بہت کچھ ہے ۔ دنیا میں دل لگاؤ ۔ زندہ رہو  ۔ وغیرہ وغیرہ ۔ اسی طرف اشارہ ہے کہ  ایک دفعہ دل لگا کر انجام دیکھ لیا سو اب کون دنیا سے دل لگائے ۔ شاید  شعر  مین اس بات کا ابلاغ پوری طرح نہیں ہو پایا ۔
 
استادِ محترم  ۔ ایک بار پھر آپ کی محبت اور توجہ کے لئے شکر گزار ہوں   ۔   آپ نے اتنا وقت دیا اس کے  لئے آپکے حق مین دعاگو ہوں ۔
ناچیز
ہما حمید ناز
« آخری ترمیم: فروری 04, 2015, 11:32:49 صبح منجانب ہما حمید ناز »
خود کو سدھارلیجیئے ۔ معاشرےسے ایک برا انسان کم ہوجائے گا ۔ . (ایک  مفکر  کا قول)

غیرحاضر ہما حمید ناز

  • Adab Aashnaa
  • *
  • تحریریں: 15
  • جنس: عورت
  • زندگی کو خوبصورتی سے جینا بھی ایک آرٹ ہے
جواب: جذبہء عشق ! ناخدائے دل !
« Reply #7 بروز: فروری 04, 2015, 11:19:07 صبح »
]معزز اراکینِ اردو انجمن ۔ آداب ۔
ایک غزل  پیش کرنے کی جسارت پھر کر رہی ہوں ۔ امید ہے کہ  میری اس کاوش مین موجود  کوتاہیوں  کی نشاندہی  کی جائے گی ۔  آپ کی توجہ اور    قدر دانی کے لئے بہت مشکور ہوں ۔     آپ کے چند الفاظ اس ناچیز کے لئے حوصلہ افزائی کا کام دیں گے  ۔ گر قبول افتد زہے عز و شرف ۔

غزل 

جذبہء عشق ! ناخدائے دل !
 سن  کبھی تو مری نوائے دل

کم نہ پائے گا حوصلہ میرا   
جس قرینے سے آزمائے دل

کوئی سرگم ہو، کوئی موسم ہو
راگ تیرا ہی گنگنائے دل

کوئی رستہ ہو ، کوئی منزل ہو
تیری جانب ہی تکتا جائے دل

ایسے غم سے تو ہم بھی بھرپائے
آنکھ ہنستی ہے روتا جائے دل

دیپ جلتا ہے رات بھر تنہا
بن مسافر ہے اب سرائے دل

بات ساری ہے بس نصیبوں کی
ہم اکیلے ہیں بربنائے دل

قسمتیں لکھ رہی تھی جب تقدیر
کاش لکھ دیتی دل برائے دل

ناز انجامِ  دل لگی دیکھا
 کون دنیا میں اب لگائے دل
 
[/size]


محترمہ ہما حمید ناز صاحبہ! سلام

اب ایسی استادانہ غزل پر ہم ایسے بیچارے کیا کہیں۔ سوائے داد کی واہ واہ کے۔ ہمیں بُہت پسند آئی یہ غزل۔ اس قدر سلجھے ہوئے مضامین کے ساتھ ایسا شائستہ بیان بھی۔ تاثرات بھی برقرار اور کلام کی پُختگی بھی، واضح۔ بھرپور داد قبول کیجے۔ اور اب اپنے آپ کو ہمارے اساتذہ میں شمار کیا کیجے :)

محترم سرور عالم راز سرورؔ صاحب کی تو کیا ہی بات ہے۔ ان کا تبصرہ کیسا علم افروز، سلجھا ہؤا اور بیان اس قدر شائستہ اور خوبصورت زبان میں ہوتا ہے کہ ہمیں رشک آتا ہے۔ اُن کا شکرگزار ہیں کہ اُن کے تبصرہ سے ہمیں بھی بُہت کُچھ سیکھنے کو ملتا ہے۔ اب معاملہ کُچھ یوں ہے کہ ایک آدھ جگہ غزل میں ہمارے خیالات اور رائے، محترم سرور عالم راز سرورؔ صاحب سے کُچھ مختلف ہے۔ ہمارے بس میں ہو تو اپنی رائے کو راوی ہی کے کنارے مُرغا بنا دیں، لیکن کیا کیجے کہ اس پر زور نہیں، سو پیش ہے۔ امید ہے خوب سرزنش ہو گی۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جذبہء عشق ! ناخدائے دل !
سن  کبھی تو مری نوائے دل

بھرپور داد۔ لیکن سچ یہ ہے کہ محترم سرور عالم راز سرورؔ صاحب کی تجویز ہمیں زیادہ اچھی لگ رہی ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کم نہ پائے گا حوصلہ میرا   
جس قرینے سے آزمائے دل

یہاں بھی محترم سرور عالم راز سرورؔ صاحب کی رائے اچھی ہے۔ لفظ :قرینے: ویسے بھی ادائگی میں مشکل سا محسوس ہوتا ہے ہمیں۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کوئی سرگم ہو، کوئی موسم ہو
راگ تیرا ہی گنگنائے دل

یہاں اختلاف ہے۔ جہاں تک ہمیں علم ہے، تکنیکی اعتبار سے، ہر راگ کی اپنی سرگم ہوتی ہے اور راگ کی پہچان ہی اس سرگم سے ہے۔ چنانچہ یہ کہنا درست نہیں ہو سکتا کہ کسی بھی سرگم میں ایک ہی راگ الاپا، ہمارا مقصد ہے، گنگنایا جا سکے۔ نیز :تان: کا بھی ایسا ہی حال ہے کہ کسی بھی تان کو آزادی سے کسی راگ میں نہیں لگایا جا سکتا، کیونکہ ہر راگ اپنی ہی سرگم پر مشتمل تانوں سے مل کر بنتا ہے۔ البتہ راگوں سے موسموں کا تعلق ہم سب جانتے ہی ہیں کہ اگرچہ راگوں کے موسم مختص ہیں، لیکن پھر بھی راگ تو موسم کو نظر انداز کرتے ہوئے بھی گا سکتے ہیں۔ تکنیکی اعتبار سے، راگوں کی تقسیم، سب سے پہلے :سپتک: کے سروں پر ہوتی ہے۔ اس کے بعد وقت اور موسم کے لحاظ سے۔ یہاں وقت کو پہلے آٹھ پہروں (جنہیں :ٹھاٹھ: بھی کہتے ہیں) میں تقسیم کیا جاتا ہے اور موسم باہر اور اندر کے دونوں ہی ہو سکتے ہیں۔ ایسی صورت میں کسی راگ کو بے وقت گایا جا سکتا ہے (جیسے ہم ابھی بے وقت کی راگنی الاپ رہے ہیں) اور بے موسم بھی۔ سو ہمارا خیال ہے کہ یہ مصرع کُچھ ایسے بہتر ہو گا

کوئی بھی وقت ہو کوئی موسم ۔۔۔۔۔ یا ۔۔۔۔۔ وقت کوئی ہو، کوئی موسم ہو ۔۔ وغیرہ

علاوہ ازیں لفظ :پہر: بھی :وقت: کی جگہ لایا جا سکتا ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کوئی رستہ ہو ، کوئی منزل ہو
تیری جانب ہی تکتا جائے دل

یہاں ہمیں، محترم سرور عالم راز سرورؔ صاحب سے مکمل اتفاق ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ایسے غم سے تو ہم بھی بھرپائے
آنکھ ہنستی ہے روتا جائے دل

:بھر پائے: ہم نے پہلے نہیں سُنا تھا۔ آپ کی وساطت سے سیکھا ہم نے سو شکر گزار بھی ہیں۔ اور آپ ہی کے بقول ایک لفظ بھی جس سے سیکھا جائے وہ استاد ہوتا ہے :)

محترم سرور عالم راز سرورؔ صاحب کی تجویز ہمیں اچھی لگی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

دیپ جلتا ہے رات بھر تنہا
بن مسافر ہے اب سرائے دل

ہمیں شعر بُہت اچھا لگا۔ محترم سرور عالم راز سرورؔ صاحب کی تجویز سے ہمیں اتفاق نہیں ہے۔ ظاہر ہے کہ ہماری کم فہمی ہو سکتی ہے۔ اُن کی تجویز یہیں لکھ دیتے ہیں

دیپ جلتا تھا رات بھر تنہا
بن مسافر رہی سرائے دل

یہاں پہلے مصرع میں :تھا: اور دوسرے میں :رہی: ہمیں ٹھیک نہیں لگ رہا گویا یہ ویسا ہی مسئلہ محسوس ہو رہا ہے جس پر ہمارے محترم خاک زنبیلی صاحب،  ماضی استمراری اور ماضی مطلق اور جانے ایسے ہی کتنے مشکل لفظوں سے سمجھایا کرتے تھے، اور ہمیں صرف تاثرات سے اُن کی بات سمجھ آ جاتی تھی، بالکل ویسے ہی جیسے ہم پشتو، پٹھانوں کے چہرے کے اتار چڑھاؤ سے سمجھ جاتے ہیں کہ :خان صاحب غصے میں ہیں: :خان صاحب احتجاج کر رہے ہیں: یا :خان صاحب خوش ہوئے ہیں: وغیرہ :)

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بات ساری ہے بس نصیبوں کی
ہم اکیلے ہیں بربنائے دل

محترم سرور عالم راز سرورؔ صاحب نے ایسے ہی تو داد نہیں دی ہو گی، شعر یقیناً اچھا ہے، اگر ہمیں سمجھ نہیں آیا تو کیا۔ :) ۔۔ لیکن ہماری عقل یہاں بھی ہمارا ساتھ نہیں دے رہی۔ سمجھ یہ نہیں آیا کہ نصیبوں کو قصوروار سمجھا جائے یا :دل: کو۔ اکیلے پن کی وجہ، نصیب ہیں یا دل؟ یا پھر شاید، بربنائے دِل، اکیلے ہیں اور یہ بدنصیبی ہے سو، نصیب سے گلہ ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
قسمتیں لکھ رہی تھی جب تقدیر
کاش لکھ دیتی دل برائے دل

ہمیں محترم سرور عالم راز سرورؔ صاحب سے مکمل اتفاق ہے۔ ہماری بات، مفتان دین متین سے ہوئی اور انہوں نے تجویز کردہ شعر کو بُہت سراہا :) ساتھ قسمت سے شکایت کرنے پر لمبی لمبی تقیریں بھی فرمائیں جنہیں ہم سر جھکائے :ماشااللہ: اور :انشااللہ: کہہ کہہ کر سنتے رہے :(
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ناز انجامِ  دل لگی دیکھا
کون دنیا میں اب لگائے دل

محترم سرور عالم راز سرورؔ صاحب کے شکر گزار ہیں کہ ایک ترکیب سے متعلق ہمارے علم میں بھی اضافہ فرمایا۔ آپ کا شعر اور اُن کی تجویز دونوں ہی اچھے ہیں، البتہ اُن کی تجویز سے شعر کا مفہوم بدل سا گیا ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

یہ تھی فدوی کی بے لاگ رائے۔۔۔ امید ہے کہ فدوی کی رہنمائی اور خوب سرزنش کی جاوے گی۔ لیکن حقیقت یہ ہے کہ غزل ہمیں بُہت اچھی لگی۔ سو بھرپور داد ایک بار پھر قبول کیجے۔۔۔

دعا گو



جناب محترم  وی بی جی صاحب ۔ آداب۔
آ پ کے حوصلہ افزا کلمات کے لئے بہت ممنون ہوں ۔ یہ آپ کی بڑائی ہے ۔ میں تو بہت سادہ سے الفاظ میں جو دل میں آتا ہے لکھ دیتی ہوں ۔  بات کو الجھانے کی کوشش کروں بھی تو خود الجھ جاتی ہوں اس لئے   یہی سادہ سی باتیں ہیں ہمارے دامن میں ۔ گر قبول افتد ۔  ایک معیار جو مجھے سکھایا گیا ہے اور خود بھی میں نے اسے اپنے تجربے سے پرکھا ہے وہ یہ ہے کہ اگر شعر گنگنانے میں رواں ہے اور سن کر کانوں کو اچھا لگ رہا تو  وہ ٹھیک ہے ۔  اب راگ  راگنیوں کا تو  ہمیں زیادہ پتہ نہیں ہے ۔ آ پ تو اس فن میں ماہر  ہیں ۔ استادِ محترم سرور عالم راز  صاحب بھی یہی کہہ رہے ہیں ۔  تو اس بارے میں تو آ پ  لوگ ہی  تبادلہء خیال فرمائیے ۔  ہم ہمہ تن گوش ہیں ۔
بات ساری ہے بس نصیبوں کی
ہم اکیلے ہیں بربنائے دل

اس شعر  کو کئی پہلوؤں سے دیکھا جاسکتا ہے ۔ قدرت نے بعض دل ایسے بنائے ہوتے ہیں کہ  وہ ہر کسی سے نہیں ملتے ۔ ہر شخص ہر کسی سے دوستی نہیں کر سکتا ۔  ویو لینتھ کا ملنا مشکل ہوتا ہے ۔ اسی لئے  منفرد دل رکھنے ولاے لوگ اکثر تنہا ہی ہوتے ہیں ۔ بظاہر تنہا نہ بھی نظر آئیں لیکن اندر سے تنہا ہوتے ہیں ۔ اس شعر میں اسی طرف اشارہ ہے  کہ کاش  ہمیں قدرت نے ایسا دل نہ دیا ہوتا جو ہر وقت کسی  تلاش میں رہتا ہے ۔     لیکن جیسا  کہ مین نے اوپر لکھا ہے کہ بعض دفعہ سادہ الفاظ میں مکمل معنی کا ادا کرنا مشکل ہوجاتا ہے ۔
مین ایک بار پھر  آ پکے توجہ اور حوصلہ افزائی کے لئے مشکو ر ہوں ۔
ناچیز
ہما حمید ناز
خود کو سدھارلیجیئے ۔ معاشرےسے ایک برا انسان کم ہوجائے گا ۔ . (ایک  مفکر  کا قول)

غیرحاضر ہما حمید ناز

  • Adab Aashnaa
  • *
  • تحریریں: 15
  • جنس: عورت
  • زندگی کو خوبصورتی سے جینا بھی ایک آرٹ ہے
جواب: جذبہء عشق ! ناخدائے دل !
« Reply #8 بروز: فروری 04, 2015, 11:28:10 صبح »
]معزز اراکینِ اردو انجمن ۔ آداب ۔
ایک غزل  پیش کرنے کی جسارت پھر کر رہی ہوں ۔ امید ہے کہ  میری اس کاوش مین موجود  کوتاہیوں  کی نشاندہی  کی جائے گی ۔  آپ کی توجہ اور    قدر دانی کے لئے بہت مشکور ہوں ۔     آپ کے چند الفاظ اس ناچیز کے لئے حوصلہ افزائی کا کام دیں گے  ۔ گر قبول افتد زہے عز و شرف ۔

غزل 

جذبہء عشق ! ناخدائے دل !
 سن  کبھی تو مری نوائے دل

کم نہ پائے گا حوصلہ میرا   
جس قرینے سے آزمائے دل

کوئی سرگم ہو، کوئی موسم ہو
راگ تیرا ہی گنگنائے دل

کوئی رستہ ہو ، کوئی منزل ہو
تیری جانب ہی تکتا جائے دل

ایسے غم سے تو ہم بھی بھرپائے
آنکھ ہنستی ہے روتا جائے دل

دیپ جلتا ہے رات بھر تنہا
بن مسافر ہے اب سرائے دل

بات ساری ہے بس نصیبوں کی
ہم اکیلے ہیں بربنائے دل

قسمتیں لکھ رہی تھی جب تقدیر
کاش لکھ دیتی دل برائے دل

ناز انجامِ  دل لگی دیکھا
 کون دنیا میں اب لگائے دل
 
[/size]


السلام علیکم محترمہ ناز صاحبہ

ماشاء اللہ بہت ہی اچھی غزل ہے
محترم راز صاحب کے تبصرے کے بعد اور کچھ کہنے کی گنجائش نہیں ہے سو ہماری طرف سے بہت بہت داد قبول کیجیے۔
 لفظ  (تکتا) ہمیں کچھ مناسب نہیں لگا  باقی غزل خوب ہے محترم راز صاحب  نے اسے خوب تر کر دیا ہے
غزل پر ایک بار پھر سے داد اللہ حافظ


جناب محترم عمران کمال صاحب ۔ آداب۔
داد کے لئے بہت بہت شکریہ ۔   غزل آپ کو اچھی لگی  تو یہ آپ کا حسنِ ذوق ہے ۔   مین ایک بار پھر   اس حوصلہ افزائی کے لئے مشکو ر ہوں ۔
ناچیز
ہما حمید ناز
خود کو سدھارلیجیئے ۔ معاشرےسے ایک برا انسان کم ہوجائے گا ۔ . (ایک  مفکر  کا قول)

غیرحاضر سرور عالم راز

  • Muntazim-o-Mudeer
  • Saaheb-e-adab
  • ******
  • تحریریں: 6168
  • جنس: مرد
    • Kalam-e-Sarwar
جواب: جذبہء عشق ! ناخدائے دل !
« Reply #9 بروز: فروری 04, 2015, 07:18:02 شام »

عزیزہ ناز صاحبہ:سلام مسنون!
آپ کی غزل دیکھی۔ میں اس سےقبل بھی شاید لکھ چکا ہوں کہ آپ کی مشق کافی پرانی معلوم ہوتی ہے۔ زبان و بیان، وزن وبحر پر آپ کو خاصہ عبور ہے۔ اس مرتبہ آپ نے ایک چھوٹی بحر اور مشکل زمین میں غزل کہی ہے جو آپ کی خود اعتمادی کی نشانی ہے۔ اردو انجمن میں ایک باب نو آموز دوستوں کی اصلاح کے لئے مخصوص ہے۔ دوسرے ابواب میں اصلاح نہیں بلکہ صرف رائے دی جاتی ہے جسے میں "فکر بہ آواز بلند" کہتا ہوں۔ یعنی کسی کے کلام پر اپنی سوچ کا اظہار۔ ضروری نہیں کہ آپ دوسروں کی رائے سے متفق ہوں اور اختلاف کی صورت میں کوئی برا ماننے والا بھی نہیں ہے۔ تبادلہؑ خیال سے نئی سوچوں کی راہ کھل سکتی ہے اور یہی اس کوشش کا مقصد ہے۔
آپ کی غزل پر عمومی داد کے بعد چند باتیں کہنے کی اجازت چاہتا ہوں۔ آپ کے بے لاگ خیالات کا انتظار رہے گا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جذبہء عشق ! ناخدائے دل !
 سن  کبھی تو مری نوائے دل
مطلع اچھا ہے۔ داد حاضر ہے۔ ایک صورت ذہن میں آئی سو لکھتا ہوں۔ یہ بندش "عشق" کی شدت کو کم رکھتی ہے اور نسبتا نرم لہجہ میں ہے۔ 
جذبہء شوق، نا خدائے دل!
کاش سن لے مری نوائے دل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کم نہ پائے گا حوصلہ میرا   
جس قرینے سے آزمائے دل
دونوں مصرعے مجھ کو کمزور بندش کے محسوس ہوئے۔ عام طور سے "دل" خود آزمائش میں مبتلا ہوتا ہے لیکن آپ کے یہاں آپ کا دل آپ کو ہی آزمارہا ہے۔ ایک سوچ یہ ہے، شاید کسی قابل ہو:
کم نہیں ہوگا حوصلہ میرا
جس طرح چاہے آزمائے دل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کوئی سرگم ہو، کوئی موسم ہو
راگ تیرا ہی گنگنائے دل
میں جانتا ہوں کہ موسموں سے بھی راگوں کا رشتہ ہے۔ البتہ میری سوچ کچھ اس طرح مرتب ہوئی:
کوئی ہو تان، کوئی سرگم ہو
راگ تیرا ہی گنگنائے دل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کوئی رستہ ہو ، کوئی منزل ہو
تیری جانب ہی تکتا جائے دل
میرا خیال ہے کہ یہاں آپ قافیہ پیمائی کا شکار ہو گئی ہیں۔ شعر اچھا نہیں ہے۔ بندش بھی سست ہے اور مضمون بھی کمزور۔ جب محبوب اس طرح نظر آرہا ہے کہ آپ اس کو دیکھ سکتی ہیں تو پھر دوسری راہ پر کسی اور منزل کی جانب آپ کے قدم کیوںکر اٹھ سکتے ہیں؟ اس شعر کو پھر سے سوچنے کی ضرورت ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایسے غم سے تو ہم بھی بھرپائے
آنکھ ہنستی ہے روتا جائے دل
دوسرا ،صرع کیسا تیکھا ہے اور پہلا کتنا پھیکا!مزید یہ کہ آپ نے "ہم بھی بھر پائے" لکھا ہے گویا آپ کے علاوہ اور بھی اس غم میں گرفتار ہیں۔ سو پھر آپ کی محبت کی انفرادیت کہاں رہی؟ شعر کا رنگ ذرا سا بدلئے تو ایک صورت ذہن میں آتی ہے، دوسری آپ سوچ ہی لیں گی:
ہائے مجبوریاں محبت کی!
آنکھ ہنستی ہے، روتا جائے دل!
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دیپ جلتا ہے رات بھر تنہا
بن مسافر ہے اب سرائے دل
خیال خوبصورت ہے، بیان شاید اور نکھر سکتا ہے۔ یہ صورت دیکھئے، شاید پسند آئے یا ایسی ہی کوئی اور شکل۔ دو الفاظ بدلنے سے فرق تو محسوس ہوتا ہے۔
دیپ جلتا تھا رات بھر تنہا
بن مسافر رہی سرائے دل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بات ساری ہے بس نصیبوں کی
ہم اکیلے ہیں بربنائے دل
خوب کہا ہے آپ نے۔ داد!
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
قسمتیں لکھ رہی تھی جب تقدیر
کاش لکھ دیتی دل برائے دل
یہ بھی قافیہ پیمائی کی کوشش ہے۔ آپ "برائے" باندھنا چاہتی تھیں سو یہ صورت بنی لیکن بات نہیں بنی۔ تقدیر آپ کی قسمتیں لکھ رہی تھی؟ قسمت اور تقدیر ایک ہی چیز نہیں ہے؟ سہگل کا گانا سنا ہوگا آپ نے :
اے کاتب تقدیر مجھے اتنا بتا دے
کیوں مجھ سے خفا ہے تو ، کیا میں نے کیا ہے
اوروں کو خوشی مجھ کو فقط درد و رنج و غم
دنیا کو ہنسی اور مجھے رونا دیا ہے
تو کسی طرح "کاتب تقدیر" کو اس شعر کی خدمت میں کیوں نہ لگایا جائے!
کیا ترا جاتا کاتب تقدیر؟
تو جو لکھ دیتا دل برائے دل
دیکھئے مفتیان دین متین بیچ اس مسئلہ کے کیا کہتے ہیں!  :)
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ناز انجامِ  دل لگی دیکھا
 کون دنیا میں اب لگائے دل
اس شعر سے ایک سوال پیدا ہوتا ہے۔ "دل" فارسی ہے اور "لگی" ہندوستانی، چنانچہ ان کو ملا کر ادب میں "دل لگی" ترکیب بنانا خلاف اصول ہے لیکن شاعری میں "دل لگی" سب نے دیکھا ہے ۔
دل لگی ہی دل لگی میں دل چرا کر چل دئے
ہم یہ کہتے ہی رہے، یہ دل لگی اچھی نہیں !
خیر آپ یہ دیکھئے اور اپنی رائے دیجئے۔
"ناز" ! انجام دل لگی دیکھا؟
کون کس دل سے اب لگائے دل!
امید ہے کہ اپنے خیالات سے ضرور آگاہ کریں گی۔ باقی راوی سب چین بولتا ہے۔

سرور عالم راز "سرور"


 





جناب محترم سرور عالم راز  صاحب ۔  آداب ۔
اظہارِ تشکر کے لئے الفاظ ڈھونڈنے میں تاخیر ہوئی ۔  الفاظ تو پھر بھی نہ ملے لیکن شکریہ تو لازمی ہے اس لئے    بہت خلوص کے ساتھ آپ کا انتہائے شکریہ۔
 آ پ کی اصلاح نے میرے عام سے  اشعار کو    کیا خوب سنوارا ہے  اور بعض اشعار کو تو بہت ہی  خوبصورت بنادیا ہے ۔ خاس طور پر مطلع  بہت ہی نکھر  گیا ہے ۔  اس کے لئے  میں جتنا شکریہ ادا کروں کم ہے ۔  آپ کی اصلاح کے مطابق میں نے غزل میں  تبدیلیاں کردی ہیں ۔  ایک ٓدھ جگہ آ پ سے مودبانہ اختلاف کی جرات کروں گی ۔ امید ہے     درگزر سے کام لیں گے ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کم نہ پائے گا حوصلہ میرا   
جس قرینے سے آزمائے دل
اس شعر میں  اس کشمکش کی طرف اشارہ کرنے کی کوشش  کی تھی  جو دل کی دم  بہ دم  نئی خواہشات ( جو اکثر متضاد  بھی ہوتی  ہیں ) اور عقلی اور دنیاوی تقاضوں کے درمیاں جاری رہتی ہے ۔ اس حوالے سے دیکھا جائے تو خود ہمارا دل  انوکھی اور ناممکن خواہشات کر کے  خود ہمیں کو  ایک آزمائش مین مبتلا کردیتا ہے ۔  اور ہمیں اس سے  نبٹنا پڑتا ہے ۔   چونکہ بات موسیقی اور فلمی گانوں کی بھی ہورہی ہے اس لئے یہاں میں بھی ایک مشہورِ عام گانے کا  حوالہ دونگی ۔
باوری چکوری کرے   دنیا سے چوری چوری
چندا سے پیا ر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کوئی سرگم ہو، کوئی موسم ہو
راگ تیرا ہی گنگنائے دل
 اس شعر میں میں نے سرگم کو اس کے مقبولِ عام معنوں میں استعمال کیا  ہے  یعنی   سُر یا ساز ۔ آپ اہلِ علم لوگ  ہیں اور اس ایک لفظ میں سے  کیا کیا نکات نکا لے ہیں ۔ لیکن میں سمجھتی ہوں کہ ایک عام شخص ان سے ناواقف ہے اور سرگم کا مطلب سُر یا  ساز  ہی سمجھے گا ۔   موسم کا حوالہ اس شعر میں صرف  یہ بتانے کے لئے استعمال کیا  ہے کہ  میں تیرا راگ  سارا سال بلکہ سالوں سے گنگنارہی ہوں ۔ یہاں موسم ایک طویل وقت کی طرف اشارہ کرتا ہے  اور میری ناچیز رائے میں شعر کی گہرائی میں اضافہ کرتا ہے ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کوئی رستہ ہو ، کوئی منزل ہو
تیری جانب ہی تکتا جائے دل
آپکے مشورے کے مطابق اس پر نظر  ِثانی کی ہے ۔
کوئی منظر ہو ، کوئی عالم ہو
تیری جانب ہی دیکھے جائے دل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دیپ جلتا ہے رات بھر تنہا
بن مسافر ہے اب سرائے دل
 اس شعر پر آپ کی اصلاح بات کو   کچھ الجھارہی ہے  جس کے بارے میں محترم وی بی جی نے بھی لکھا ہے ۔  میں آپ کی بات سمجھ رہی ہوں کی دوسرے مصرع میں ــ   ہے اب  کو نکال کر کوئی ایک لفظ رکھنا چاہئے ۔ لیکن  اب تک کچھ متبادل سمجھ مین نہیں آیا ۔
دیپ جلتا  ہے رات بھر تنہا
بن مسافر  ہوئی سرائے دل
 لیکن بن مسافر ہوئی سرائے دل بھی  کچھ بہتر نہیں لگتا  ۔   بن مسافر ہے اب سرائے دل پھر بہتر لگتا  ہے اس سے ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
قسمتیں لکھ رہی تھی جب تقدیر
کاش لکھ دیتی دل برائے دل

یہاں دراصل مجھ سے  نقل کرنے میں غلطی ہوئی ۔ پہلا مصرع  اصل میں یو ں ہے :  قسمتیں لکھ رہی تھی جب  قدرت
لیکن کاغذ پر اتنی کاٹ پیٹ  ہوچکی تھی  کہ کمپیوٹر پر نقل کرتے وقت  قدرت کے بجائے  تقدیر لکھ  دیا ۔ آ پ درست کہتے ہیں کہ قسمت اور تقدیر  تو ہم معنی ہیں ۔  شعر میں اشارہ اسی طرف ہے کہ جوڑے آسمان پر بنائے جاتے ہیں ۔ وغیرہ وغیرہ  ۔ 
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ناز انجامِ  دل لگی دیکھا
 کون دنیا میں اب لگائے دل

نہایت معذرت کیساتھ  عرض ہے کہ اس شعر پر آپکی اصلاح تع بہت اچھی ہے لیکن  اس سے شعر کا  مرکزی خیال بدل گیا ہے  ۔   اس شعر میں جو  کہنے کی کوشش کی ہے وہ یہ ہے    محبت کی ناکامی کے بعد عام طور پر لوگ دنیا سے کنارہ کش ہو جاتے ہیں   ۔ پھر دوست احباب سمجھاتے ہیں کہ   دنیا میں اور بھی بہت کچھ ہے ۔ دنیا میں دل لگاؤ ۔ زندہ رہو  ۔ وغیرہ وغیرہ ۔ اسی طرف اشارہ ہے کہ  ایک دفعہ دل لگا کر انجام دیکھ لیا سو اب کون دنیا سے دل لگائے ۔ شاید  شعر  مین اس بات کا ابلاغ پوری طرح نہیں ہو پایا ۔
 
استادِ محترم  ۔ ایک بار پھر آپ کی محبت اور توجہ کے لئے شکر گزار ہوں   ۔   آپ نے اتنا وقت دیا اس کے  لئے آپکے حق مین دعاگو ہوں ۔
ناچیز
ہما حمید ناز


عزہزہ ناز صاحبہ : سلام مسنون
جواب کے لئے ممنون ہوں (مشکور البتہ آپ ہیں!)۔ دو تین باتیں تحریر طلب ہیں۔
اول تو یہ کہ میں کسی طور بھی "استاد" کہلانے کا مستحق نہیں ہوں۔ سو اس القاب سے اگر مجھ کو معاف فرمائیں تو نوازش ہوگی۔ رہ گئی یہ بات کہ جو شخص بھی آپ کو ایک لفظ بھی سکھا دے وہ آپ کا استاد ہوا تو اس حوالے سے آپ بھی مری استانی ٹھہرتی ہیں۔ چلئے حساب برابر سرابر!
دوئم یہ کہ میں نے اپنی رائے دی تھی ،اصلاح نہیں۔ اپنی رائے پر میں قائم ہوں۔ آپ کا اختلاف آپ کا حق ہے اور مجھ کو پوری طرح تسلیم۔ خوش رہئے!
سوئم یہ کہ آپ نے دوستوں پر ناقدانہ لکھنا شروع کردیا ہے۔ بہت شکریہ۔ یہاں لکھنے والوں شدید کمی ہے۔ ایک بزرگ خاک زنبیلی صاحب یہاں آیا کرتے تھے۔ خدا جانے کس بات پرخفا ہو کر چلے گئے۔ اگر وہ یہ تحریر دیکھیں تو درخواست ہے کہ کہا سنا درگزر کر کے واپس آ جائیں۔  :)
باقی راوی سب چین بولتا ہے

سرور عالم راز"سرور"

]



غیرحاضر akbar

  • Adab Dost
  • ***
  • تحریریں: 674
  • جنس: مرد
جواب: جذبہء شوق ، ناخدائے دل !
« Reply #10 بروز: فروری 09, 2015, 07:42:58 صبح »
 'd'


سرور عالم راز "سرور" :rose :rose  'd' :rose :rose  ہما حمید ناز

aap sab ki khidmat main salaam apun ka
image lagana hai faqat kaam apun ka ....

ghaltiyaaN do chaar nahi kai baar hoi hain ham se.....
aik soch ne is Taraf raaghib kiya ....pahla hi nishaana khata ho gaya....
paapa to guzar gaye ,,,,ab khud hi paeiyaaN paeiyaaN chalna hai....
( naaz-e-anjaam-e dil lagi dekha )ma'azrat ke saath ...
....adab-o-aadaab ki maHfil main ....gustaakhaana be adabi ....
sazaa se be khabri ....apnii Aadat se majboor hain ,,,
ab kiya kiya kare koi ....? intezaar hi rahe ga....
janaab(سرور عالم راز "سرور)
aap ko aik darrd bhara ruqqa bhaija tha ,,, :typ:
cNg or patrol ki bandish ki wajah se hi kahin ruk gaya hai ...,
  %( ((shaayad))
agar..........mila hai to .....
koch to kahiye....yaqeen dilaate hain ke.,.
itna dil kash hai tera tarrz-e-takal-lum ke raqeeb..
gaaliyaaN paRh ke bhi be mazaa na rahe ga........ :P
muntazir...  :048: :048: :048:
« آخری ترمیم: فروری 09, 2015, 07:51:39 صبح منجانب akbar »

غیرحاضر سرور عالم راز

  • Muntazim-o-Mudeer
  • Saaheb-e-adab
  • ******
  • تحریریں: 6168
  • جنس: مرد
    • Kalam-e-Sarwar
جواب: جذبہء شوق ، ناخدائے دل !
« Reply #11 بروز: فروری 09, 2015, 10:30:29 صبح »
'd'


سرور عالم راز "سرور" :rose :rose  'd' :rose :rose  ہما حمید ناز

aap sab ki khidmat main salaam apun ka
image lagana hai faqat kaam apun ka ....

ghaltiyaaN do chaar nahi kai baar hoi hain ham se.....
aik soch ne is Taraf raaghib kiya ....pahla hi nishaana khata ho gaya....
paapa to guzar gaye ,,,,ab khud hi paeiyaaN paeiyaaN chalna hai....
( naaz-e-anjaam-e dil lagi dekha )ma'azrat ke saath ...
....adab-o-aadaab ki maHfil main ....gustaakhaana be adabi ....
sazaa se be khabri ....apnii Aadat se majboor hain ,,,
ab kiya kiya kare koi ....? intezaar hi rahe ga....
janaab(سرور عالم راز "سرور)
aap ko aik darrd bhara ruqqa bhaija tha ,,, :typ:
cNg or patrol ki bandish ki wajah se hi kahin ruk gaya hai ...,
  %( ((shaayad))
agar..........mila hai to .....
koch to kahiye....yaqeen dilaate hain ke.,.
itna dil kash hai tera tarrz-e-takal-lum ke raqeeb..
gaaliyaaN paRh ke bhi be mazaa na rahe ga........ :P
muntazir...  :048: :048: :048:


مکرمی اکبر صاحب: سلام شوق!

آپ نے جس محنت اور محبت سے یہ دو غزلیں آمنے سامنے لگائی ہے اس کی داد نہ دینا نا انصافی ہوگی۔ بہت شکریہ۔ البتہ یہ کہنا ضروری ہے کہ آپ نے ایک غزل کے نیچے میرا نام لکھ دیا ہے جس سے ایسامعلوم ہوتا ہے جیسے یہ غزل میری ہے۔ دونوں غزلیں ناز صاحبہ کی ہی ہیں۔ میں نے تو صرف چند تجاویز رکھی تھیں۔
آپ نے مجھ کو خط کہاں لکھا تھا، پی ایم میں یا ای میل سے بھیجا تھا؟ میں پی ایم میں جا کر دیکھتا ہوں۔ معذرت خواہ ہوں۔ بھول چوک انسان سے ہو ہی جاتی ہے۔ آپ کی دعائوں کا طالب ہوں۔

سرور عالم راز



غیرحاضر dr maqsood hasni

  • Adab Dost
  • ***
  • تحریریں: 791
جواب: جذبہء شوق ، ناخدائے دل !
« Reply #12 بروز: فروری 22, 2016, 01:09:59 صبح »
ہائے مجبوریاں محبت کی !
آنکھ ہنستی ہے روتا جائے دل
haan janab yah to hai
zamana aur shakhsi moamla dou alag se chizain rahi hain

 

Copyright © اُردو انجمن