اُردو انجمن

 


مصنف موضوع: طرحی مشاعرہ ۷۲ کے لئے میرے چند اشعار  (پڑھا گیا 2337 بار)

0 اراکین اور 1 مہمان یہ موضوع دیکھ رہے ہیں

غیرحاضر H. Khalid

  • Adab Aashnaa
  • *
  • تحریریں: 112
  • جنس: مرد
طرحی مشاعرہ ۷۲ کے لئے میرے چند اشعار
« بروز: مارچ 05, 2015, 01:36:16 صبح »
احباب انجئمن آداب و تسلیمات
کافی دن کے بعد یہاں آمد ہوئی اور معلوم ہوا کہ طرحی مشاعرہ کا سلسلہ دوبارہ شروع ہوگیا ہے جو کہ نہایت خوش آئند ہے۔

چند اشعار پیش خدمت ہیں:
اپنی قیمتی آراء سے نوازئے۔
والسلام
ح۔خالد






غیرحاضر خاک زنبیلی

  • Adab Shinaas
  • **
  • تحریریں: 322
  • جنس: مرد
  • ہم پرورشِ لوح و قلم کرتے رہیں گے
جواب: طرحی مشاعرہ ۷۲ کے لئے میرے چند اشعار
« Reply #1 بروز: مارچ 05, 2015, 12:41:12 شام »
جناب خالد صاحب۔ السلام علیکم ۔
آپ کے کلام سے پہلی دفعہ متعارف ہورہا ہوں ۔ آپ اچھا لکھتے ہیں ۔  کوئی عروضی سقم نظر نہیں آتا ۔  ماشاءاللہ کافی پختگی ہے ۔   لیکن کئی اشعار  میں حشو و زوائد  نظر آئے ۔  چونکہ آپ نے رائےزنی کی دعوت دی ہے اس لئے بھی اور انجمن کی روایت کا پاس رکھتے ہوئے غزل کے چند اشعار میں زبان و بیان کی کچھ کوتاہیوں کی طرف آپ کی توجہ مبذول کرانا چاہوں گا ۔  امید ہے یہ تبصرہ   باہمی تعلیم و تعلم کا سبب بنے گا ۔

مطلع میں آپ نے پیچاں اور  غلطاں کو علیحدہ علیحدہ الفاظ کے طور پر باندھا ہے ۔ یہ درست اردو نہیں ۔ غلطاں و پیچاں ہمیشہ ساتھ آتا ہے ۔ الگ الگ استعمال  بالکل مستعمل نہیں اور بہت عجیب وغریب لگ رہا ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہا ں اہلِ جنوں پاس تھا آدابِ جنوں کا 
 یہ مصرع  درست نہیں  " اہلِ جنوں کو پاس تھا آدابِ جنوں کا " صحیح زبان ہے ۔ 
 اہلِ جنوں اس  شعر میں جمع کیلئے استعمال ہوا ہے ۔ اس لئے دوسرے مصرع میں ہو کے بجائے ہوں ضروری ہے  ۔ ہوسکتا ہے کہ یہ کتابت کی غلطی ہو ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کہتے ہو کہ پھرد رد کا درماں نہیں دیکھا ۔
 یہاں لفظ پھر کہتے ہو سے پہلے آنا چاہئیے ۔ اس کو یوں کرلیجئے 
  پھر کہتے بھی ہو درد کا درماں نہیں دیکھا

  یاد رکھنے کا نکتہ یہ ہے کہ اس قسم کے جملوں میں لفظ کہ کے بعد آنےو الے الفاظ دراصل واوین کے درمیان ہوتے ہیں یعنی یہ کہنے والے کے کہے ہوئے الفاظ ہوتے ہیں ۔  کہتے ہو کہ پھر درد کا درماں نہیں دیکھا  کی نثر یوں ہوگی ۔  تم کہتے ہو: "  پھر درد کا درماں نہیں دیکھا " ۔ اور  ایسا کہنے کا یہ محل نہیں ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تم ہی تو ہو باعث مرے سب شعر و سخن کے
 اس مصرع میں کے نہیں بلکہ کا  ہونا چاہیئے ۔  یعنی تم ہی تو مرے شعر و سخن کا باعث ہو ۔
 لفظ کے استعمال کرنے سے معنی بالکل بدل جاتے ہیں ۔ یعنی مطلب یہ ہوجاتا ہے کہ تم میرے شعر و سخن کے باعث ہو  یعنی تم میرے شعر و سخن کی وجہ سے وجود رکھتے ہو ۔  جیسے  کہا جائے کہ محلے میں ساری گڑبڑ وی بی جی اور کفیل صاحب کے باعث ہے ۔  ;)
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مقطع  پڑھ کر معلوم ہوا کہ آپ کا تخلص ثابت ہے ۔  لیکن دوسرے مصرع میں تخلص کے استعمال سے ایک تعقید معنوی پیدا ہورہی ہے ۔ بہ الفاظِ دیگر یوں معلوم ہوتا ہے کہ  ثابت کا لفظ  آنسوؤں کے بارے میں استعمال ہورہا ہے ۔ ایسی تعقید سے بچنا ضروری ہے کیونکہ اس سے شعر میں  ایک قسم کی مضحکہ خیزی پیدا ہورہی ہے ۔ مقطع کے پہلے مصرع میں مجھ کو رویا کا استعمال ویسے تو  ٹھیک ہے لیکن شاید ایسا کہنا آپ کا منشاءنہ ہو ۔    کسی کو رونا کا مطلب کسی کے سوگ میں رونا ہوتا ہے ۔  کسی چیز کو رونا کا مطلب کسی کھوئی ہوئی یا برباد شدہ  چیز کا ماتم کرنا ۔ جیسے غالب کا مصرع ہے :   حیراں ہوں دل کو روؤں کہ پیٹوں جگر کو میں   

جناب ثابت صاحب ۔   شاعری میں زبان و بیاں کی صحت  کو برقرار رکھنا انتہائی ضروری ہے ۔ شعر کی بنیاد شعری خیال پر ہوتی ہے اور اس کی عمارت  لطیف اور اعلیٰ درجہ کی زبان اور بیان پر قائم ہوتی ہے ۔ وزن تو محض شعر کی تاثیر کو دوبالا کرتا ہے ۔امید ہے کہ آپ میرے اس تبصرے کو مثبت انداز میں لیں گے ۔ امید ہے کہ آپ اپنی شرکت سے  انجمن کی رونق میں اضافہ کرتے رہیں گے ۔

آپکی اس عمدہ کاوش پر داد و تحسین کیساتھ

مخلص

خاک زنبیلی


غیرحاضر سرور عالم راز

  • Muntazim-o-Mudeer
  • Saaheb-e-adab
  • ******
  • تحریریں: 6220
  • جنس: مرد
    • Kalam-e-Sarwar
جواب: طرحی مشاعرہ ۷۲ کے لئے میرے چند اشعار
« Reply #2 بروز: مارچ 05, 2015, 10:25:20 شام »

"جناب خالد صاحب۔ السلام علیکم ۔
آپ کے کلام سے پہلی دفعہ متعارف ہورہا ہوں ۔ آپ اچھا لکھتے ہیں ۔  کوئی عروضی سقم نظر نہیں آتا ۔  ماشاءاللہ کافی پختگی ہے ۔   لیکن کئی اشعار  میں حشو و زوائد  نظر آئے ۔  چونکہ آپ نے رائےزنی کی دعوت دی ہے اس لئے بھی اور انجمن کی روایت کا پاس رکھتے ہوئے غزل کے چند اشعار میں زبان و بیان کی کچھ کوتاہیوں کی طرف آپ کی توجہ مبذول کرانا چاہوں گا ۔  امید ہے یہ تبصرہ   باہمی تعلیم و تعلم کا سبب بنے گا ۔

مطلع میں آپ نے پیچاں اور  غلطاں کو علیحدہ علیحدہ الفاظ کے طور پر باندھا ہے ۔ یہ درست اردو نہیں ۔ غلطاں و پیچاں ہمیشہ ساتھ آتا ہے ۔ الگ الگ استعمال  بالکل مستعمل نہیں اور بہت عجیب وغریب لگ رہا ہے۔"

اک موج ہوا پیچاں اے میر نظر آئی
شاید  کہ   بہار    آئی زنجیر  نظر  آئی

سرور عالم راز "سرور"







غیرحاضر خاک زنبیلی

  • Adab Shinaas
  • **
  • تحریریں: 322
  • جنس: مرد
  • ہم پرورشِ لوح و قلم کرتے رہیں گے
جواب: طرحی مشاعرہ ۷۲ کے لئے میرے چند اشعار
« Reply #3 بروز: مارچ 05, 2015, 11:00:07 شام »

 ................................
اک موج ہوا پیچاں اے میر نظر آئی
شاید  کہ   بہار    آئی زنجیر  نظر  آئی

سرور عالم راز "سرور"






جناب محترم سرور صاحب ۔ السلام علیکم - امید ہے آپ خیریت سے ہونگے ۔  ابھی سونے سے پہلے بزم کی طرف آیا تو آپکا مراسلہ دیکھا ۔ میرا خیال ہےکہ  میں اپنی بات صاف طور پر بیان نہ کر سکا  ۔ یہ بات تو سب لوگوں کی طرح مجھے بھی معلوم ہے کہ غلطاں اور پیچاں دو الگ الگ الفاظ ہیں اور اردو میں عام مستعمل ہیں ۔ پیچاں بمعنی پیچ کھائے ہوئے یا بل کھائے ہوئے عام ہے مثلا زلفِ پیچاں ، عشقِ پیچاں  وغیرہ ۔ اسی طرح غلطاں بمعنی  مضطرب یا لوٹتے کروٹیں لیتے ہوئے  بھی عام ہے جیسے ۔ وہ کسی گہری سوچ میں غلطاں تھا ، وغیرہ ۔ لیکن جس سیاق و سباق میں خالد صاحب نے یہ دو الفاظ اپنے مطلع میں استعمال کئے ہیں وہاں عام طور پر  غلطاں و پیچاں استعمال ہوتا ہے بمعنی حیران پریشان ۔ اہلِ جنوں کا کسی کی یاد میں یا فکر میں غلطاں و پیچاں ہونا تو درست ہے ۔ لیکن ان کا علیحدہ علیحدہ پیچاں ہونا اور غلطاں ہونا کسی لحاظ سے ٹھیک نہیں کہلائے گا ۔
امید ہے میں اپنی بات کی اب وضاحت کر سکا ہوں گا ۔
والسلام

نیاز مند

خاک زنبیلی

غیرحاضر H. Khalid

  • Adab Aashnaa
  • *
  • تحریریں: 112
  • جنس: مرد
جواب: طرحی مشاعرہ ۷۲ کے لئے میرے چند اشعار
« Reply #4 بروز: مارچ 07, 2015, 03:54:29 صبح »
جناب خاک زنبیلی صاحب
و علیکم السلام
آپ نے میرے بھیجے ہوئے اشعار کو توجہ سے پڑھا اور اس پر نہایت عمدہ تبصرے سے نوازا، جس کے لئے انتہائی ممنون ہوں۔
میرا یہاں آنا اسی لئے ہے کہ آپ جیسے لوگوں سے کچھ سیکھ لیا جائے۔ اب کوئی دوسرا راستہ نہیں رہا جہاں اہلِ ادب مل بیٹھیں اور سیکھنا سکھانا ہوجائے۔
مطلع میں آپ نے فرمایا کہ پیچاں اور غلطاں الگ الگ مستعمل نہیں۔ ایسا بالکل ہو سکتا ہے۔ لیکن کیا استعمال ہو ہی نہیں سکتا؟ میری ناقص رائے میں یہ دو الگ الگ کیفیات ہیں جن کو مرکب کے طور پر بھی استعمال کیا سکتا ہے اور علیحدہ بھی۔ جیسا کہ اختر الایمان صاحب نے کیا ہے:

’’کسی غار کے منہ پہ بیٹھا، کسی سخت اُلجھن میں غلطاں
کہیں شعلہ دریافت کر نے کی خواہش میں پیچاں
کہیں زندگی کو نظام و تسلسل میں لانے کا خواہاں
جہاں کو حسیں دیکھنے کی تمنّا میں کوشاں‘‘
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دوسری جگہ
’’ہاں اہلِ جنوں پاس تھا آدابِ جنوں کا‘‘
اس میں اہلِ جنوں مخاطب ہے اور اس کو یوں لکھنا چاہئے تھا
ہاں اہلِ جنوں! پاس تھا آدابِ جنوں کا
وحشت میں بھی ہوں چاک گریباں نہیں دیکھا

اب بتائے کہ یہ صحیح ہے یا نہیں؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تیسری جگہ آپ نے بجا فرمایا کہ پھر پہلے ہونا چاہئے۔
ایک بات جو میرے ذہن میں تھی وہ یہ کہ ’’پھر‘‘ آخر کے لئے بھی استعمال ہوتا ہے۔ یعنی اب یہ حال ہے کہ درد کا درماں نہیں دیکھا۔
باقی آپ جیسا کہیں گے ہم مان لیں گے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تم ہی تو ہو باعث مرے سب شعر و سخن کے
اس میں آپ کا نکتہ بالکل صحیح ہے۔ لیکن کیا یہ سوچ غلط ہے کہ تمہارا وہ تصور جو زمانے کے سامنے وہ مرے شعر و سخن کی وجہ سے ہے؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آخر میں آپ نے مقطع کے بارے میں لکھا ہے۔
میری سوچ یہ ہے کہ رونا فراق کی وجہ سے ہوتا اور کئی دفعہ یہ فراق دائمی بھی ہو جاتا ہے۔
دوسرے مصرع میں لکھا تو یوں بھی جاسکتا ہے  ’’ثابت کوئی آنسو سرِ مژگاں نہیں دیکھا‘‘
لیکن جو ترکیب میں نے لکھی ہے اس میں آپ کے بقول ثابت کو آنسو سے تعلق ہے اور وہ یہ ہے کہ ایسا آنسو جسے آنسو کہا جا سکے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آخر میں ایک بار پھر شکر گزار ہوں اور درخواست کرتا ہوں کہ اس پر اپنے جواب سے نوازیں تا کہ وضاحت ہو سکے۔

والسلام
ح۔ خالد
 

غیرحاضر Ismaa'eel Aijaaz

  • Saaheb-e-adab
  • *****
  • تحریریں: 3180
جواب: طرحی مشاعرہ ۷۲ کے لئے میرے چند اشعار
« Reply #5 بروز: مارچ 07, 2015, 09:49:09 شام »
احباب انجئمن آداب و تسلیمات
کافی دن کے بعد یہاں آمد ہوئی اور معلوم ہوا کہ طرحی مشاعرہ کا سلسلہ دوبارہ شروع ہوگیا ہے جو کہ نہایت خوش آئند ہے۔

چند اشعار پیش خدمت ہیں:
اپنی قیمتی آراء سے نوازئے۔
والسلام
ح۔خالد

نہ صبر کا پیکر ہے ، نہ اخلاقِ نبوت
مدت سے مسلماں کو مسلماں نہیں دیکھا

بہت فکر انگیز شعر ہے جناب خالد صاحب ، تھوڑی سی توجہ چاہوں گا لفظ (نہ) کو آپ نے دوحرفی باندھا ہے ماہرینِ علم عروض اسے یکحرفی باندھنے کو درست اور دوحرفی باندھنے کو غلط قرار دیتے ہیں

اس تحریر کا وزن ہے

مفعولُ؛ مفاعیلُ؛مفاعیلُ؛فعولن

آپ کے شعر کے پہلے مصرعے کی تقطیع کچھ اس طرح ہوگی

نہ صبر کا پیکر ہے ، نہ اخلاقِ نبوت

ناصب ر ۔۔۔ کَ پے کر ہِ ۔۔۔ نَ اخ لا قِ ۔۔۔ نَ بو وت

شاید اساتذہ اس طرح سے (نہ) کو (نا) باندھنا معیوب گردانتے ہیں

بہر حال صاحب آپ کی تحریر میں کئی اشعار بہت خوبصورت ہیں ، مصرھ طرح کو بہت عمدہ شعر میں ڈھالا ہے
میری جانب سے ڈھیروں داد اور سالم پیشِ خدمت ہے

اللہ آپ کو سدا سلامت رکھے دونوں جہانوں کی عزّتیں بخشے
دعاگو
محبتوں سے محبت سمیٹنے والا
خیال آپ کی محفل میں آچ پھر آیا

خیال

muHabbatoN se muHabbat sameTne waalaa
Khayaal aap kee maiHfil meN aaj phir aayaa

(Khayaal)

غیرحاضر خاک زنبیلی

  • Adab Shinaas
  • **
  • تحریریں: 322
  • جنس: مرد
  • ہم پرورشِ لوح و قلم کرتے رہیں گے
جواب: طرحی مشاعرہ ۷۲ کے لئے میرے چند اشعار
« Reply #6 بروز: مارچ 08, 2015, 12:21:11 صبح »
جناب خاک زنبیلی صاحب
و علیکم السلام
آپ نے میرے بھیجے ہوئے اشعار کو توجہ سے پڑھا اور اس پر نہایت عمدہ تبصرے سے نوازا، جس کے لئے انتہائی ممنون ہوں۔
میرا یہاں آنا اسی لئے ہے کہ آپ جیسے لوگوں سے کچھ سیکھ لیا جائے۔ اب کوئی دوسرا راستہ نہیں رہا جہاں اہلِ ادب مل بیٹھیں اور سیکھنا سکھانا ہوجائے۔
مطلع میں آپ نے فرمایا کہ پیچاں اور غلطاں الگ الگ مستعمل نہیں۔ ایسا بالکل ہو سکتا ہے۔ لیکن کیا استعمال ہو ہی نہیں سکتا؟ میری ناقص رائے میں یہ دو الگ الگ کیفیات ہیں جن کو مرکب کے طور پر بھی استعمال کیا سکتا ہے اور علیحدہ بھی۔ جیسا کہ اختر الایمان صاحب نے کیا ہے:

’’کسی غار کے منہ پہ بیٹھا، کسی سخت اُلجھن میں غلطاں
کہیں شعلہ دریافت کر نے کی خواہش میں پیچاں
کہیں زندگی کو نظام و تسلسل میں لانے کا خواہاں
جہاں کو حسیں دیکھنے کی تمنّا میں کوشاں‘‘
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دوسری جگہ
’’ہاں اہلِ جنوں پاس تھا آدابِ جنوں کا‘‘
اس میں اہلِ جنوں مخاطب ہے اور اس کو یوں لکھنا چاہئے تھا
ہاں اہلِ جنوں! پاس تھا آدابِ جنوں کا
وحشت میں بھی ہوں چاک گریباں نہیں دیکھا

اب بتائے کہ یہ صحیح ہے یا نہیں؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تیسری جگہ آپ نے بجا فرمایا کہ پھر پہلے ہونا چاہئے۔
ایک بات جو میرے ذہن میں تھی وہ یہ کہ ’’پھر‘‘ آخر کے لئے بھی استعمال ہوتا ہے۔ یعنی اب یہ حال ہے کہ درد کا درماں نہیں دیکھا۔
باقی آپ جیسا کہیں گے ہم مان لیں گے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تم ہی تو ہو باعث مرے سب شعر و سخن کے
اس میں آپ کا نکتہ بالکل صحیح ہے۔ لیکن کیا یہ سوچ غلط ہے کہ تمہارا وہ تصور جو زمانے کے سامنے وہ مرے شعر و سخن کی وجہ سے ہے؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آخر میں آپ نے مقطع کے بارے میں لکھا ہے۔
میری سوچ یہ ہے کہ رونا فراق کی وجہ سے ہوتا اور کئی دفعہ یہ فراق دائمی بھی ہو جاتا ہے۔
دوسرے مصرع میں لکھا تو یوں بھی جاسکتا ہے  ’’ثابت کوئی آنسو سرِ مژگاں نہیں دیکھا‘‘
لیکن جو ترکیب میں نے لکھی ہے اس میں آپ کے بقول ثابت کو آنسو سے تعلق ہے اور وہ یہ ہے کہ ایسا آنسو جسے آنسو کہا جا سکے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آخر میں ایک بار پھر شکر گزار ہوں اور درخواست کرتا ہوں کہ اس پر اپنے جواب سے نوازیں تا کہ وضاحت ہو سکے۔

والسلام
ح۔ خالد
 


جناب خالد صاحب . السلام علیکم . امید ہے آپ خیریت سے ہوں گے .
آپکے استفسارات کے جواب مختصرا عرض کرتا ھوں ۔
 
غلطاں ، پیچاں اور غلطاں و پیچاں تین الگ الگ الفاظ ہیں . تینوں کے معانی مختلف ہیں . غلطاں اور پیچاں جب بطور لفظ واحد استعمال ہوتے ہیں تو ان سے  پہلے کسی کیفیت کا بیان کرنا ضروری ہے . مثال کی لئے اپنے ہی پیش کردہ مصرعوں کو دیکھ لیجئے .   یعنی کوئی شخص کسی خیال یا الجھن یا فکر وغیرہ میں غلطاں ہوتا ہے . یا ایسی ہی  کسی کیفیت میں پیچاں ہوتا ہے . لیکن کسی کیفیت کا بیان کتے بغیر یوں  نہیں کہا جاسکتا کو فلاں شخص پیچاں ہے یا فلاں شخص غلطاں ہے . پیچاں اور غلطاں اپنے استعمال کی لیے کسی بیان کے  محتاج ہیں . اس کی مثال ایسے ہے جیسے کہا جائے کہ اس  شخص کو میں نے شکار دیکھا  یا  مبتلا دیکھا  یا  کشتہ دیکھا .  جب تک یہ نہ بتایا جائے کہ کس چیز کا شکار  یا کس چیز میں مبتلا یا کس چیز کا کشتہ دیکھا  یہ سب جملے زبان کے  لحاظ سے  درست نہیں ہونگے . اس کے برعکس غلطاں پیچاں کی ترکیب یا اصطلاح ایک مکمل معنی رکھتی ہے . اس کا مطلب ہے حیران پریشان ، ایک اضطراب کی سی کیفیت . آپ کے  مطلع میں بغیر کسی سیاق و سباق کے ان دو الفاظ کا علیحدہ علیحدہ استعمال ٹھیک نہیں ہے . اردو نثر اور نظم میں ان کے اس طرح استعمال کی کوئی مثال میری نظر  سے نہیں گزری . اسی لئے کہا کہ یہ عجیب و غریب لگ رہا ہے . اگر آپ یا کسی اور دوست کے علم میں اس طرح استعمال  کی کوئی مثال ہو تو براہ کرم میری اصلاح فرما دیں ۔
 
آداب جنوں والے  شعر میں ! کی علامت لگانے سے شعر کا پورا منظر ہی تبدیل ہوگیا . اب اس میں زبان اور بیان کی غلطی  نہیں رہی . اس واقعہ سے تحریر میں اعراب اور رموز اوقاف کے استعمال کی اہمیت واضح ہوتی ہے . اعراب اور رموز اوقاف کا استعمال خصوصا اس وقت بہت ضروری ہوجاتا ہے جب ان کے عدم استعمال سی تحریر کے معنوں میں خلل پڑنے کا احتمال ہو . یعنی " اٹھو ، مت بیٹھو " اور " اٹھو مت ، بیٹھو " والا معاملہ ہے . اب  پہلے مصرع میں ! لگانے سی زبان تو درست ہوگئی لیکن شعر بہت مبہم ہوگیا . یہ نہیں معلوم ہوتا کہ کس کو پاس تھا اور کس کے گریبان کی بات ہو رہی ہے . خیر . یہ ایک الگ بات ہے ، میں عام طور پر شعر کے نفس مضمون پر کم ہی بات کرتا ہوں اس لیے کہ شعری خیال اور انداز ہر ایک کا اپنا اپنا ہوتا ہے . اس کے بارے میں اختلاف رائے ہو سکتا ہے . اس لیے میں زیادہ تر زبان و بیان اور عروض پر تبصرہ کرتا ہوں کہ پہلے ان کی درستی ضروری ہے اور اس میں اختلاف کا امکان بھی بہت کم ہے . زبان اور بیان کے لگے بندھے اصول ہیں اور ان کا ثبوت فراہم کرنا آسان ہے .
 
پھر درد کا درماں  والے مصرع کے بارے میں میری بات پر غور کیجئے اور اسے سمجھئے . آپکے شعر میں " پھر درد کا درماں نہیں دیکھا" کا محل نہیں ہے . آپ خود  پورے شعر کی نثر بنا کر دیکھ لیجئے . پھر کا لفظ یہاں نہیں بلکہ کہتے ہو کے ساتھہ آئے گا . یہ تو بنیادی بات ہے  .
 
"تم ہی تو ہو باعث مرے سب شعر و سخن کے"   والے مصرع کی جو توضیح آپ نے کی ہے وہ مصرع کے بیانیه سے ظاہرنہیں ہوتی . لیکن  اگر اسے مان  لیا جائے تو ایسی صورت میں لفظ تم کے بعد " ہی " کا استمعال ٹھیک نہیں ہوگا . اور شعر و سخن سے پہلے "سب" کا استمعال بھی ٹھیک نہیں ہوگا . صرف اتنا کہنا کافی ہوگا کہ تم تو ہو باعث مرے شعر و سخن کے . ویسے آپکی اس توضیح کو اگر مان لیا جائے تو سوال یہ ہے کہ پھر آپکے شعر کا مطلب کیا ہوا ؟ اس توضیح کے بعد تو شعر بے معنی ہوگیا . پہلی صورت میں تو پھر بھی اس شعر کے کچھ معنی بنتے ہیں .
 
مقطع میں تخلص کا استمعال آپ جیسے چاہیں کریں کوئی مضائقہ نہیں . میں نے صرف تعقید معنوی کی نشاندہی کی ہے . جب میں اس مصرع  میں  ثابت کو آنسوؤں سے متعلق پڑھ اور سمجھ سکتا ہوں تو کئی اور قاری بھی ایسا کر سکتے ہیں . اس لیے اچھے شعرا ایسی تعقید اور ایسی لفظی صورتحال سے بچتے ہیں .  ثابت مرچ تو ہو سکتی ہے لیکن ثابت آنسو میری دانست  میں بڑی بھونڈی سی بات ہے . خیر .  ہر ایک کا اپنا اپنا شعری ذوق ہوتا ہے . ویسے مقطع میں تخلص لانا غزل کا لازمی حصہ بھی نہیں . اگر ایسا ہی ضروری ہے تو  تخلص کو  پہلے مصرع میں باندھنے کی کوشش کرلیں .
 
خالد صاحب . امید ہے آپکے اشکالات دور ہوگئے ہونگے . ان شااللہ آپ سے پھر گفتگو رہے گی ۔ والسلام

مخلص

خاک زنبیلی

غیرحاضر H. Khalid

  • Adab Aashnaa
  • *
  • تحریریں: 112
  • جنس: مرد
جواب: طرحی مشاعرہ ۷۲ کے لئے میرے چند اشعار
« Reply #7 بروز: مارچ 12, 2015, 01:50:44 صبح »
نہ صبر کا پیکر ہے ، نہ اخلاقِ نبوت
مدت سے مسلماں کو مسلماں نہیں دیکھا

بہت فکر انگیز شعر ہے جناب خالد صاحب ، تھوڑی سی توجہ چاہوں گا لفظ (نہ) کو آپ نے دوحرفی باندھا ہے ماہرینِ علم عروض اسے یکحرفی باندھنے کو درست اور دوحرفی باندھنے کو غلط قرار دیتے ہیں

اس تحریر کا وزن ہے

مفعولُ؛ مفاعیلُ؛مفاعیلُ؛فعولن

آپ کے شعر کے پہلے مصرعے کی تقطیع کچھ اس طرح ہوگی

نہ صبر کا پیکر ہے ، نہ اخلاقِ نبوت

ناصب ر ۔۔۔ کَ پے کر ہِ ۔۔۔ نَ اخ لا قِ ۔۔۔ نَ بو وت

شاید اساتذہ اس طرح سے (نہ) کو (نا) باندھنا معیوب گردانتے ہیں

بہر حال صاحب آپ کی تحریر میں کئی اشعار بہت خوبصورت ہیں ، مصرھ طرح کو بہت عمدہ شعر میں ڈھالا ہے
میری جانب سے ڈھیروں داد اور سالم پیشِ خدمت ہے

اللہ آپ کو سدا سلامت رکھے دونوں جہانوں کی عزّتیں بخشے
دعاگو


جناب اسماعیل اعجاز صاحب
السلام علیکم
آپ کی تحریر پڑھی لیکن جواب میں کافی تاخیر ہو گئی، جس کے لئے معذرت خواہ ہوں۔
آپ کی توجہ اور پسند کا شکریہ۔
آپ نے جس نقطہ کی طرف اشارہ کیا ہے وہ بالکل صحیح ہے اب یہ بتائیے کہ اس میں ’’نہ‘‘ کو ’’نا‘‘ لکھا جا سکتا ہے یا نہیں۔
اگر ایسا نہ ہو سکے تو کچھ اور سوچنا پڑے گا جس سے یہ اعتراض ختم ہو سکے۔
والسالام
ح۔ خالد 

غیرحاضر H. Khalid

  • Adab Aashnaa
  • *
  • تحریریں: 112
  • جنس: مرد
جواب: طرحی مشاعرہ ۷۲ کے لئے میرے چند اشعار
« Reply #8 بروز: مارچ 12, 2015, 04:07:24 صبح »

جناب خالد صاحب . السلام علیکم . امید ہے آپ خیریت سے ہوں گے .
آپکے استفسارات کے جواب مختصرا عرض کرتا ھوں ۔
 
غلطاں ، پیچاں اور غلطاں و پیچاں تین الگ الگ الفاظ ہیں . تینوں کے معانی مختلف ہیں . غلطاں اور پیچاں جب بطور لفظ واحد استعمال ہوتے ہیں تو ان سے  پہلے کسی کیفیت کا بیان کرنا ضروری ہے . مثال کی لئے اپنے ہی پیش کردہ مصرعوں کو دیکھ لیجئے .   یعنی کوئی شخص کسی خیال یا الجھن یا فکر وغیرہ میں غلطاں ہوتا ہے . یا ایسی ہی  کسی کیفیت میں پیچاں ہوتا ہے . لیکن کسی کیفیت کا بیان کتے بغیر یوں  نہیں کہا جاسکتا کو فلاں شخص پیچاں ہے یا فلاں شخص غلطاں ہے . پیچاں اور غلطاں اپنے استعمال کی لیے کسی بیان کے  محتاج ہیں . اس کی مثال ایسے ہے جیسے کہا جائے کہ اس  شخص کو میں نے شکار دیکھا  یا  مبتلا دیکھا  یا  کشتہ دیکھا .  جب تک یہ نہ بتایا جائے کہ کس چیز کا شکار  یا کس چیز میں مبتلا یا کس چیز کا کشتہ دیکھا  یہ سب جملے زبان کے  لحاظ سے  درست نہیں ہونگے . اس کے برعکس غلطاں پیچاں کی ترکیب یا اصطلاح ایک مکمل معنی رکھتی ہے . اس کا مطلب ہے حیران پریشان ، ایک اضطراب کی سی کیفیت . آپ کے  مطلع میں بغیر کسی سیاق و سباق کے ان دو الفاظ کا علیحدہ علیحدہ استعمال ٹھیک نہیں ہے . اردو نثر اور نظم میں ان کے اس طرح استعمال کی کوئی مثال میری نظر  سے نہیں گزری . اسی لئے کہا کہ یہ عجیب و غریب لگ رہا ہے . اگر آپ یا کسی اور دوست کے علم میں اس طرح استعمال  کی کوئی مثال ہو تو براہ کرم میری اصلاح فرما دیں ۔
 
آداب جنوں والے  شعر میں ! کی علامت لگانے سے شعر کا پورا منظر ہی تبدیل ہوگیا . اب اس میں زبان اور بیان کی غلطی  نہیں رہی . اس واقعہ سے تحریر میں اعراب اور رموز اوقاف کے استعمال کی اہمیت واضح ہوتی ہے . اعراب اور رموز اوقاف کا استعمال خصوصا اس وقت بہت ضروری ہوجاتا ہے جب ان کے عدم استعمال سی تحریر کے معنوں میں خلل پڑنے کا احتمال ہو . یعنی " اٹھو ، مت بیٹھو " اور " اٹھو مت ، بیٹھو " والا معاملہ ہے . اب  پہلے مصرع میں ! لگانے سی زبان تو درست ہوگئی لیکن شعر بہت مبہم ہوگیا . یہ نہیں معلوم ہوتا کہ کس کو پاس تھا اور کس کے گریبان کی بات ہو رہی ہے . خیر . یہ ایک الگ بات ہے ، میں عام طور پر شعر کے نفس مضمون پر کم ہی بات کرتا ہوں اس لیے کہ شعری خیال اور انداز ہر ایک کا اپنا اپنا ہوتا ہے . اس کے بارے میں اختلاف رائے ہو سکتا ہے . اس لیے میں زیادہ تر زبان و بیان اور عروض پر تبصرہ کرتا ہوں کہ پہلے ان کی درستی ضروری ہے اور اس میں اختلاف کا امکان بھی بہت کم ہے . زبان اور بیان کے لگے بندھے اصول ہیں اور ان کا ثبوت فراہم کرنا آسان ہے .
 
پھر درد کا درماں  والے مصرع کے بارے میں میری بات پر غور کیجئے اور اسے سمجھئے . آپکے شعر میں " پھر درد کا درماں نہیں دیکھا" کا محل نہیں ہے . آپ خود  پورے شعر کی نثر بنا کر دیکھ لیجئے . پھر کا لفظ یہاں نہیں بلکہ کہتے ہو کے ساتھہ آئے گا . یہ تو بنیادی بات ہے  .
 
"تم ہی تو ہو باعث مرے سب شعر و سخن کے"   والے مصرع کی جو توضیح آپ نے کی ہے وہ مصرع کے بیانیه سے ظاہرنہیں ہوتی . لیکن  اگر اسے مان  لیا جائے تو ایسی صورت میں لفظ تم کے بعد " ہی " کا استمعال ٹھیک نہیں ہوگا . اور شعر و سخن سے پہلے "سب" کا استمعال بھی ٹھیک نہیں ہوگا . صرف اتنا کہنا کافی ہوگا کہ تم تو ہو باعث مرے شعر و سخن کے . ویسے آپکی اس توضیح کو اگر مان لیا جائے تو سوال یہ ہے کہ پھر آپکے شعر کا مطلب کیا ہوا ؟ اس توضیح کے بعد تو شعر بے معنی ہوگیا . پہلی صورت میں تو پھر بھی اس شعر کے کچھ معنی بنتے ہیں .
 
مقطع میں تخلص کا استمعال آپ جیسے چاہیں کریں کوئی مضائقہ نہیں . میں نے صرف تعقید معنوی کی نشاندہی کی ہے . جب میں اس مصرع  میں  ثابت کو آنسوؤں سے متعلق پڑھ اور سمجھ سکتا ہوں تو کئی اور قاری بھی ایسا کر سکتے ہیں . اس لیے اچھے شعرا ایسی تعقید اور ایسی لفظی صورتحال سے بچتے ہیں .  ثابت مرچ تو ہو سکتی ہے لیکن ثابت آنسو میری دانست  میں بڑی بھونڈی سی بات ہے . خیر .  ہر ایک کا اپنا اپنا شعری ذوق ہوتا ہے . ویسے مقطع میں تخلص لانا غزل کا لازمی حصہ بھی نہیں . اگر ایسا ہی ضروری ہے تو  تخلص کو  پہلے مصرع میں باندھنے کی کوشش کرلیں .
 
خالد صاحب . امید ہے آپکے اشکالات دور ہوگئے ہونگے . ان شااللہ آپ سے پھر گفتگو رہے گی ۔ والسلام

مخلص

خاک زنبیلی


جناب خاک زنبیلی صاحب
السلام علیکم

ہوئی تاخیر تو کچھ باعثِ تاخیر بھی تھا

اگر آپ کی یہ بات مان لی جائے کہ پیچاں اور غلطان جب الگ استعمال ہونگے تو حال پہلے بیان کرنا ہوگا تو جو شعر سرور صاحب نے لکھا ہے اس میں کوئی حال پہلے بیان نہیں ہوا۔
یہ دونوں الفاظ میں نے نور اللغات اور فرہنگِ آصفیہ میں دیکھے تو معلوم ہوا کہ پیچاں ’’اپیچیدگی اورالجھن‘‘ کے لئے استعمال ہوا ہے اور غلطاں ’’غلطیدن اصل غلتیدن‘‘ سے ہے جس کو فارسی فیروز اللغات میں ’’ایک پہلو سے دوسرے پہلو کی طرف حرکت کرنے سے منسوب کیا گیا ہے‘‘۔ جبکہ پیچان کے ساتھ مل کے اس کے معنی ’’حیران پریشان‘‘ اور ’’متفکر‘‘ کے ہو جاتے ہیں۔ اب میرے شعر کی نثر دیکھئے ’’اب (اس دور میں) اہلِ جنوں (اہلِ عشق) کو (عشق ) میں نہ پیچاں (کسی الجھن میں ) نہ غلطاں (پہلو بدلتے ہوئے) اور نہ ہی پریشاں (فکر مند) دیکھا کہ آج کل عشق و محبت سطحی ہے جو صرف چہرے پر سجائی جاسکے۔

اس کے لئے میں مزید تحقیق کر رہا ہوں۔ امید ہے کہ کوئی بہتر صورت سامنے آئے گی۔

دوسرے اہلِ جنوں والے شعر میں بہتری آگئ ہے۔ اب جو سوال ہے کہ کس کو پاس تھا تو وہ دوسرے مصرع میں ’’ہوں‘‘ سے ظاہر ہے کہ میں ہوں۔

اس میں آپ کی بات صحیح ہے اور شعر کو یوں ملاحظہ فرمائیں۔

زخموں کو بچا رکھتے ہو خود چارہ گروں سے
پھر کہتے ہو کیا! درد کا درماں نہیں دیکھا؟

باعث والے شعر میں بھی آپ صحیح ہیں۔ اس شعر کو یوں دیکھئے امید ہے کہ اب ٹھیک ہو گیا ہے۔

تم ہی تو تھے باعث مرے سب شعر و سخن کا
تم ہی نے کبھی مجھ کو غزلخواں نہیں دیکھا!

کیا مقطع میں تعقید سے اس طرح بچا جا سکتا ہے

مجھ کو کبھی رویا ہے وہ سچ کہتا ہو شاید!
آنسو کوئی، ثابتؔ ، سرِ مژگاں نہیں دیکھا

 
ایک گزارش میں ضرور کرنا چاہوں گا کہ یہ الفاظ ہی تو ہیں جو ہمارے اظہار کا ذریعہ ہیں ان کو محدود کرنے کے بجائے ان میں وسعت پیدا کرنی چاہئے تاکہ ہم ایک دوسرے جذبات کو بعینہ سمجھ سکیں ورنہ ثابت مرچ تک ہی رہ جائیں گے۔  :-#
والسلام
ح۔ خالد

 

غیرحاضر خاک زنبیلی

  • Adab Shinaas
  • **
  • تحریریں: 322
  • جنس: مرد
  • ہم پرورشِ لوح و قلم کرتے رہیں گے
جواب: طرحی مشاعرہ ۷۲ کے لئے میرے چند اشعار
« Reply #9 بروز: مارچ 12, 2015, 09:31:17 صبح »



جناب خاک زنبیلی صاحب
السلام علیکم

ہوئی تاخیر تو کچھ باعثِ تاخیر بھی تھا

اگر آپ کی یہ بات مان لی جائے کہ پیچاں اور غلطان جب الگ استعمال ہونگے تو حال پہلے بیان کرنا ہوگا تو جو شعر سرور صاحب نے لکھا ہے اس میں کوئی حال پہلے بیان نہیں ہوا۔
یہ دونوں الفاظ میں نے نور اللغات اور فرہنگِ آصفیہ میں دیکھے تو معلوم ہوا کہ پیچاں ’’اپیچیدگی اورالجھن‘‘ کے لئے استعمال ہوا ہے اور غلطاں ’’غلطیدن اصل غلتیدن‘‘ سے ہے جس کو فارسی فیروز اللغات میں ’’ایک پہلو سے دوسرے پہلو کی طرف حرکت کرنے سے منسوب کیا گیا ہے‘‘۔ جبکہ پیچان کے ساتھ مل کے اس کے معنی ’’حیران پریشان‘‘ اور ’’متفکر‘‘ کے ہو جاتے ہیں۔ اب میرے شعر کی نثر دیکھئے ’’اب (اس دور میں) اہلِ جنوں (اہلِ عشق) کو (عشق ) میں نہ پیچاں (کسی الجھن میں ) نہ غلطاں (پہلو بدلتے ہوئے) اور نہ ہی پریشاں (فکر مند) دیکھا کہ آج کل عشق و محبت سطحی ہے جو صرف چہرے پر سجائی جاسکے۔

اس کے لئے میں مزید تحقیق کر رہا ہوں۔ امید ہے کہ کوئی بہتر صورت سامنے آئے گی۔

دوسرے اہلِ جنوں والے شعر میں بہتری آگئ ہے۔ اب جو سوال ہے کہ کس کو پاس تھا تو وہ دوسرے مصرع میں ’’ہوں‘‘ سے ظاہر ہے کہ میں ہوں۔

اس میں آپ کی بات صحیح ہے اور شعر کو یوں ملاحظہ فرمائیں۔

زخموں کو بچا رکھتے ہو خود چارہ گروں سے
پھر کہتے ہو کیا! درد کا درماں نہیں دیکھا؟

باعث والے شعر میں بھی آپ صحیح ہیں۔ اس شعر کو یوں دیکھئے امید ہے کہ اب ٹھیک ہو گیا ہے۔

تم ہی تو تھے باعث مرے سب شعر و سخن کا
تم ہی نے کبھی مجھ کو غزلخواں نہیں دیکھا!

کیا مقطع میں تعقید سے اس طرح بچا جا سکتا ہے

مجھ کو کبھی رویا ہے وہ سچ کہتا ہو شاید!
آنسو کوئی، ثابتؔ ، سرِ مژگاں نہیں دیکھا

 
ایک گزارش میں ضرور کرنا چاہوں گا کہ یہ الفاظ ہی تو ہیں جو ہمارے اظہار کا ذریعہ ہیں ان کو محدود کرنے کے بجائے ان میں وسعت پیدا کرنی چاہئے تاکہ ہم ایک دوسرے جذبات کو بعینہ سمجھ سکیں ورنہ ثابت مرچ تک ہی رہ جائیں گے۔  :-#
والسلام
ح۔ خالد

 

جناب خالد صاحب ۔ السلام علیکم ۔ امید ہے خیریت سے ہونگے ۔
خوشی کی بات یہ ہے کہ اس ساری گفتگو کے نتیجے میں آپ نے کچھ کتابیں  دیکھیں  اور  اپنی غزل  کا تنقیدی جائزہ لیا  اور کچھ ردو بدل کیا ۔   میں سمجھتا ہوں کہ میرے تبصرے کا مقصد پورا ہوگیا ۔  ان ادبی مباحث کا مقصد ہی یہ ہوتا ہے کہ کتابیں کھولی جائیں اور دلائل ڈھونڈے جائیں  اور    ادب  پارے کو بہتر بنایا جائے ۔   باہمی تعلیم  اسی طرح ہوتی  ہے ۔ جہاں تک بات ہے پیچاں اور غلطاں کے معانی کی وہ مجھے معلوم ہیں ۔ بات صرف ان کے استعمال کی ہورہی ہے اور مثال میں میں نے   شکار اور مبتلا  کے الفاظ  کا حوالہ دیا تھا ۔ معانی تو شکار اور مبتلا کے بھی ہیں  لیکن مذکورہ مثال میں  ان کا استعمال بھی  کسی سیاق و سباق کے بغیر درست نہیں ہوگا ۔ میرے پچھلے مراسلے کو پھر  توجہ سے دیکھ لیجئے ۔ پھر یہی کہوں گا کہ پیچاں اور غلطاں کے الفاظ کا  اس طرح مجرد استعمال میری نظر سے نہیں گزرا ۔  اگر آپ کہیں سے دکھادیں گے تو بلا تامل مان لوں گا  اور ممنون رہوں گا  ورنہ میں اپنے موقف پر قائم ہوں ۔     
آپ نے آخر میں لکھا کہ الفاظ کو محدود کرنے کے بجائے ان میں وسعت پیدا کرنی چاہیئے ۔  بجا  فرمایا ۔  مجھے کوئی اعتراض نہیں اس پر ۔ لیکن بھائی اردو زبان میں نے یا کسی شخص نے گھر بیٹھ کر تو نہیں بنائی  ۔ میں کون ہوتا  ہوں کسی لفظ کے استعمال پر قدغن لگانے والا۔ زبان تو جیسے ہے ویسی ہی ہے ۔ اسی طرح استعمال کرنی پڑے گی ۔  اگر کوئی شخص یہ لکھ دے کہ    خاک زنبیلی صاحب  زبان کی حالت دیکھ کر سالم  آنسوؤں سے رو رہے تھے تو   ان  آنسوؤں کو کون ثابت کرسکے گا ۔ لیکن اگر یہ کہا جائے کہ وہ آٹھ آٹھ آنسو رو رہے تھے تو ٹھیک ہوگا ۔ بات یہ ہے کہ     الفاظ   کسی  منطقی یا عقلی قاعدے کے تحت استعمال نہیں ہوتے ۔   الفاظ کا استعمال صرف اور صرف  رواج اور نظیر   کو مانتا  ہے ۔ بیشک الفاظ کے استعمال کا رواج بدل سکتا ہے اور دھیرے دھیرے بدلتا بھی رہتا ہے ۔ لیکن یہ ایک الگ بحث ہے ۔   اگر الفاظ کا استعمال عقلی قاعدے کے تحت حسبِ خواہش بدلا جاسکتا تو پھر    سرے سے کوئی مسئلہ ہی نہیں تھا  ۔ جو چاہے لکھئے  سب ٹھیک ہے ۔ اگر  کسی شعر پر شاعر کو  بہت لوگوں سے بار بار  داد مل رہی ہے تو  وہ کہہ سکتا ہے کہ مجھے دادیں مل رہی ہیں ۔   آفرینیں  ہیں ایسی زبان پر ! !   :-#  بول چال اور عام تحریر میں تو الفاظ کا الٹا سیدھا استعمال  ہر جگہ ہوتا  ہے اور چل جاتا ہے لیکن  ادبی زبان اور  خصوصًا شاعری کی زبان  کو تو کچھ اصولوں کی پاسداری کرنی ہی پڑے گی ۔ ورنہ تو رفتہ رفتہ زبان اور سے اور ہوتی چلی جائے گی ۔ لوگ جس طرح چاہیں گے کسی بھی لفظ کو کہیں بھی استعمال کرلیں گے   اور یہ بات کسی حد تک  ہم سب دیکھ ہی رہے ہیں ۔ آپ نے تو اپنے مطلع میں پیچاں اور غلطاں جیسے الفاظ استعمال  کرکے بہت اچھا کیا  ۔ لوگ اب ایسے الفاظ کہاں استعمال کرتے ہیں ۔ یہ تو ایک طرح سے  آپ نے  گمشدہ  الفاظ کو بازیاب کرایا ہے ۔ اس پر آپ تحسین  کے مستحق ہیں  ۔ آپ  میری بات کو آپ ایک دیوانے کی بڑ سمجھ کر معاف کردیں ۔ برا ہو اس آنکھ کا  جو خواہ مخواہ   باریکیاں ڈھونڈ نتی ہے ۔        آجکل   اچھی بھلی  تحریروں میں  کہ اور کے  ، واحد جمع   اور مونث مذکر جیسی بنیادی  غلطیاں نظر آتی ہیں ۔ لوگ تو ان پر بھی نہیں ٹوکتے ۔  کل کو یہی باتیں ہوتے ہوتے    بتدریج غلط العام  کی چھتری تلے امان پاجائیں گی ۔
جہاں تک سرور صاحب کے پیش کردہ  شعر کا  تعلق ہے  اس میں پیچاں موجِ   ہواکے لیئے  بطور صفت استعمال ہوا  ہے ۔   یعنی موجِ ہوا  اتنی پرپیچ  اور بل کھائی ہوئی ہے کہ میر کو زنجیر یاد آرہی ہے ۔   موجِ ہو اپیچاں    ترکیبِ اضافی ہے ۔ اصل ترکیب تو موجِ  پیچاں ہے    جس میں پیچاں صفت استعمال ہوئی ہے موج کیلئے ۔  لیکن  موج کے بعد ایک  مضاف الیہ  ہوا لگادیا گیا ہے ۔ یعنی ہوا کی موج ۔  مثلًا     شاخ ِشجر پیچاں  ،  زلفِ سیاہ  پیچاں   وغیرہ وغیرہ  ۔

مخلص
خاک زنبیلی
« آخری ترمیم: مارچ 12, 2015, 11:24:12 صبح منجانب خاک زنبیلی »

غیرحاضر H. Khalid

  • Adab Aashnaa
  • *
  • تحریریں: 112
  • جنس: مرد
جواب: طرحی مشاعرہ ۷۲ کے لئے میرے چند اشعار
« Reply #10 بروز: مارچ 13, 2015, 01:44:13 صبح »
جناب خاک زنبیلی صاحب
السلام علیکم
جناب میں ایک بار پھر آپ کا شکر گزار ہوں کہ آپ نے اپنی قیمتی رائے سے نوازا۔ میں نے پہلے خط میں آپ سے عرض کیا تھا کہ میں یہاں سیکھنے ہی آیا ہوں۔ اگر آپ باریک بینی سے نہیں دیکھیں گے تو زبان حقیقتاً غلط العام کی چھتری کے نیچے چلی جائے گی۔ میں اس سلسلے میں مزید تحقیق ضرور کروں گا۔
اس سب سے آپ کی بات غلط ثابت کرنا قطعاًمقصود نہیں بلکہ اپنے لئے کچھ گنجائش ڈھونڈنے کی کوشش ہے۔

ایک بات ضرور کہوں گا کہ ہم لوگ اہلِ علم کی صحبت سے دور ہیں اور آپ صحبت یافتہ ہیں۔ مجھے اس بات کا بہت افسوس ہے کہ آج کل کوئی ایسی جگہ نہیں جہاں ہم اپنی فکری پیاس بجھا سکیں۔ نہ وہ ماحول ہے نہ کسی کے پاس فرصت ہے۔

جناب سے درخواست ہے ہماری رہنمائی ضرور کرتے رہئے۔
والسلام
دعاؤں کا طالب
ح۔ خالد

 

Copyright © اُردو انجمن